اسلام آباد (این این آئی)وفاقی وزیرمنصوبہ بندی مخدوم خسرو بختیار نے کہا ہے کہ حکومت ملک میں تعلیم کے شعبے کوبہتربنانے کیلئے یکساں نصاب رائج کرنے پر عمل پیرا ہے ، وژن 2025ء میں تعلیمی ترقی کو اولین حیثیت دی گئی ہے ،مقامی سطح پر اعلیٰ تعلیمی اداروں کا نیٹ ورک قائم کر کے عوامی سہولتوں میں اضافہ کی راہ پر گامزن ہیں۔وفاقی وزیر نے یہ بات بدھ کو سنٹرل ڈویلپمنٹ ورکنگ پارٹی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی ۔اجلاس میں وفاقی وزارتوں اور صوبائی محکموں کے اعلی حکام نے شرکت کی۔اجلاس میں تعلیم ، ذرائع ابلاغ اور علاقائی ترقی سے متعلق منصوبے پیش کئے گئے ۔اجلاس میں ایجوکیشن ڈویژن کی جانب سے 2 منصوبے پیش کیے گئے جس میں پہلا منصوبہ پائیدار ترقی کے مقاصد کے حصول کیلئے وفاقی دارالحکومت ، گلگت بلتستان ، فاٹا اور آزاد کشمیر کی مقامی کمیونٹی کو بنیادی تعلیم کی سہولیات فراہم کرنے اور تعلیمی شعبے سے متعلق انسانی ترقی کے انڈیکیٹرز کو بہتر بنانے میں مدد فراہم کرنا تھا جس کیلئے 2 ارب 60 کروڑ روپے مختص کئے گئے جسے منظور کر لیا گیا، ملک بھر میں بنیادی تعلیمی سکولوں کے قیام کیلئے ایجوکیشن ڈویژن کی جانب سے 4 ارب 5 کروڑ7 لاکھ روپے کی لاگت کا منصوبہ پیش کیا گیا جسے مزید منظوری کیلئے ایکنک کو بھجوا دیا گیا۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ پاکستان کے تمام اضلاع کی سطح پر یونیورسٹی سب کیمپس کا قیام علاقائی ترقی کی راہ پر ایک اہم قدم ثابت ہو گا۔