BN

سہیل اقبال بھٹی


رانگ وے


خاتون خانہ موٹر وے پر گاڑی ڈرائیو کررہی تھی کہ موبائل پر شوہرنامدار کی کال آئی۔ بیگم !ریڈیو پر خبر چل رہی ہے کہ موٹر وے پر سفر کرنے والے احتیاط سے ڈرائیو کریں کیونکہ ایک گاڑی تیزی سے رانگ وے پر آ رہی ہے۔ بیگم صاحبہ نے جواب دیا کہ ریڈیو غلط خبر چلا رہا ہے‘ یہاں تو سبھی گاڑیاں رانگ وے سے آ رہی ہیں۔قارئین یہ لطیفہ حکومتی ’کارگزاری‘پر ذہن میں آ گیا۔تحریک انصاف نے عوام کی زندگیاں بدلنے کیلئے تبدیلی کے سفر کا آغاز کیا،توابتداسے ہی مسائل اور چیلنجز کی شاہراہ پر رائٹ وے کی بجائے
جمعرات 21 جنوری 2021ء

غیرمحفوظ ڈیٹا اور ڈ س انفولیب

جمعرات 14 جنوری 2021ء
سہیل اقبال بھٹی
مسائل اور چیلنجز کے گرداب میں پھنسے عوام کی مشکلات کم کرنے کیلئے نوٹسزکی بھرمار ہے۔ وزیراعظم عمران خان عوامی وقومی اہمیت کے مسائل پر ہر ہفتے نوٹس لینے پر مجبور دکھائی دیتے ہیں ۔ وفاقی وزارتوں اور متعلقہ اداروں کی جانب سے روایتی سستی اور پرانی روش برقرار رکھنے کے باعث نوٹسز کی راہ ہموار ہورہی ہے۔ بعض ادارے اور افسران وزیراعظم کے نوٹس لینے کے باوجود اپنی روش ترک کرنے پر تیار نہیں ۔ سوال یہ ہے کہ ہرمسئلے کو حل کرنے کیلئے وزیراعظم کانوٹس لینا کیوں ناگزیر ہے۔ وزرائ‘بیوروکریسی اور اداروں کے سربراہان قومی اہمیت کے معاملات
مزید پڑھیے


کیونکہ اُمید ’’قرنطینہ‘‘ نہیں ہو سکتی…!!

جمعه 01 جنوری 2021ء
سعدیہ قریشی
2020ء دکھوں سے بوجھل اور خوف سے چھلکتا ہوا سال تھا۔ جو اب سال گزشتہ میں ڈھل گیا۔ اس برس کی دلخراش یادیں‘ ہمارے ذہنوں سے محو نہیں ہو سکیں گی۔ زندگی تاحال وبا کے شکنجوں میں ہے۔ خوف اور بے یقینی کی فضا میں ابھی کمی نہیں آئی۔ مگر نئے سال کی یہ نئی صبح ہے۔ جنوری 2021ء کا آج پہلا دن ہے تو کیوں نہ دعا کے لئے ہاتھ اٹھائیں اور دلوں میں اُمید کی فصل بوئیں۔ وبا اور بے یقینی کے اس تسلسل کے باوجود‘ مجھے نئے برس کی یہ صبح تروتازہ اور نئی نکور لگ رہی ہے۔ بے
مزید پڑھیے


ہائیرایجوکیشن کا انقلاب؟

جمعرات 31 دسمبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
وزیراعظم خان کواحتساب کا سامنا کرنے والی سیاسی جماعتوں سے بڑاشکو ہ ہے کہ ماضی میں تعلیم اور صحت کو نظرانداز کرکے انفراسٹرکچر پر اربوں ڈالر اڑائے گئے۔ اعلیٰ تعلیم کے بغیر کوئی بھی ملک ترقی کی منازل طے نہیں کرسکتا۔ قوم پرامید تھی تحریک انصاف کے دورمیں اعلیٰ تعلیم کو فروغ ملے گا۔حکومت ایچ ای سی کے بجٹ میں اضافہ اور کارکردگی بہتر بنانے کیلئے سنجیدہ اقدامات کرے گی ۔ عالمی اداروں کی جانب سے بھی کروڑوں ڈالر کی کریڈٹ فیزیبلیٹی بھی ہائیرایجوکیشن کے میدان میں تعطل کے شکار انقلاب کو پایہ تکمیل تک پہنچانے میں معاون ثابت ہوگی۔ حکومت
مزید پڑھیے


رکاوٹ ریس؟

جمعرات 24 دسمبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
وزیراعظم سیکرٹریٹ میں متعلقہ حکام سے ملاقات اور نمل یونیورسٹی میانوالی کا دورہ ہوچکا۔ پورا پلان وزیراعظم کی ٹیم کے حوالے کردیا۔ اب پاکستان کو بیرونی قرضوں سے نجات اور ترقی کی منازل طے کرنے سے کوئی نہیں روک سکتا۔ وفاقی حکومت کا ایک پیسہ اس پلان پر خرچ نہیں ہوگا۔ صرف پرائیویٹ کمپنیوں کی راہ میں حائل رکاوٹوں کو ختم کرکے نوجوانوں کو پلیٹ فارم مہیا کرنا ہوگا۔ پاکستان ٹیکسٹائل وسرجیکل آلات سمیت روایتی شعبوںکے بجائے صرف ایک شعبے کے ذریعے سالانہ50ارب ڈالر زرمبادلہ حاصل کرے گا۔ آئی ٹی ایکسپورٹس پاکستان کو غیرملکی قرضوں اور امداد کے چنگل سے
مزید پڑھیے



