کراچی (کامرس رپورٹر) گزشتہ مالی سال کے دوران زرعی قرضوں کی تقسیم بڑھ کر 972.6 ارب روپے ہوگئی اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے اعداد وشمار کے مطابق مالی سال 2017-18ء میں بینکوں نے 972.6 ارب روپے تقسیم کیے جو پچھلے سال کی 704.5 ارب روپے کی تقسیم سے 38.1 فیصد زیادہ ہے ۔اسی طرح جون 2018ء کے آخر میں زرعی واجب الادا پورٹ فولیو بڑھ کر 469.4 ارب روپے ہوگیا جو پچھلے سال کے 405.8 ارب روپے کے مقابلے میں 15.7 فیصد کی نمو ظاہر کرتا ہے ۔ اسی طرح جون 2018ء کے آخر میں زرعی قرضے کی رسائی گذشتہ سال کے 3.27 ملین کاشتکاروں سے بڑھ کر 3.72 ملین کاشتکاروں پر محیط ہوگئی جو 13.8 فیصد کی نمو کو ظاہر کرتی ہے ۔مالی سال 2017-18ء میں بڑے بینکوں نے مجموعی طور پر 523.9 ارب روپے کے زرعی قرضے دیے جو ان کے سالانہ ہدف 516 ارب روپے کا 101.5 فیصد ہے اور پچھلے سال دیے گئے 342.6 ارب روپے سے 52.9 فیصد زیادہ ہے ۔ تخصیصی بینکوں کے زمرے میں زرعی ترقیاتی بینک لمیٹڈ نے 83.2 ارب روپے تقسیم کیے جو ان کے 125 ارب روپے کے سالانہ ہدف کا 66.6 فیصد ہے جبکہ پی پی سی بی ایل نے 10.7 ارب روپے تقسیم کیے اور اپنے 15 ارب روپے کے ہدف کا 71.5 فیصد حاصل کیا۔اعداد شمار کے مطابق بطور گروپ نجی بینکوں نے 200 ارب روپے کے ہدف کا 92.4 فیصد حاصل کیا اور پانچ اسلامی بینکوں نے اپنے مجموعی ہدف 20 ارب روپے کا 82 فیصد حاصل کیا۔ مزید یہ کہ مائیکروفنانس بینکوں اور مائیکرو فنانس اداروں کی کارکردگی حوصلہ افزا رہی، مجموعی طور پر ان اداروں نے اپنے سالانہ اہداف عبور کرلیے اور چھوٹے کاشتکاروں کو بالترتیب 124.8 ارب روپے اور 28.7 ارب روپے تقسیم کیے ۔