کراچی(سٹاف رپورٹر)وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ پنجاب حکومت رکن سندھ اسمبلی فریال تالپور کے پروڈکشن آرڈر پرعمل درآمد کرنے سے انکار کررہی ہے ، پنجاب حکومت کا یہ طرزعمل افسوسناک ہے ،یہ روش سندھ میں احساسِ محرومی میں اضافے کا باعث بنے گی، سپیکر سندھ اسمبلی نے 13 ستمبر کو بلائے گئے اجلاس کیلئے ایم پی اے فریال تالپور کے پروڈکشن آرڈر جاری کردیئے ،پنجاب حکومت پروڈکشن آرڈرپر عملدرآمد کرے ، فریال تالپورکو سندھ اسمبلی میں پیش ہونے کی اجازت دی جائے ۔وزیراعلیٰ ہائوس میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مرادعلی شاہ کا کہنا تھا کہ جب فریال تالپور نیب کی حراست میں تھیں تو انہیں اسمبلی سیشن میں شرکت کے لیے لایا جاتاتھا مگر جب سے انہیں جیل بھیجا گیا پنجاب حکومت سپیکر سندھ اسمبلی کی جانب سے ان کے پروڈکشن آرڈر پر عمل نہیں کررہی، یہ بہت سنگین بات ہے اور اس سے سندھ میں احساسِ محرومی میں اضافہ ہوگا، میں نے چیف سیکرٹری پنجاب ، گورنر پنجاب سے فریال تالپور کے پروڈکشن آرڈر پر عملدرآمد کے لیے بات کی مگر انہوں نے سنی ان سنی کردی،میں نے وزیر اعلیٰ پنجاب سے بھی رابطہ کرنے کی کوشش کی مگر وہ اتنے مصروف ہیں کہ میری ٹیلی فون کال بھی وصول نہں کرسکتے ، پاکستان کے لوگوں کو مطلع کررہا ہوں کہ اسمبلی میں موجود منتخب نمائندے کس طرح قواعد کی خلاف ورزی کررہے ہیں ۔ مراد علی شاہ کا مزید کہنا تھا کہ سندھ اسمبلی میں فارورڈ بلاک کی تشکیل کی خبروں میں صداقت نہیں،روزانہ نئی نئی افواہیں پھیلائی جاتی ہیں تاکہ صوبے میں غیر یقینی صورت حال پیدا ہو،پیپلز پارٹی کے منتخب ارکان اسمبلی بلاول اورآصف زرداری کی قیادت میں متحد ہیں،جب سے پیپلزپارٹی بنی ہے اس کے خلاف سازشیں ہورہی ہیں،احتساب کو متنازع بنادیاگیا ہے ۔