مرثیہ کا لفظ ’’ رثا‘‘ سے نکلا ہے ‘ جس کا مطلب تعریف و توصیف خصوصاً میت کی توصیف ہے۔ برصغیر جنوبی ایشیاء میں کربلائی ادب کا بانی سرائیکی خطہ ہے مگر نصاب کی کتابوں میں اس کا ذکر نہیں ‘ نہ صرف یہ کہ سرائیکی کا ذکر نہیں بلکہ نصاب کی کتابوں میں سرائیکی کے ساتھ ساتھ پنجابی‘ بلوچی ‘ پشتو ‘ براہوی ‘ ہندکو‘ پوٹھوہاری و دیگر پاکستانی زبانوں میں تخلیق ہونیوالے ادب کا بھی تذکرہ نہیں کہ حکمرانوں نے صرف ایک زبان کو فوقیت دی، اردو کا تعلق انڈیا سے تھا ، اس لئے ادب کے میدان میں ہندوستانی اہل قلم کا تذکرہ تو ہوا جبکہ پاکستانی زبانوں کی تخلیقات سے اہل وطن محروم رہے ۔ ادبی تخلیقات سے سوچ و فکر جنم لیتی ہے، پاکستانی سوچ و فکر پاکستانی زبانوں میں تخلیق سے ہی ممکن ہے، آج محرم الحرام کے موقع پر درخواست کر رہا ہوں کہ پاکستانی زبانوں اور پاکستانی ادب کو قومی زبانوں کا درجہ دیکر نصاب کا حصہ بنایا جائے کہ آنیوالی نسل کو پاکستان کی تہذیب، ثقافت ، تاریخ و آثار کا علم ہو سکے۔ وسیب کے قدیم مرکز ملتان میں عزاداری اور مرثیے کی روایت بہت قدیم ہے ۔ معروف مورخ حفیظ خان اس پر لکھتے ہیں کہ خطہ ملتان میں عزاداری اس وقت شروع ہو گئی تھی جب واقعہ کربلا کے بعد دت قوم کے کچھ لوگ حضرت امام حسینؓ سے عقیدت رکھنے کے باعث وہاں مظالم کا شکار ہوئے اور عراق سے نکال دیئے گئے ۔ یہ لوگ عربی النسل تھے ۔ یہ لوگ 681 ء کے لگ بھگ ایران کے راستے ملتان اور ڈیرہ اسماعیل خان میں آ کر آباد ہوئے ۔ ملتان شروع سے ہی محبت کرنے والا خطہ ہے، پوری دنیا میں جہاں کہیں بھی ظلم ہوا، ملتان کے باسیوں نے اسے اپنا درد سمجھا۔ دنیا میں پیش آنے والے ہر سانحے کو اپنا سانحہ سمجھ لیتے تھے ۔ ظلم کا شکار کوئی بھی قوم ہجرت کر کے آئی ملتان نے محبت دی ، اپنائیت دی ، اس کے دکھ کو اپنا دکھ سمجھا، اس کے دکھ میں شریک ہوئے ۔ دت قوم کے لوگ جب اس خطہ میں آئے اس وقت ایران اور عبر کے زیر اثر اس قوم کے ان لوگوں نے مخلوط زبان میں عزاداری کی اور اس منظوم صنف کو عام کیا جو کبت کہلائی ۔ کبت خوانی کرنے والے ان لوگوں کو حسینی باہمن کہا جاتا تھا ۔ حسینی باہمنوں کے کہے ہوئے کبت ہی خطہ ملتان اور سرائیکی زبان میں مرثیہ کی ابتدائی شکل ہے۔ ایک روایت اور بھی ہے وہ یہ کہ وہ لوگ جو ظلم کا شکار ہو کر عراق سے ایران کے راستے اس علاقے آئے ، یہاں کے کلچر اور یہاں کی زبان سے مانوس ہوئے ، یہیں سے سرائیکی مرثیہ کی روایت بنی۔ نظام مصطفی صرف نعرے کے طور پر نہیں عملی طور پر ہونا چاہئے ۔ قانون کی تعلیم کیلئے پوری دنیا میں مشہور برطانیہ کے تعلیمی ادارے ’’ لنکز ان ‘‘ میں بار ایٹ لاء کے داخلے کیلئے قائد اعظم گئے تو ان کی نظر اس فریم پر پڑی جہاں روئے زمین پر قانون بنانے والے قانون ساز عمائدین کے نام لگے ہوئے تھے ،اس فہرست میں سب سے پہلا نام ہمارے پیارے نبی حضرت محمد مصطفیؐ کا ہے ۔ یہاں سے معلوم ہوتا ہے کہ غیر مسلم نے بھی ہمارے آقا ئے نامدارؐ کے بنائے ہوئے قوانین کی عظمت اور سپرمیسی کو تسلیم کیا جب کہ مسلم ممالک آج بھی نظام محمدی نافذ کرنے کیلئے لیت و لعل سے کم لے رہے ہیں ۔نظام محمدی کیا تھا ؟ نظام محمدی شوراتی نظام تھا جو کہ ایک طرح کا جمہوری نظام ہے۔ یزید نے جب شورائی نظام کی بجائے ملوکیت کی بنیاد رکھی تو نواسہ رسول ؐ حضرت امام حسین ؓ نے نہ صرف اس کی مخالفت کی بلکہ عملی طور پر میدان میں آ گئے ۔ ہادی برحق کے نظام احیاء اور نفاذ کیلئے اپنی اور آل اولاد کی جانوں کی پرواہ نہ کی اور راہ حق میں قربان ہو کر امت محمدی کیلئے مشعل راہ بن گئے۔مسلم ممالک میں پائی جانے والی مطلع العنانی ، ڈکٹیٹر شپ مرضی کی حکومتیں ، سرداری ،جاگیرداری اور قبائلی نظام اور بڑی بادشاہتیں ، یہ سب اس ملوکی نظام کے مظاہر ہیں جس کی بنیاد یزیدی دور میں رکھی گئی تھی ۔ محرم الحرام اسلامی کیلنڈر کا پہلا مہینہ ہے ۔ اس ماہ کو شہدائے کربلا کا مہینہ بھی کہا جاتا ہے۔ اسلامی تاریخ میں اس مہینے کی بہت زیادہ عظمت ہے ‘ اس پورے مہینے کو شہدائے کربلا کی یاد منانے کے ساتھ ساتھ سرائیکی وسیب میں یہ بھی ہوتا ہے کہ مسلمان شہر خاموشاں کی طرف جاتے ہیں اور پہلی محرم سے 10 محرم تک قبروں کی لپائی کی جاتی ہے۔ لواحقین قبرستانوں میں جا کر فاتحہ خوانی کرتے ہیں ‘ نذر نیاز اور طعام تقسیم ہوتا ہے ‘ کھجور کے پتے ‘ دالیں ‘ خوشبودار پانی اور پھول کی پتیاں قبروں پر نچھاور کی جاتی ہیں‘ اگر بتیاں جلائی جاتی ہیں ۔جیسا کہ میں نے عرض کیا کہ واقعہ کربلا کا سرائیکی وسیب سے گہرا تعلق ہے ، یہ بات دعوے سی کہی جا سکتی ہے کہ حضرت امام عالی مقام ؓ کی قربانی کو خراج عقیدت پیش کرنے کیلئے جتنا مرثیہ سرائیکی زبان میں کہا گیا ہے ، دنیا کی کسی زبان میں نہیں کہا گیا ۔ سانحہ کربلا 10 محرم 61 ھ بمطابق پہلی اکتوبر 680ء کے بعد حضرت امام حسین ؓ کے بیٹے حضرت امام زین العابدین ؓ مستورات کو لے کر دمشق گئے تو حضرت امام حسین ؓ کی بہن ام کلثوم اور امام زین العابدین کی زوجہ محترمہ نے مرثیے کہے ۔قابلِ ذکر بات یہ ہے کہ سرائیکی زبان میں کربلائی ادب کے نام سے بہت سی اصنافِ سخن جانی اور پہچانی جاتی ہیں جیسا کہ حسینی ڈوہڑہ ، حسینی مرثیہ ، حسینی قصیدہ اور حسینی منقبت اپنی مثال آپ ہیں ۔ سرائیکی مرثیہ سب سے پہلے سرائیکی وسیب سے شروع ہوا ۔ یہی وجہ ہے کہ مجلس عزاء جہاں بھی ہو رہی ہو ،وہاں سرائیکی مرثیہ ضرور پڑھا جاتا ہے۔ حتیٰ کہ لکھنو، دکن اور دہلی کی مجالس میں بھی سرائیکی مرثیے پڑھے گئے ۔