BN

محمد عامر رانا


جِن اور بُونے


گلیور کی مہمات اور جانوروں کا باڑہ انگریزی فکشن کے دو ایسے شاہکار ہیں جن کی سیاسی‘ نظری اور سماجی معنویت ابھی تک برقرار ہے۔ اپنے سادہ اسلوب اور گہرے تاریخی اور سماجی شعور کے باعث آج بھی یہ دنیا بھر کے قارئین کو لبھاتے ہیں۔ بلکہ اگر یہ کہا جائے کہ دنیا میں جہاں جہاں آمریت کی سیاہی پھیلی ہے اظہار رائے پر قدغنیں لگی ہیں۔ جبر کا کہرا گہرا ہوا ہے تب تب ان ادب یاروں کے معنی نکھر کر سامنے آئے ہیں۔ اندازہ ہے کہ جبر اور خوف کے موسم میں حریت فکر رکھنے والے تجزیہ کاروں،
پیر 14 مئی 2018ء مزید پڑھیے

گنجے فرشتے

پیر 07 مئی 2018ء
محمد عامر رانا

گنجے فرشتے‘سعادت حسن منٹو کے خاکوں کا مجموعہ ہے جو 1952ء میں شائع ہوا۔ یہ خاکے کیا ہیں بس منٹو نے فلمی اور ادبی دنیا کے کرداروں کے باطن سے ایک نئی دنیا تخلیق کی ہے۔ قائد اعظم کا خاکہ ’’میرا صاحب‘‘ جو منٹو نے ان کے ڈرائیور محمد حنیف آزادکی زبانی بیان کیا ہے خاصے کی چیز ہے جس میں قائد اعظم ایک انسان کے روپ میں نظر آتے ہیں۔ گنجے فرشتے کے بعد منٹو نے ملکہ ترنم نور جہاں کا شہرہ آفاق خاکہ ’’نورجہاں سرور جہاں‘‘ لکھا جو ان کے خاکوں کے دوسرے مجموعے ’’لائوڈ سپیکر‘‘ میں شامل
مزید پڑھیے








اہم خبریں