مکرمی ! اکثر سیاستدان بائیس کروڑ عوام کے سامنے زبردست ڈرامہ پیش کرتے ہیں جس میں عوام کو اپنی اولاد کہتے ہیں اس کی ہر خوشی کو اپنی خوشی اور غم کو اپنا غم کہتے ہیں۔ اس ڈرامے میں اچھا روزگار اور مسائل حل کرنے کی قسمیں کھاتے ہیں اور فرسودہ نظام کو بدلنے کے وعدے کرتے ہیں۔ عوام کوان باتوںسے ورغلاکر کونسلر، ناظم، میئر، ایم پی اے پھر ایم این اے سے وزیر بن جاتے ہیں۔ ڈرامے کے ختم ہوتے ہی حقیقت بدل جاتی ہے۔ یہ خیر خواہ عوام کو سرکاری ہسپتالوں میں خوار ہوتے دیکھ کر بھی باہر کے ملک میں علاج کیلئے جاتے ہیں۔ ناقص ملکی تعلیم کی وجہ سے اپنے فرزندوں کو باہر تعلیم کے لئے بھیج دیتے ہیں۔ مختلف سرکاری محکموں کو یرغمال بنا لیتے ہیں۔ یہ سب اپنے لئے یا اپنی ضرورتوں کیلئے جیتے ہیں۔ ان کے وعدے جھوٹے، ان کا ہر قول جھوٹا ہے۔ ان کی قسمیں حتیٰ کہ ان کی زبان بھی جھوٹی ہے۔ اس وجہ سے یہ لوگ پارٹیاں بدل بدل کر اقتدار کے مزے لیتے ہیں۔ اسی اشرافیہ نے سارے سسٹم کو اپنے ماتحت کیا ہوا ہے۔ اس نظام کو بدلے بغیر حقیقی تبدیلی ممکن نہیں۔ (وقاص احمد گوجرانوالہ)