BN

اشرف شریف


جناب اچکزئی کی تاریخی فراست کا جواب…(4)


یورپ میں بیٹھے بزرگ پنجابیوں نے غدر موومنٹ بنائی‘ سیالکوٹ کے موہن سنگھ نے آزاد ہندو فوج بنائی‘ پھر سہگل‘ ڈھلوں اور شاہنواز جیسے کردار ہیں‘ بھگت سنگھ سندھو ‘ راجگورو اور سکھدیو‘ جلیانوالہ باغ میں شہید ہونے والے مسلمان‘ سکھ اور ہندو پنجابی‘ قصور کے وہ لوگ جنہوں نے انگریز کے خلاف بغاوت کی اور کوڑے کھائے، میرے ایک بزرگ جان محمد بھی ان میں شامل تھے۔ ادھم سنگھ نے لندن جا کر انگریز جنرل ڈائر کو قتل کیا۔ ایک اور موصوف مطمئن نہ ہوئے اور پتہ پھینکا کہ پنجاب کا کوئی رہنما جس نے تحریک پاکستان
پیر 21 دسمبر 2020ء

جناب اچکزئی کی تاریخی فراست کا جواب…(3)

هفته 19 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
پاکستان کی یکجہتی پر حملہ کی ایک نئی صورت یہ طے کی گئی ہے کہ ہندو کے قدیم اتحادیوں کو اپنا تعصب پھیلانے کے لیے پنجاب میں مواقع دیئے جائیں۔ مینار پاکستان کے سبزہ زار میں جو شخص لاہوریوں کو برا بھلا کہہ رہا تھا وہ اور اس جیسے کئی لوگ اس منصوبے کا حصہ ہیں۔ ریکارڈ نکلوا کر دیکھا جا سکتا ہے کہ یہ لوگ جب بھی پنجاب یا سندھ گئے صرف نفرت آمیز گفتگو کی۔ قومی یکجہتی اور ہم آہنگی کے لیے ان کی زبان سے ایک لفظ نہیں ادا ہوا۔ آخر کیوں؟ پی ڈی ایم میاں نوازشریف اور
مزید پڑھیے


جناب اچکزئی کی تاریخی فراست کا جواب…(2)

جمعرات 17 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
مسلمان سردار نجیب الدولہ نے احمد شاہ ابدالی کو تمام صورت حال سے آگاہ کرتے ہوئے ہندوستان پر حملہ کی دعوت دی اور مالی وعسکری مدد کا یقین دلایا۔ مرہٹہ مقبوضہ علاقہ جات احمد شاہ ابدالی کی ملکیت تھے ان کا حاکم احمد شاہ درانی کا بیٹا تیمور شاہ تھا جسے شکست دے کر مرہٹوں نے افغانستان بھگا دیا اب احمد شاہ درانی نے اپنے مقبوضات واپس لینے کے لیے چوتھی مرتبہ برصغیر پر حملہ کیا۔ 14 جنوری 1761ء کو پانی پت کے میدان میں گھمسان کا رن پڑا۔ یہ جنگ طلوع آفتاب سے شروع ہوئی جبکہ ظہر کے وقت
مزید پڑھیے


جناب اچکزئی کی تاریخی فراست کا جواب

بدھ 16 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
اپنی بات کہنے کے لیے جذبات کا سہارا لینے والا اکثر حقائق کے نام پر تعصب اگلنے لگتا ہے۔ یہ بہت آسان ہے کہ محمود خان اچکزئی‘ ان کے خاندان اور بزرگوں کے کارنامے تلاش کر کے ان کا تعصب اور غلط بیانی بے نقاب کردی جائے۔ ایسا کچھ مواد اس کالم میں مل جائے گا کیونکہ پنجاب کا مقدمہ لڑنے کے لیے حقائق کو درست کر کے پیش کرنا ضروری ہے تاہم مقصد ایک بڑے منظر نامے میں رہ کر بات کرنا ہے۔ یہ 22 جون 1840ء کی بات ہے جب کاکڑ قبائل نے افغانستان کے لئے اہم کوئٹہ پر
مزید پڑھیے


ایک ارض موعودہ از باراک اوبامہ

پیر 14 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
’’پیارے صدر اوبامہ: آج مجھے مطلع کیا گیا کہ 30 جون 2009ء سے میں بھی ملک میں بیروزگاروں کی تیزی سے بڑھتی ہوئی صف میں شامل ہو جائوں گا۔ رات کو بچوں کو ان کے غرفہ میں سلاتے ہوئے میں ایک تکلیف سے لڑ رہا تھا۔ مجھے لگتا ہے یہ درد مجھے کھا جائے گا۔ مجھے لگتا ہے کہ ایک والد کے طورپر میرے پاس وہ سہولتیں اور گنجائش نہیں رہی جو میرے والد کے پاس مجھے دینے کے لیے موجود تھی۔ میں اپنے بچوں کی آنکھ میں دیکھتے ہوئے ایمانداری کے ساتھ یہ کہنے کی ہمت نہیں اب رکھتا کہ اگر
مزید پڑھیے



