ریاض( آن لائن )سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے کہا ہے کہ صحافی جمال خشوگی کا قتل میرے اقتدار کے دوران ہوا اور میںاسکی ذمہ داری قبول کرتا ہوں۔سعودی عرب نے کہاقبل ازیں سعودی عرب کا سرکاری موقف تھا کہ خاشقجی کے قتل میں ولی عہد ملوث نہیں اور اسکی ذمہ داری ڈپٹی انٹیلی جنس چیف اور دیگر حکام پر ڈا ل دی گئی تھی ، تاہم سی آئی اے اور دیگر مغربی انٹیلی جنس ایجنسیوں کا کہنا ہے قتل کے احکامات شہزادہ محمد بن سلمان نے ہی جاری کئے تھے ۔ ’’دی کراؤن پرنس آف سعودی عرب‘‘ نامی دستاویزی فلم کے پری ویو میں پی بی ایس کے مارٹن سمتھ سے گفتگو کرتے ہوئے سعودی ولی عہد کا کہنا تھا کہ یہ میرے اقتدار کے دوران ہوا، میں اسکی پوری ذمہ داری قبول کرتا ہوں۔مارٹن سمتھ نے سوال کیا کہ انہیں معلوم ہوئے بغیر قتل کیسے ہوا جس پر شہزادہ محمد نے کہا ہمارے پاس 30 لاکھ سرکاری ملازمین ہیں۔مارٹن نے سوال کیا کیا وہ آپ کا جہاز بھی لے سکتے ہیں،جس پر انہوں نے کہا میرے پاس کئی عہدیدار، وزرا ہیں جو معاملات کو دیکھتے ہیں، وہی ذمہ دار ہیں، انکے پاس اختیار ہے ایسا کرنے کا۔