لاہور(نامہ نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ نے ڈیڑھ ارب روپے کے فاریکس فراڈ کے ملزموں کی سزا معطل کرکے ملزمان کو رہا کرنے کا حکم دے دیا، عدالت نے ملزمان کو پانچ پانچ لاکھ روپے کے مچلکے جمع کرانے کا حکم دیا۔ جسٹس علی باقر نجفی کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے ملزمان اعظم چشتی، عامرشفیق اور عامر عباس کی اپیلوں پر سماعت کی۔ نیب کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ ملزمان نے لوگوں کو تین فیصد منافع دینے کا وعدہ کیا اور آگے چھ فیصد منافع پر کسی اور کو رقم ددے دی، شہریوں سے رقوم ملزمان نے وصول کیں اوروہ ادائیگی کے پابند ہیں۔ درخواست گزاروں کی طرف سے موقف اختیار کیا گیا کہ نیب نے 2005 میں اے جی ایس فاریکس فراڈ کیس کا ریفرنس دائر کیا، 2018 میں نیب عدالت نے پانچ سال قید کی سزا سنائی، چار سال سزا پوری کرچکے ، عدالت اپیل کے فیصلے تک ضمانت منظور کرے ۔ادھرلاہورہائیکورٹ نے چودہ بھٹہ مزدوروں کو رہا کرنے کا حکم دے دیا، رہا ہونے والوں میں بچے ، خواتین اور مرد بھی شامل ہیں۔ جسٹس سردار احمد نعیم نے اﷲ دتہ کی درخواست پرسماعت کی، درخواست گزار کے وکیل نے موقف اختیار کیا پھولنگر کے بھٹہ مالک جہانگیر احمد نے میرے موکل کے رشتہ داروں کو غیر قانونی طور پر اپنے پاس رکھا ہوا ہے ،عدالت بھٹہ مزدوروں کو رہا کرنے کا حکم دے ، عدالتی حکم پر پولیس نے بھٹہ مزدوروں کو بازیاب کرا کے پیش کیا، عدالت نے تمام دلائل سننے کے بعد بھٹہ مزدوروں کو رہا کرنے کا حکم دے دیا۔