BN

ڈاکٹر اشفاق احمد ورک


مزید ادبی لطیفے


ایک زمانہ تھا جب الیکٹرانک میڈیا پہ صرف پی ٹی وی کی حکمرانی تھی۔ ٹی وی سکرین پہ جلوہ گر ہونا بہت خاص بات سمجھی جاتی تھی۔ شہرت پسند شاعر ادیب تو اس کے لیے مرے جا رہے ہوتے۔ وہ کسی پروڈیوسر کو رام کرنے کے لیے خدمت و خوشامد کا کوئی موقع ہاتھ سے نہ جانے دیتے۔ ایسے ہی کسی شاعر کو ہمارے ایک دوست نے پی ٹی وی کنٹین سے ایک پروڈیوسر کے کمرے کی طرف اس حالت میں جاتے دیکھا کہ اس کے ایک ہاتھ میں تام چینی والی پیلی پڑتی چائے دانی تھی اور دوسرے
منگل 08 جون 2021ء مزید پڑھیے

خواب دیکھے ہیں تو تعبیر بھی لازم ہوگی!

اتوار 06 جون 2021ء
ڈاکٹر اشفاق احمد ورک
آج سے دو ڈھائی سال ادھر کی بات ہے کہ اس ملک کے قومی ہیرو عمران خان کہ جس کی گفتگو، ارادوں اور اعمال سے ہمیشہ خلوص، حُب الوطنی اور اولالعزمی کی خوشبو آئی، سے متعلق یہ چار مصرعے میرے اوپر وجدان کی صوت اترے تھے: خواب دیکھے ہیں تو تعبیر بھی لازم ہوگی آنکھ میں اشک ہیں تاثیر بھی لازم ہوگی عصرِ بد رنگ سے فرصت تو میسر آ لے قصرِ خوش رنگ کی تعمیر بھی لازم ہوگی مَیں اپنے اس موقف پہ آج بھی اگر دل و جان سے قائم ہوں تو اس کا مطلب یہ نہیں کہ مجھ میں کوئی جیالا نما
مزید پڑھیے


’چٹکیاں‘ سے چُسکیاں تک

منگل 01 جون 2021ء
ڈاکٹر اشفاق احمد ورک
اپنے بے لحاظا لکھے ہوئے طنزومزاح کی بابت تو مجھے کچھ نہیں کہنا چاہیے ، البتہ اپنے بے تحاشا پڑھے ہوئے طنزومزاح سے مجھے بہت ڈر لگتا ہے۔ اس عادتِ بد نے میرے لکھنے کی رفتار کے ساتھ ساتھ میرے دماغ کو بھی خراب کر رکھا ہے۔ کوئی بھی نونہال ، خوش خیال قلم کار تحریری یا زبانی مشاورت کا تقاضا کر بیٹھے تو اسے یوسفی اور ابنِ انشا بننے کے مشورے دینے لگتا ہوں۔ یعنی جو کام خود نہیں کر سکا، اس کی دوسروں سے توقع لگا کے بیٹھ جاتا ہوں۔ اس کے نتائج بھی آج تک خاطرخواہ برآمد
مزید پڑھیے


سوشل میڈیا میرا دوست

اتوار 30 مئی 2021ء
ڈاکٹر اشفاق احمد ورک
اس میں کوئی شک نہیں کہ اس وقت ہماری زندگیوں پہ سب سے زیادہ اثر انداز ہونے والی چیز سوشل میڈیا ہے۔ کسی بد لحاظ دوست، کسی بے تکلف رشتے دار، کسی اتھرے محلے دار، کسی بے دھڑک پڑوسی، کسی فسادی واقف کار، کسی ففے کُٹ ملاقاتی، کسی کھرولے بچے، کسی خواہ مخواہ ہنسانے والے مسخرے، ہر اچھی بری خبر پہ نظر رکھنے والے کسی اللہ واسطے کے مُخبر سے بھی زیادہ… ہمیں اس کی صرف ایک ہی ادا پسند ہے کہ جو باتیں ہم اپنی احتیاط، خوف، بلا وجہ کے معاشرتی جبر یا روایتی عوامی صبر کی بنا پر
مزید پڑھیے


راستہ دیکھتی ہے مسجدِ اقصیٰ تیرا

بدھ 26 مئی 2021ء
ڈاکٹر اشفاق احمد ورک
اب یہ بتانے کا تو کچھ فائدہ نہیں کہ یونیورسٹی زمانے میں ہم دوستوں کا مشترکہ دشمن رٹّا افزوں امتحانی نظام تھا، کوئی ظالم حسینہ تھی یا جدید جوڑوں پر شدید نظر رکھنے والے جماعتی بھائی، لیکن ہمیں یہ اچھی طرح یاد ہے کہ اس زمانے میں ہم لتا منگیشکر کے فلم ’آس پاس‘ کے معروف گیت کو متعدد مقاصد کے حصول کی خاطر کورس کی شکل میں یوں گایا کرتے تھے: ہم کو بھی اُس نے مارا ، تم کو بھی اُس نے مارا ہم سب کو اُس نے مارا ، اِس اُس کو مار ڈالو آج ہم پورے وثوق سے کہہ
مزید پڑھیے



