اسلام آباد(سپیشل رپورٹر) وزیرخارجہ شاہ محمودقریشی نے کہاہے کہ اسلاموفوبیا کے حالیہ رونما ہونے والے واقعات سے دنیا بھر کے مسلمانوں کی دل آزاری ہوئی ہے ، پاکستان ، عالمی سطح پر بین المذاہب ہم آہنگی سے متعلق آگاہی پیدا کرنے اور باہمی احترام کے فروغ کیلئے کوشاں ہے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعرات کو انڈونیشیا کی وزیر خارجہ ریٹینو مارسودی کے ساتھ ٹیلیفونک رابطہ کے دوران کیا۔ دونوں وزرائے خارجہ کے مابین اسلاموفوبیا کے بڑھتے ہوئے واقعات اور بین المذاہب ہم آہنگی کے حوالے سے تبادلہ خیال کیاگیا۔وزیر خارجہ نے اسلاموفوبیا کے خلاف او آئی سی پلیٹ فارم سے مشترکہ لائحہ عمل اختیار کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ پاکستان، عالمی سطح پر بین المذاہب ہم آہنگی سے متعلق آگاہی پیدا کرنے اور باہمی احترام کے فروغ کیلئے کوشاں ہے ، پاکستان، بین الاقوامی قوانین کی روشنی میں ذمہ دارانہ، آزادی اظہارِ رائے پر یقین رکھتا ہے ۔انہوں نے کہاکہ میں وزیراعظم عمران خان کے وژن کی روشنی میں تسلسل کے ساتھ، علاقائی و بین الاقوامی فورمز پر اس معاملے کو اجاگر کر رہا ہوں، وزیرخارجہ نے نیامے میں منعقدہ وزرائے خارجہ کونسل کے 47ویں اجلاس کے موقع پر اسلاموفوبیا کے حوالے سے ، پاکستان کی جانب سے پیش کردہ قرارداد کی بھرپور حمایت پر انڈونیشین وزیر خارجہ کا شکریہ ادا کیا۔وزیرخارجہ نے ،قرارداد کی روشنی میں 15 مارچ کو اسلاموفوبیا کے خلاف عالمی دن قرار دلوانے کیلئے بین الاقوامی فورمز پر مشترکہ کاوشیں بروئے کار لانے کی ضرورت پر زور دیا۔انہوں نے کہا بین الاقوامی سطح پر پرامن بقائے باہمی، برداشت اور بین المذاہب ہم آہنگی کے فروغ کیلئے ،ضرورت اس بات کی ہے کہ اقوام متحدہ کی سرپرستی میں تہذیبوں کے مابین مباحثے کا انعقاد کیا جائے ۔ انڈونیشین وزیر خارجہ رتنو مرسودی نے بین الاقوامی سطح پر اسلاموفوبیا کے خلاف آواز اٹھانے کے حوالے سے پاکستان کی جانب سے کی جانیوالی سنجیدہ کاوشوں کوسراہتے ہوئے ، اس ضمن میں انڈونیشیا کی جانب سے ہر ممکن تعاون کا یقین دلایا۔