اسلام آباد(اظہر جتوئی،مانیٹر نگ ڈیسک،این این آئی) موبائل صارفین کے لیے عید سے قبل بڑی خوشخبری،سپریم کورٹ کے حکم کی روشنی میں موبائل فون کمپنیوں نے گزشتہ رات بارہ بجے سے موبائل کارڈز پر ٹیکس کی کٹوتی ختم کردی ۔ایف بی آر کے ذرائع کے مطابق 100 روپے کے لوڈ پر 35.62 روپے کی ٹیکس کٹوتی نہیں ہوگی اور پورے 100 روپے ہی ملیں گے ۔قبل ازیں 100 روپے والے کارڈ پر ٹیکس کٹوتی کے بعد صارفین کو 64 روپے 28 پیسے کا بیلنس ملتاتھا۔سپریم کورٹ کے حکم پر کمپنیوں کی جانب سے صارفین کو 15 روز کا ریلیف دیا جائے گا جس کے بعد فیڈرل بورڈ آف ریونیو اور موبائل کمپنیاں مل کر ٹیکسز کا نیا میکنزم تیار کریں گی۔دوسری جانب ذرائع کے مطابق ایف بی آرنے موبائل کارڈ پر ٹیکسز کے مکمل خاتمہ کو ناقابل عمل قرار دیتے ہوئے ٹیکسز میں 50 فیصد کمی کرنے پر غور شروع کر دیا ،اس حوالے سے پلان تیار کرکے سپریم کورٹ میں پیش کیا جائے گا،ایف بی آر کے نئے پلان کے تحت پی ٹی اے کو بتانا ہوگا کہ کتنے کارڈ مارکیٹ میں لائے گئے اور کتنے فروخت ہوئے ۔ موبائل کمپنیاں سو روپے کے کارڈ پر 38 فیصد کٹوتی کر رہی ہیں، ٹیکسز میں 19.5 فیصد ایکسائز ڈیوٹی، 4 فیصد ڈسٹری بیوشن ٹیکس، ساڑھے 12 فیصدود ہولڈنگ ٹیکس اور 10فیصد کمپنی سروس چارجز شامل ہیں۔ذرائع کے مطابق موبائل کمپنیوں کے کارڈ ز سے 124 ارب روپے کا ٹیکس وصول کیا جا رہا ہے اور یہ ٹیکسز ملک کے 50 فیصد سے زائد غریب لوگ جو ٹیکس نیٹ میں نہیں آتے ، ادا کر رہے ہیں۔