BN

محمد حسین ہنزل


احباب جو ہمارے درمیان نہیں رہے


پچھلے کئی ہفتوں کے دوران کچھ رشتے داروںاور احباب کی موت کی خبریں سن سن کر خود کو بہت دکھی پایا اور پشتو زبان کا یہ ٹپہ بہت یاد آرہا ہے : یارانو! یو تل بل زاریژئی ما د مجلس یاران لیدل چی خاورے شو نہ ... دوستو!ایک دوسرے سے پیار وایثارسے پیش آیا کرو کیونکہ میں نے اپنی آنکھوں سے مجلس کے احباب کو رزقِ خاک ہوتے دیکھا ہے''۔ چند ہفتے پہلے پیغام موصول ہوا کہ ’’اے این پی ژوب کے مخلص رہنما جناب عبدالرشید سیال کاکڑاب اس دنیا میں نہیں رہے''۔عبدالرشید صاحب کی موت خبر نے رنجیدہ کردیا تاہم چند لمحے
منگل 16 فروری 2021ء

یہ درندگی کب تک ۔۔۔؟

بدھ 03 فروری 2021ء
محمد حسین ہنز ل
ژوب سے تعلق رکھنے والاتیرہ سالہ عصمت اللہ صافی معمول کی طرح جمعرات کی صبح بھی اپنی ہتھ گاڑی ( ٹرالی) لے کر مزدوری کیلئے گھر سے نکلا لیکن شام کو معمول کے مطابق اپنے گھر نہیں لوٹا۔کیونکہ اسی دن ایک درندہ صفت انسان اس کے پاس آتا ہے اور اسے ساٹھ روپے کے عوض مزدوری کیلئے اپنے ساتھ لے جاتا ہے ۔ عصمت اللہ صافی کے ساتھ پھر وہی ہوا جو اس ملک کے بچوں کے ساتھ آئے روز ہوتارہتا ہے ۔ عصمت اللہ کو جنسی تشدد کا نشانہ بنا کر اس درندہ نما انسان نے
مزید پڑھیے


افغان امن کی کنجی کس کے پاس؟

اتوار 31 جنوری 2021ء
محمد حسین ہنز ل
امریکی صدارت کا منصب سنبھالتے ہی جوبائیڈن نے پہلے دن اپنے پیشرو صدرڈونلڈ ٹرمپ کے قلم سے صادر ہونے والے کئی اہم فیصلوں کو لغو قرار دیا ۔مثلاسابق صدر ٹرمپ نے اپنی صدارت کے پہلے دنوں میں سفری پابندیوں (جن میں سات مسلم ممالک سرفہرست تھے) کا اعلان کیاتھاجبکہ صدر جو بائیڈن نے اس کا خاتمہ کر دیا ہے۔ڈونلڈٹرمپ نے امریکہ اور میکسیکو کی سرحد پر دیوار کی تعمیر کا منصوبہ شروع کیاتھا،بائیڈن نے اس منصوبے کوبھی موقوف کردیا ۔ٹرمپ نے پیرس ماحولیاتی معاہدے سے امریکہ کو نکال دیاتھااور عالمی ادارہ صحت سے امریکہ کو نکال دیاتھا لیکن جوبائیڈن نے
مزید پڑھیے


کچھ پشتو اکیڈمی کوئٹہ کے بارے میں

جمعرات 14 جنوری 2021ء
محمد حسین ہنز ل
تقسیم ہند کے بعد بدقسمتی سے ہمارے مقتدر طبقے نے علاقائی مادری زبانوں کو اس حد تک قربان کرنے کا فیصلہ کرلیاکہ نتیجے میں نئی نسل کو اپنی مادری زبان سے علاقہ محض اپنے گھر کی چار دیواری تک محدود ہوکر رہ گیا۔قیام پاکستان کو اب سات دہائیوں سے زیادہ کا عرصہ بیت چکاہے لیکن بچوں کو اپنی مادری زبان میں تعلیم دینا اب بھی ایک خواب و خیال تصور کیا جاتا ہے۔ اب اگر کوئی ریاست سے اپنی مادری زبان میں بچوں کو تعلیم کا مطالبہ کر تاہے تو انہیں خود بھی یقین نہیں آتاکہ ان کا یہ
مزید پڑھیے


اپنی برادری کے بارے میں قیوم چنگیزی کی تجویز

هفته 09 جنوری 2021ء
محمد حسین ہنز ل
امن ،انسانیت اور دین کے دشمنوں نے ایک بارپھر ہزارہ برادری کو نشانہ بنایا۔اب کی بار اس کمیونٹی کے وہ قابل رحم کان کنوں شہید کردیئے گئے جنہوں نے اپنے اہل وعیال کا پیٹ پالنے کی خاطراپنے گھر سے میلوں دور زمیں کی تہہ میں اپنی زندگیاں گزارنے کا رسک لیاہواتھا۔تین جنوری کومچھ کے علاقے میں گیارہ کان کنوں کو اغوا کرنے کے بعد ان کے ہاتھ پشت پر باندھ کراس بے دردی کے ساتھ کچھ کو گولیاں مارکراور کچھ تہہ تیغ کرکے شہید کردیئے گئے کہ انسانیت شرما گئی۔ ماضی کی طرح اس مرتبہ بھی بہت سے گھرانے اجڑ
مزید پڑھیے