پانچواں بحران ‘نیا حکومتی امتحان

جمعه 18 دسمبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
پی ڈی ایم کے جلسوں‘لانگ مارچ اور دھرنے سے نمٹنے میں مصرو ف وفاقی حکومت کیلئے پٹرول بحران پر ایف آئی اے انکوائری کمیشن کی رپورٹ نے نیاچیلنج کھڑا کردیا ہے۔ کورونا وائرس کے باعث دنیابھر میں معاشی سرگرمیاں معطل ہوئیں تو پٹرولیم مصنوعات کی منڈی بھی کریش کرگئی۔پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں ناقابل یقین حد تک گرگئیں ۔ دنیا سمیت پڑوسی ممالک نے اس موقع کو غنیمت جانتے ہوئے پٹرولیم مصنوعات زیرزمین ‘آن شور اور آف شور مقامات پر ذخیرہ کر لیں مگر پاکستان میں وزیراعظم کی ’سپرٹیم ‘ نے مبینہ ملی بھگت اور نااہلی سے آئل مافیا کا سہارا
مزید پڑھیے


ادھورا وعدہ؟

جمعرات 10 دسمبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
وزیراعظم عمران خان قوم سے کئے وعدوں کی پاسداری کیلئے غیرمعمولی فیصلے کرچکے ۔ منتخب عوامی نمائندوںکے بجائے مختلف شعبوں میں تجربہ اور مہارت رکھنے والے19 افراد کوبطور مشیر اورمعاون خصوصی تعینات کیا‘ـتاکہ سرکاری اداروں اور کمپنیوں کی کارکرگی بہتر بناکر ملکی معیشت کی سمت درست کی جاسکے۔مشیران اور معاون خصوصی اپنے اپنے شعبوں میں ممتاز نام اورمقام رکھتے ہیں مگر سرکاری کمپنیوں اور اداروں میں ایڈہاک ازم اور افسران کی من مانیوں کے باعث بدترین توانائی بحران جنم لے رہا ہے۔وزیراعظم اور انکی ٹیم پریشان مگر سرکاری کمپنیوں کے افسران کے کان پر جوں تک رینگتی دکھائی نہیں
مزید پڑھیے


الٹی گنگا

جمعرات 03 دسمبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
خطے کی تیزی سے کروٹ لیتی صورتحال اور عالمی چیلنجز کے باعث پاکستان کو درپیش خطرات نئی شکل اختیار کرتے چلے جارہے ہیں۔ انہی مسائل اور چیلنجز کے باعث سیاسی اور عسکری قیادت غیرمعمولی اجلاس میں سرجوڑ کر بیٹھے دکھائی دیتی ہے۔ملک اور عوام دشمن عناصر جدید ٹیکنالوجی اور ففتھ جنریشن وار کے ذریعے پاکستان کا امن غارت کرنے کے درپے ہیں۔دنیا کا ہر ملک ہر گزرتے منٹ کیساتھ ان چیلنجز سے نمٹنے کیلئے فرسود ہ سسٹم ختم کرکے جدید ٹیکنالوجی کے ذریعے ملک وقوم کو محفوظ بنانے کی جانب گامزن ہے۔ کیا عصر حاضر میں گڈگورننس کا خواب جدید
مزید پڑھیے


شناخت کا کرب؟

جمعرات 26 نومبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
آج 78سال بعد مجھے محسوس ہورہا ہے کہ میری انگلیوں کے نشان ختم ہونے کیساتھ میرا وجود ختم ہوگیا ہے او رمیری خدمات بھی۔ میں زندہ ہوں مگر دورجدید میں سسٹم مجھے تسلیم کرنے سے انکاری ہے۔ میں موبائل فون سم خریدسکتا ہوں اور ناہی بینک اکاؤنٹ کھلواسکتا ہوں۔ 30سال تک سرکاری اسکول میں بطور معلم خدمات سرانجام دے کر ہزاروں بچوں کو تعلیم کے زیور سے آراستہ کیا مگر اس کے باوجود یہ سسٹم مجھے اور میرے وجود کو تسلیم کرنے پر تیار نہیں۔ غربت اور کورونا وائرس کے ہاتھوں سے مالی مشکلات سے دوچار حیدرآباد کے ریٹائرڈ ماسٹرجمیل
مزید پڑھیے


سوچ اور رویے آخر کب بدلیں گے؟

جمعرات 19 نومبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
وزیراعظم عمران خان سمیت ماضی میں ہر وزیراعظم بیرون ملک مقیم پاکستانیوں اورتاجروں کو پاکستان میں سرمایہ کاری کیلئے قائل کرنے میں مصروف رہے ہیں۔بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کی مالی آسودگی حاصل کرنے کے بعدسب سے بڑی تمنا وطن عزیز میں کاروبار کی خواہش ہے۔وطن کی مٹی اوراپنوں کی محبت انہیں ترقی یافتہ ممالک میں تمام ترکامیابیوں اور آسائشوں کے باوجود چین سے نہیں بیٹھنے دیتی۔ ملک کی تقدیر سنوارنے کے بہت سے منصوبے بناتے ہیں مگر بیشتر اپنے منصوبوں پر عملدرآمد میں ناکام ہوجاتے ہیں۔ 73سال گزرنے کے باوجود سرکاری افسران کا رویہ اور سسٹم تبدیل کیوں نہیں ہوسکا؟یہ
مزید پڑھیے