لاہور(نمائندہ خصوصی سے ) صوبائی حکومت نے سول سیکرٹریٹ جنوبی پنجاب کے قیام کی منظوری دے دی۔ منظوری صوبائی وزیر خزانہ مخدوم ہاشم جواں بخت کی زیر صدارت کابینہ کی سٹینڈنگ کمیٹی برائے فنانس اینڈ ڈویلپمنٹ کے دسویں اجلاس میں دی گئی۔ جس میں صوبائی وزیر برائے صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال، چیف سیکرٹری پنجاب یوسف نسیم کھوکھر، سیکرٹری فنانس عبداﷲ سنبل، ایڈیشنل سیکرٹری فنانس مجاہد شیر دل، سپیشل سیکرٹری محمد عثمان ، سیکرٹری پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ افتخار سہو اور تمام متعلقہ محکموں کے سیکرٹریز نے شرکت کی۔ اجلاس میں مختلف محکموں کی سفارشات پر مبنی 36رکنی ایجنڈا پیش کیا گیا جس میں سول سیکرٹریٹ جنوبی پنجاب ، پنجاب ہیلتھ فاؤنڈیشن ، ریسکیو 1122ایمرجنسی سروس، محکمہ آبپاشی اور فنانس میں بھرتیوں کی منظوری ، پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ ڈیپارٹمنٹ میں درجہ چہارم کے 70ملازمین کی مستقلی ، کلین انرجی انویسٹمنٹ پروگرام کے لیے سپلیمنٹری گرانٹ کی منظوری، بہاولپور میں چلڈرن ہسپتال ،ڈائریکٹوریٹ جنرل یوتھ افیئرز کے قیام اور وزیر اعظم کے پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام کے تحت زرعی شعبہ کے لیے فنڈز منظوری شامل تھی۔ صوبائی وزیر نے کمیٹی کی متفقہ رائے سے مذکورہ تمام سفارشات کی منظوری دیتے ہوئے متعلقہ سیکرٹریز کو ہدایت کی کہ وہ محکمہ خزانہ کو جنوبی پنجاب میں سول سیکرٹریٹ کے قیام کے لیے ضرورت کی بنیاد پر بھرتیوں کے اخراجات کی تفصیلات سے آگاہ کریں جنوبی پنجاب میں جونشستیں متعارف کروائی جائیں لاہور میں ان کی متوازی نشستوں میں کمی لائی جائے ۔ ٹرانسفر کی صورت میں فیملی کی رہائش کی سہولت مہیا کی جائے تاکہ افسر اور عملہ پوری دلجمعی کے ساتھ نئے سیکرٹریٹ کے قیام کو کامیاب بنانے پر توجہ مرکوز رکھے ۔لاہور سیف سٹی پروجیکٹس کے لیے پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ پر توجہ مرکوز کرے ۔ اجلاس میں بہاولپور سے لودھراں تک سپیڈو بس کے واجبات ، قبائلی علاقوں میں پینے کے صاف پانی کی 8سکیموں کے آغاز اور مدارس کی محکمہ سکول ایجوکیشن کے تحت رجسٹریشن کیلئے محکموں کے اختیارات میں ترامیم کے معاملات بھی زیر بحث آئے ۔