وفا قی محتسب سیکر ٹریٹ، مزاح کی زَد میں

اتوار 23 مئی 2021ء
ڈاکٹر اشفاق احمد ورک
ڈاکٹر انعام الحق جاوید ہمارے بزرگ کم دوست اور پاکستان کے جانے مانے مزاح نگار ہیں لیکن ان کی دفتری و سرکاری ذمہ داریاں اتنی تیزی سے تبدیل ہوتی ہیں کہ بعض اوقات سمجھ نہیں آتی کہ اُن کی کس بات پہ ہنسنا ہے اور کس امر کو سنجیدہ لینا ہے۔ وہ مزاحیہ مشاعروں کی جان تو ہیں ہی لیکن جب انھوں نے نیشنل بک فاؤنڈیشن کا انتظام سنبھالا تو مستند کتابوں کے ڈھیر لگا دیے، حتیٰ کہ مجھ جیسے کاہل سے بھی یوسفی کی پانچوں کتب سے ایک انتخاب کروا لیا ، جسے 2019 میں ’’عالم میں انتخاب‘‘ کے
مزید پڑھیے


جَٹ، مزاح، پولیس

منگل 18 مئی 2021ء
ڈاکٹر اشفاق احمد ورک
مجھے اچھی طرح یاد ہے کہ جب مَیں شیخوپورہ کے ایک چھوٹے سے گاؤں سے پڑھ لکھ کے باؤ بننے کے عزائم کے ساتھ پنجاب یونیورسٹی میں آ داخل ہوا۔ ایک ہفتے بعد گاؤں واپس جا کر جب اپنی دادی جان کو یہ ’روح ترسا‘ قسم کی خبر سنائی کہ ایم اے اُردو کی کلاس میں ہم دس نہتے دیہاتی لڑکوں کے شانہ بشانہ پچاس عدد شہری قسم کی غیر نہتی لڑکیاں بھی پڑھتی ہیں تو میری پیاری دادی جان نے مصلّے پہ بیٹھے بیٹھے کانوں کو باقاعدہ ہاتھ لگا کے فرمایا تھا: ’’توبہ توبہ! قیامت دیاں نشانیاں نیں‘‘ اس
مزید پڑھیے


ہلال شدہ کمیٹی

اتوار 16 مئی 2021ء
ڈاکٹر اشفاق احمد ورک
یہی کوئی پندرہ بیس سال ادھر کی بات ہے، ہم عمرہ کے سلسلے میں سعودیہ میں مقیم تھے، اپنے چونتیس روزہ قیام میں سات دن مدینہ اور ستائیس روز مکہ مکرمہ میں گزارنے کی سعادت نصیب ہوئی۔ روزوں کی تعداد اور عید کے انعقاد کی جو سادہ سی اطلاع وہاں جاتے ہی ایک عرب سے موصول ہوئی، وہی آخر تک برقرار رہی، ذرا مزہ نہ آیا۔ اسی طرح مشرقِ وسطیٰ سے تشریف لائے ایک دوست سے عید کی تعطیلات کی بابت دریافت کیا تو فرمانے لگے کہ حکومت نے آج سے کئی سال قبل ایک ہی بار اعلان کر دیا
مزید پڑھیے


مر جانا منٹو!

منگل 11 مئی 2021ء
ڈاکٹر اشفاق احمد ورک
گزشتہ دنوں پاکستانی فلموں کے باکمال کامیڈین منور ظریف کی برسی تھی… ایسا اچھوتا فن کار کہ جس کا انداز، اسلوب، ٹھاٹ کسی سے چرایا بھی نہیں جا سکا۔ ایسا گُنی کہ کامیڈین ہو کے ہیرو کی کاٹھی پہ بیٹھتا رہا۔ وہ ہماری ثقافت کا غالباً پہلا ہنسوڑ تھا، جس نے اس شعبے کو توقیر کی پگڈنڈی پہ گامزن کیا، وگرنہ جُگت پانی کے اس عمل کو بالعموم بھانڈ میراثیوں ہی کا کام سمجھا جاتا تھا۔ منور ظریف سے متعلق مجھے سب سے زیادہ اس بات نے حیران کیا کہ وہ محض چھتیس برس کی عمر میںدنیا سے چلا گیا۔
مزید پڑھیے


تُو قادر و عادل ہے…

اتوار 09 مئی 2021ء
ڈاکٹر اشفاق احمد ورک
اے قادرِ مطلق! مَیں یہ بات بہ خوبی جانتا ہوں کہ تُو جس پہ مہربان ہو جائے اسے چھپر پھاڑ کے دیتا ہے اور جس سے ناراض ہو جائے اس کا چھپر ہی پھاڑ دیتا ہے۔ اے آسمانوں کے، زمین کے، اور جو کچھ ان کے درمیان ہے، ان سب کے رب! مَیں تیری بندگی کرتا ہوں اور تیری قدرتِ کاملہ پہ قانع بھی ہوں۔ مجھے یہ بھی علم ہے کہ جو لوگ پورے وثوق اور دل کی اتھاہ گہرائیوں سے ہمیشہ صرف اور صرف تجھی سے مانگتے ہیں، تُو نے انھیں کبھی مایوس نہیں کیا۔ یہ بھی تسلیم کہ
مزید پڑھیے








اہم خبریں