کراچی،اسلام آباد ( سٹاف رپورٹر ،خبر نگار خصوصی )ترجمان سندھ حکومت مرتضیٰ وہاب نے کہا ہے کہ ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل جیسا ادارہ عوام کو کورونا کے خلاف خریدی گئی ویکسین کے معاملے پر گمراہ نہ کرے ۔ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کی جانب سے محکمہ صحت سندھ پر کورونا ویکسین کی خریداری میں مبینہ گھپلوں کے الزام پر رد عمل دیتے ہوئے ترجمان سندھ حکومت نے کہا کہ ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کو خط لکھنے سے قبل محکمہ صحت سندھ سے رابطہ کرنا چاہئے تھا،محکمہ صحت سندھ نے ویکسین کی بکنگ اور ملک میں بروقت موجودگی کیلئے کمپنی کو خط لکھا تھا،ویکسین کی خریداری کے لیے اب تک کسی بھی قسم کا کوئی آرڈر نہیں دیا گیا ، ٹرانسپیرنسی کی جانب سے بلا وجہ 30 ارب روپے کا نقصان پہنچنے کا جواز پیش کرنا غیر سنجیدہ عمل ہے ،محکمہ صحت سندھ ویکسین خریداری کیلئے ڈریپ کی مقرر کی گئی قیمتوں کو تسلیم نہیں کرتا ،محکمہ صحت سندھ ہر قسم کی بات چیت اور احتساب کیلئے تیار ہے جبکہ اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے مرتضٰی وہاب نے کہا ہے کہ عوام نے 2017 میں ہونے والی مردم شُماری کو تسلیم نہیں کیا،وفاق نے این ایف سی ایوارڈ کے تحت 75 ارب روپے سندھ حکومت کو ادا نہیں کیے ،سندھ کے تین بڑے ہسپتال جن میں لاکھوں لوگوں کا مفت علاج ہو رہا ہے وفاق ان کو صوبے کے پاس ہی رہنے دے ،سندھ حکومت نے ایک کروڑ ویکسین کا آرڈر دے دیا ہے جو عوام کو مفت لگائی جائے گی ۔