لاہور(رپورٹ: قاضی ندیم اقبال) سول سروس اصلاحات کے حوالے سے اہم حکومتی اقدام سامنے آیا ہے ۔وفاق کی جانب سے سول بیوروکریٹس کو غیر سیا سی رکھنے اور بے کار افسروں(او ایس ڈی) کوپوسٹنگ دے کر ان سے کام لینے کی پالیسی وضع کرلی گئی۔ذرائع کے مطابق وزیر اعظم عمران خان نے پارٹی رہنمائوں اور اسٹبلشمنٹ ڈویژن پر واضح کیا کہ حکومت کی جانب سے کی جانے والی سول سروس ریفامرز کا مقصد تمام سروسزسے وابستہ افسروں کی استعداد کار کو بہتر بناکر اداروں کی کارکردگی کا گراف بتدریج بہتر بنانا ہے ، اس ضمن میں بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح ؒ کا سول سرونٹس سے خطاب موجودہ حکومت کی سول ریفارمز کا بنیادی ایجنڈہ ہے ۔ ذرائع کے مطابق وزیراعظم کی ہدایات میں قرار دیا گیا کہ ملک کے بہتر مستقبل کے لئے ضروری ہے کہ پاکستان ایڈمنسٹریٹو سروس، فارن سروس، اطلاعات، پوسٹل، ریلوے ، آفیسر مینجمنٹ، پولیس، کسٹمزسمیت ملک بھر کی انتظامی سروسز سے وابستہ افسروں کو ہر صورت غیر سیا سی رکھنے کے لئے اقدامات کئے جائیں، اس ضمن میں سنیارٹی کے قانون پر سختی سے عمل درآمد کیا جائے ، ماضی کی حکومتوں نے پک اینڈ چوز کی پالیسی بنا کر نہ صرف سروسز کے اندر بلکہ ملک بھر کی ایڈمنسٹریٹو سروسز کے مابین جو خلیج پیدا کی، اس عمل کی موجودہ دور میں ہر صورت نفی کی جائے ۔ سابقہ دور حکومت میں پک اینڈ چوز کی پالیسی سے انتظامی افسروں کی تقسیم کا کام فوری طور پر ختم کیا جائے اور رائٹ مین فار رائٹ جاب کا فارمولہ اپنایا جائے اور سول بیوروکریٹس کو ہر صورت غیر سیا سی رکھنے کے لئے اقدامات کو یقینی بنایا جائے ۔ذرائع کے مطابق وزیر اعظم نے اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کو ہدایت کی ہے کہ وہ ایسے تمام آفیسرز کی فہرستیں مرتب کریں، جو افسر بکار خاص(Officer on Special Duty) کے طور پر موجود ہیں، اور انہیں بتدریج خالی آسامیوں پر تعینات کیا جائے ، افسروں کو فارغ بٹھا کر تنخواہیں دینا ملک و قوم کے ساتھ زیادتی ہے ،تاہم جن سول بیوروکریٹس کو اینٹی کرپشن ، نیب ، ایف آئی اے یا کوئی اور قانون نافذ کرنے والے ادارے طلب کریں، انہیں ہر صورت پیش ہونے اورہر تعاون کرنے کا پابند بنادیا جائے ۔ ذرائع کے مطابق وزیر عظم کے ویژن کی بابت پنجاب، خیبر پختونخوا،بلوچستان، سندھ اور ریاست آزاد جموں و کشمیر کی حکومتوں کو آگاہ کر دیا گیا جبکہ پنجاب میں حال ہی میں ہونے والے بعض ایسے سول بیوروکریٹس، جو گزشتہ دور حکومت میں بھی اہم آسامیوں پر تعینات رہے ، ان کا بھی وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے خود پہلے انٹرویو کیا جس کے بعد ان کو پوسٹنگ دی گئی۔