اسلام آباد (این این آئی)سکیورٹیز اینڈ ایکس چینج کمیشن آف پاکستان نے ملازمین کے شراکتی فنڈ کی لسٹڈ سکیورٹیز میں سرمایہ کاری سے متعلق، ایمپلائز کنٹریبیوٹری فنڈز (انوسٹمنٹ ان لسٹڈ سکیورٹیز) ریگولیشنز 2018 جاری کر دئے ہیں۔ ان ریگولیشنز کا مقصد ملازمین کی محنت کی کمائی اور بچتوں کی سرمایہ کاری پر بہترین منافع کے مواقع فراہم کرنا اور انہیں محفوظ بنانا ہے ۔واضح رہے کہ اس پہلے ملازمین کے شراکتی فنڈ کو ایس ای سی پی کے جاری کردہ ایمپلائز پراویڈنٹ فنڈ رولز کے تحت ریگولیٹ کیا جاتا تھا، تاہم کمپنیز ایکٹ 2017 میں شراکتی فنڈز میں سرمایہ کار کا دائرہ کار بڑھا دیا گیا ہے ۔ لہٰذا نئے ریگولیشنز میں ملازمین کی جانب سے پراویڈنٹ فنڈ کے علاوہ دیگر کی جانے والی شراکت داری کو بھی اس میں شامل کر تے ہوئے ملازمین کے شرکتی فنڈز کی حصص مارکیٹ میں سرمایہ کاری کے ریگولیشنز جاری کئے گئے ہیں۔ ان ریگولیشنز پر سٹیک ہولڈروں سے مشاورت کے لئے دو سیمینار بھی منعقد کئے گئے اور شراکت داروں اور رائے عامہ کے لئے ریگولیشنز کا مسودہ دو مرتبہ جاری کیا گیا۔ حصص اور قرض کی مارکیٹوں میں تسلسل سے نئے رجحانات اور غیر بینکی مالیاتی کمپنیوں کی جانب سے بہتر منافع کی خاطر نئی مصنوعات کی ترویج کی بدولت شراکتی فنڈز کے لئے مارکیٹ میں زیادہ بہتر امکانات پیدا ہوئے ہیں۔