لاہور(جوادآراعوان)پنجاب میں بیوروکریسی کی سستی اورعدم تعاون کی وجہ سے سالانہ ترقیاتی پروگرام2018-19کے تحت جاری منصوبوں کو رکاوٹ کا سامنا ہے ، صوبائی منصوبوں کیلئے جاری 27فیصدفنڈز استعمال کے منتظر ہیں۔ذرائع پنجاب کابینہ نے صوبہ میں سالانہ ترقیاتی پروگرام2018-19کے تحت جاری منصوبوں کی اندرونی کہانی بیان کرتے ہوئے روزنامہ 92نیوز کو بتایا کہ بیوروکریسی کے سست رویہ کی وجہ سے کئی ترقیاتی منصوبوں کو رکاوٹ کا سامنا ہے ۔ پنجاب کے مختلف محکمے ترقیاتی پروگرام2018-19کے تحت جاری منصوبوں کیلئے 91فیصد فنڈز حاصل کر چکے ہیں لیکن اب تک 64فیصد کا استعمال کیا گیا ہے جبکہ 27فیصد ترقیاتی فنڈز استعمال کے منتظر ہیں اوراگر انکو استعمال نہ کیا گیا تو نئے مالیاتی سال کی تیاری پر31 مئی تک یہ فنڈز سرنڈر کر دیئے جائینگے اور ترقیاتی منصوبے نئے مالی سال تک لٹک جائینگے ۔ نئے مالی سال تک لٹکنے والے ترقیاتی منصوبوں پر خرچے کی لاگت بڑھ جانے کا امکان ہو گا جس سے ٹیکس دہندگان کیساتھ زیادتی ہو گی۔ذرائع نے دعویٰ کیا کہ بیوروکریسی پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کی کرپشن کیخلاف مہم کو ناکام بنانے کی کوشش میں انکی راہ میں رکاوٹیں کھڑی کر رہی ہے ،کیونکہ کرپشن کیخلاف مہم کی زد میں کئی بیوروکریٹس بھی آرہے ہیں اور کئی گرفتار ہو چکے ہیں۔بیوروکریسی حکومت کی ناکامی کا تاثر قائم کرنا چاہتی ہے ۔ ترقیاتی کاموں میں سستی کی وجہ صرف بیوروکریسی ہے اور اس میں کابینہ ارکان کی کوئی نااہلی نہیں ۔ ترقیاتی منصوبوں کے پروگرام کیلئے 238بلین روپے مختص کئے گئے تھے جن میں سے 267ارب روپے جاری کئے جا چکے ہیں لیکن بیوروکریسی کی سستی یا عدم تعاون کے ہتھکنڈوں کی وجہ سے 27 فیصدترقیاتی فنڈز ابھی تک استعمال نہیں کئے جا سکے ،اس حوالے سے وزیر اعلیٰ پنجاب کو اس معاملہ پر حالیہ کابینہ اجلاس کے بعد ایک خصوصی بریفنگ میں آگاہ کیا گیا تھا۔وزیر اعلیٰ نے سالانہ ترقیاتی پروگرام کے تحت جاری فنڈز کو نئے مالی سال کی تیاری سے پہلے متعلقہ منصوبوں پر استعمال کرنے کیلئے سخت ہدایت کی ہے جسکی رپورٹ وہ ہر 14دن بعد لیں گے ۔وزیر اعلیٰ نے تمام سیکرٹرز اور کمشنرز کو ہدایت جاری کی ہے کہ وہ سالانہ ترقیاتی پروگرام کے تحت جاری منصوبوں پر کام میں تیزی لائیں،اسکے ساتھ ہی تمام ڈپٹی کمشنرز بھی اپنے ضلعوں میں ترقیاتی کاموں کی رفتار کی نگرانی کریں۔وزیر اعلیٰ نے تمام سیکرٹرز کو یہ ہدایت بھی دی ہے کہ وہ اپنے محکموں سے متعلق ترقیاتی کاموں کو چیک کرنے کیلئے ہفتہ میں2 دن فیلڈ میں جائیں۔