اردوذرائع ابلاغ پر انگریزی الفاظ کا حملہ

بدھ 09 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
ایک دوست سے بات ہورہی تھی‘ اسے عام ناموں ،رویوں اور محاروں کے حوالے سے مقامی الفاظ کی عدم دستیابی کا شکوہ ہے ۔اس کا کہنا تھا کہ دو روز پہلے کے تمام اخبارات نے بھارت کے خلاف اقوام متحدہ میں جمع کرائے گئے دہشت گردی کے ثبوتوں کو ڈوزئیر لکھا ہے۔ ڈوزئیر ایک انگریزی لفظ ہے۔ سوال یہ تھا کہ بڑے بڑے میڈیا ہائوسز میں کیا انحطاط اس سطح پر آ پہنچا ہے کہ انگریزی الفاظ کا موزوں متبادل تلاش نہیں کیا جاسکتا۔ صرف ڈوزیئر پر ہی موقوف نہیں آج ذرائع ابلاغ میں ایسے سینکڑوں الفاظ زبان زدعام ہورہے
مزید پڑھیے


اگر ریاست عام آدمی کی سگی ماں ہوتی

پیر 07 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
میرے آرکیٹیکٹ دوست نے دو تصویریں سامنے رکھیں۔ دونوں مکان ایک جیسے ،ایک ہی سائز کے تھے‘ پہلو بہ پہلو کھڑے۔ ایک کے سامنے درخت کا ہرا بھرا وجود نظر کو لبھاتا تھا۔ دوسرا ہر لحاظ سے مکمل،رنگ و روغن ،تعمیر ،نقشہ ،سب پہلے والے جیسا مگر ویرانی کا تاثر دیتا ہوا۔ دونوں کی قیمت ایک تھی‘ پوچھا کون سا خریدنا پسند کرو گے‘میں نے درخت والے مکان پر انگلی رکھ دی۔ کوئی بھی ہوتا‘ ایسا ہی کرتا۔ اب ایک دوسرا اندازہ لگاتے ہیں۔ دو امیدوار ہیں۔ اسمبلی کا انتخاب لڑ رہے ہیں۔ دونوں کے ساتھ آپ کے مراسم
مزید پڑھیے


پامال خوابوں کی سیاست

هفته 05 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
بے نظیر بھٹو برطانیہ کے اعلیٰ تعلیمی اداروں سے فارغ التحصیل تھیں۔ جس برس ان کے والد ذوالفقار علی بھٹو کا تختہ الٹایا گیا بے نظیر اوکسفورڈ یونیورسٹی سٹوڈنٹس کی نمائندہ منتخب ہو چکی تھیں۔ بے نظیر بھٹو کے ساتھ پڑھنے والے بہت سے طالب علم بعدازاں بین الاقوامی میڈیا‘ سیاست اور سفارت کاری سے منسلک ہوئے۔ یہ جمہوریت ‘ انسانی حقوق‘ آئینی ضروریات اور سوفٹ ریوولیوشن کی تحریکوں کا زمانہ تھا۔ اس عہد کے بالغ افراد کی نظریاتی تعمیر ان نظریات نے کی۔ بے نظیر بھٹو کی اس زمانے کی تقریروں اور بیانات کا جائزہ لیں تو وہ سرمایہ
مزید پڑھیے


قوم کا شکار

بدھ 02 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
آپ سوشل میڈیا پر اپنے عدالتی فیصلوں اور طریقہ انصاف کے باعث مشہور چیف جج فرینک کیپریو کی کہانی پڑھنا چاہیں گے یا اس دبائو کے اثرات کا تجزیہ پسند کریں گے جو ان دنوں داخلی اور خارجی سطح پر حکومت کو برداشت کرنا پڑ رہا ہے۔ بات فرینک کیپریو سے شروع کرلیتے ہیں۔ فرینک کیپریو 70 برس کے لگ بھگ عمر کے ہیں‘ خوش طبع‘ مدبر اور درد مند دل کے مالک۔ ان کی عدالت میں زیادہ تر ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرنے والوں کے چالان پیش ہوتے ہیں۔ ایک 88 سالہ بزرگ حاضر ہوئے۔ الزام تھا کہ
مزید پڑھیے


یہ تھا اصل ڈیگومیرا ڈونا

پیر 30 نومبر 2020ء
اشرف شریف
صرف ایک کھلاڑی ہوتا تو ڈیگو میراڈونا پوپ سے وہ نہ کہتا جو کہنے کے بعد ایک دنیا میراڈونا کی نظریاتی شخصیت کی پرستار ہو گئی،خود پوپ بھی ۔ ڈیگو میرا ڈونا نے زندگی بھر دو ہی محبتیں پالیں‘ فٹ بال اور سوشلزم۔ شہرہ آفاق پیلے نے بے ساختہ کہا کہ ہم دونوں آسمانوں پر ایک دن ایک ساتھ فٹ بال ضرور کھیلیں گے۔1986ء میں ارجنٹائن کو ورلڈ کپ میں فتح دلانے والے میراڈونا کا جنازہ ایوان صدر میں رکھا گیا اور دس لاکھ سے زاید پرستاروں نے آخری آرام گاہ تک پہنچایا۔اس کی خواہش تھی کہ قبر والدین کے
مزید پڑھیے