انقرہ(آن لائن) ترک صدر رجب طیب اردوان نے کہا ہے کہ شام میں سکیورٹی زون مکمل ہونے پر ہم وہاں کم از کم 10لاکھ انسانوں کی رہائش کو یقینی بنائیں گے ترکی اکیلئے مہاجرین کا بوجھ نہیں اٹھا سکتا۔صدر اردوان نے جسٹس اینڈ ڈویلپمنٹ پارٹی کے اجلاس سے خطاب میں کہا ہے کہ ہم نے شام میں ترکی کے خلاف بچھائے گئے جال کو جزوی طورپر ناکارہ بنا دیا ہے اور اس وقت ہمارے ایجنڈے پر فرات کا مشرقی حصہ ہے اسے بھی چند ہفتوں میں جیسے بھی ہو یقیناً حل کے راستے پر لے آئیں گے ۔ انہوں نے کہا ہے کہ میں آئندہ ماہ دورہ امریکہ کے دوراب صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ ملاقات کریں گے اور فرات کے مشرق میں اٹھائے جانے والے اقدامات کے بارے میں بات چیت کریں گے ۔صدر اردوان نے کہا ہے کہ ہم نے یورپ اور دنیا بھر کو کھلے الفاظ میں بتا دیا ہے کہ ادلب میں درپیش مسائل کو صرف ترکی پر نہیں چھوڑا جا سکتا۔ اس وقت تک ہم 40 بلین ڈالر کے قریب خرچ کر چکے ہیں۔ امریکہ کی طرف سے ترکی کے محکمہ آفات و ہنگامی حالات اے ایف اے ڈی کو فراہم کی جانے والی امدادی رقم 3 بلین یورو تھی۔ترک صدر نے مزید کہا کہ ترکی تنہا مہاجرین کے بوجھ کو کیسے اٹھائے گا۔۔