واشنگٹن (نیٹ نیوز ) امریکی قانون سازوں نے مقبوضہ جموں اور کشمیر کے معاملے پر ٹرمپ انتظامیہ سے بھارت اور پاکستانی وزرائے اعظم سے جنرل اسمبلی اجلاس کے دوران بات چیت کرانے کا مطالبہ کردیا۔ ٹیکساس سے ڈیموکریٹ کانگریس وومن شیلا جیکسن لی کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کے جنرل اسمبلی کے اجلاس کے دوران امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ یا سیکرٹری آف سٹیٹ مائیکل پومپیو کو بھارت و پاکستان کے وزرائے اعظم سے کشمیر بحران کے حل کیلئے موقع سے فائدہ اٹھاتے ہوئے بات چیت کرنی چاہیے ۔میری لینڈ کے ڈیموکریٹ کانگریس مین انتھونی براؤن کا کہنا تھا کہ میں بھارت و پاکستان کی حکومت سے تحمل سے کام لینے اور کشیدگی کم کرنے کیلئے امریکہ سے بات چیت کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں۔الینوائس کے سینئر ڈیموکریٹک لیڈر کانگریس وومن جین شیکوسکی کا کہنا تھا کہ امریکہ اور اقوام متحدہ کو خطے میں ہونے والے مظالم پر بات کرنی چاہیے کیونکہ یہ نہایت خطرناک صورتحال ہے ۔امریکی کانگریس میں پاکستان کاکس کی شریک چیئرمین نے خطے میں کشیدگی کم کرنے کیلئے 5 نکاتی فارمولا پیش کیا۔ ان کا کہنا تھا دونوں قومیں قوت میں برابر ہیں جس کی وجہ سے امریکہ اور بھارت اور پاکستان کی قیادت سے ملاقات ناگزیر ہے اور اسے ضرور ہونا چاہیے ، میں دونوں رہنماؤں سے امن کیلئے بات چیت کرنے کی استدعا کرتی ہوں۔تاریخ میں یہ بھارت اور پاکستانی ریاست کے سربراہان کا مل کر طویل المدتی قرار داد تلاش کرنے کا بہترین موقع ہے ۔ امریکی قانون ساز