جے یوآئی سے مولانا شیرانی کی رحلت

جمعرات 31 دسمبر 2020ء
محمد حسین ہنز ل
مولانا محمدخان شیرانی مزید جے یو آئی کی دنیا میں نہیں رہے۔جمعیت علماء اسلام سے اس بزرگ سیاستدان کا رشتہ ایک ایسے وقت میں ختم ہواجب ان کی سیاسی توانائی تقریباًجواب دے چکی ہے۔عمر کے اس حصے میں ایک معمر سیاستدان عموما ًپارٹی میں پیہم محبتیں اور عزت سمیٹتا ہے لیکن بدقسمتی سے مولانا شیرانی کے حق میں یہ سعادت نہیں آئی۔ سماجی رابطوں کے اس بے رحمانہ دور میں ہر کس و ناکس کو اُن کی ذات پر ایک دو جملے کھسنے کا موقع مل گیایہاں تک کہ انہیں ننگی گالیاں تک سننا پڑیں۔اس میں کوئی دو رائے نہیںکہ
مزید پڑھیے


پی ڈی ایم کالاہور شو اورمحمود اچکزئی کی تقریر!!

بدھ 16 دسمبر 2020ء
محمد حسین ہنز ل
لاہور کے مینار پاکستان گراونڈ میں پاکستان ڈیموکریٹک مومنٹ (پی ڈی ایم )کا جلسہ حکومت ِ وقت کی اجازت اور رکاوٹوں کے بغیر کامیاب ہوکر رہا۔حسب معمول اس تحریک میں شامل تمام سیاسی اور ۵مذہبی جماعتوں کے رہنماووں نے اپنی اپنی تقاریر میں حکومت کی نالائقی اور اسٹیبلشمنٹ کی پشت پناہی پرکھل کر بات کی اوراسی فلور سے حکومت سے مذاکرات نہ کرنے اور اگلے مرحلے میں اسلام آباد کے لئے لانگ مارچ اور استعفے پیش کرنے کا اعلان بھی کردیا۔تحریک کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے اپنی تقریر میں آنے والے دنوں میں ملک میں انارکی کی بات کی
مزید پڑھیے


اگرمولانا اپوزیشن کا حصہ نہ ہوتے ۔۔۔؟

جمعرات 10 دسمبر 2020ء
محمد حسین ہنز ل
پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کے خلاف پی ڈی ایم کے نام سے بننے والی گیارہ اپوزیشن جماعتوں کی تحریک اپنی عروج پرپہنچ چکی ہے۔بلکہ یہ کہنا بے جا نہ ہوگا کہ پی ٹی آئی حکومت کو چلتا کرنے اورجمہوری نظام کوشفاف بنانے پرمُصر یہ تحریک اب اپنے حتمی مرحلے میں داخل ہوکربات ایوان زیریں اورایوان بالا اور صوبائی اسمبلیوں سے استعفوں تک جاپہنچی ہے۔ استعفوں کے بارے میںابتداء میں دونوںبڑی جماعتیں پاکستان پیپلز پارٹی اور پاکستان مسلم لیگ میں ہچکچاہٹ کاشکار تھیں تاہم منگل کے پی ڈی ایم اجلاس کے دوران میاں نواز شریف کی تجویز کی حمایت
مزید پڑھیے


مولانا عبدالرحمن کاکڑ:ایک خوددارمُلا کی رحلت

منگل 08 دسمبر 2020ء
محمد حسین ہنز ل
وہ بنیادی طور پر مدرسے کے فارغ التحصیل مُلا تھے لیکن فکری لحاظ سے روایتی ملائیت سے کوسوں دور تھے۔ وہ عالم دین تھے تاہم انہوں نے علم کو مال بنانے کا وسیلہ قطعاً نہیں بنایا۔ابتداء میں وہ سیاست کے میدان میں بھی قدم رنجہ ہوئے تھے لیکن بعد میں جب دیکھا کہ اس شعبے کی آنکھ سے حیا بھی نکل گئی تو ہمارے اس مُلا نے سیاسی حلقوں سے بھی اپنی راہیں جدا کرلیں۔گزشتہ دنوں ان کی رحلت کی خبر سن کر میں دلی طور پر افسردہ ہوا اور سوچنے لگا کہ ’’ موت بھی ان لوگوں کی تلاش
مزید پڑھیے


الوداع پروفیسر عمرخان ۔۔۔۔

جمعه 27 نومبر 2020ء
محمد حسین ہنز ل
ژوب ڈگری کالج کے مایہ نازپروفیسرجناب عمرخان کی اچانک رحلت کی خبر ہم سب کے دل ودماغ پر ہتھوڑے کی طرح برسی اورسبھی کوحددرجے رنجیدہ کردیا۔۔۔ انا للہ وانا الیہ راجعون ۔پروفیسر عمر خان معمول کی طرح دو دن پہلے پیر کوبھی کالج آئے ہوئے تھے اور پہلے کی طرح ہشاش بشاش اور تر وتازہ تھے ۔کسے خبر تھی کہ ان کی موت فقط دو یوم کی مسافت پر کھڑی ان کاانتظار کررہی ہے؟کل مجھے پروفیسرسید اجمل شاہ بتارہے تھے کہ اُسی روزپروفیسرعمرخان نے باتوں باتوں میں اسے اور پروفیسر نجم الدین کو اپنے سینے میں ہلکے بوجھ
مزید پڑھیے