اسلام آباد ، لاہور( خبر نگار خصوصی، جنرل رپورٹر) ملک میں فار ماسیوٹیکل انڈسٹری کے دبائو پر ڈرگ ریگو لیٹری اتھارٹی نے مختلف ادویات کی قیمتوں میں 9 سے 15 فیصد اضافہ کر دیا ہے ۔ اس حوالے سے ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی نے گزشتہ روز باقاعدہ نوٹیفکیشن بھی جاری کر دیا ۔دوا ساز کمپنیوں کی جانب سے گزشتہ کئی عرصے سے ادویات کی قیمتوں میں اضافے کا مطالبہ کیا جا رہا تھا۔جس کے لیے کمپنیاں سپریم کورٹ بھی گئیں اور ادویات کی فراہمی بند کرنے کی بھی دھمکی دی تھی۔ ذرائع نے بتایا کہ ڈریپ کے نئے سربراہ شیخ اختر حسین جن کے فارما انڈسٹریز کے لوگوں کے ساتھ خصوصی مراسم ہیں انہوں نے ڈریپ کے سی ای او کا چارج لیتے ہی ادویات کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا ۔ ذرائع نے بتایا کہ اس وقت مارکیٹ میں الرجی سمیت مختلف بیماریوں کی ادویات کی مصنوعی قلت پیدا کر دی گئی ہے جس کی وجہ سے دمہ اور الرجی کے مریضوں کو شدید دشواری کا بھی سامنا ہے ۔ ذرائع کے مطابق فارما کمپنیوں کی طرف سے ادویات کی قیمتوں میں اضافے کا مطالبہ رد بھی کیا جا سکتا تھا تاہم ڈریپ کے نئے سربراہ نے آتے ہی دوائوں کی قیمتوں میں15 فیصد اضافے کی منظوری دے دی جن ادویات کی قیمتوں میں اضافہ کیا گیا ،ان میں کینسر ، ڈائلسز، گردوں کے علاج،اینٹی بائیوٹک، سانس، الرجی،ملٹی وٹامن کی ادویات شامل ہیں۔ ڈریپ نوٹیفکیشن کے مطابق مختلف ادویات کی قیمتوں میں 9 سے 15 فیصد تک اضافہ کیا گیا اور یہ اضافہ دوا کی پیکنگ پر تحریر کرنا ہو گا۔ ڈریپ کے ترجمان نے کہا کہ ملک میں خام مال اور بجلی و گیس کی قیمتوں میں اضافے کے باعث ادویات کی قیمتوں میں اضافہ مجبوراً کرنا پڑا ہے ، تمام سٹیک ہولڈرز کے ساتھ مشاورت کے بعد اس نتیجے پر پہنچے کہ ملک میں ادویات کی دستیابی، نئی انوسٹمنٹ اور فارماسیوٹیکل صنعت کے فروغ کے لیے قیمتوں میں 9 اور15 فیصد اضافہ کیا جائے ۔ اس مقصد کے لیے وزارت نیشنل ہیلتھ سروسز کی ضروری کارروائی کے بعد وفاقی حکومت کی منظوری سے ادویات کی قیمتوں میں اضافے کا نوٹیفکیشن جاری کیا گیا ہے ۔ ترجمان نے واضح کیا کہ ادارہ ادویات کے معیار اور ان کی مناسب قیمت پر دستیابی کے لیے کوشاں رہے گا اور اس اضافے کے باوجود پاکستان میں ادویات کی قیمتیں بین الا قوامی اور علاقائی سطح پر قیمتوں سے کم رہیں گی۔دریں اثناء ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن پنجاب ادویات کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف سراپا احتجاج ہیں۔تبدیلی حکومت ادویات میں اضافہ فی الفور واپس لیتے ہوئے ذمہ داران کے خلاف کارروائی کرے ۔وائی ڈی اے پنجاب غریب مریضوں کے لیے مفت علاج و ادویات کا مطالبہ کرتے ہیں۔ ڈاکٹر معروف وینس، ڈاکٹر عاطف چوہدری، ڈاکٹر سلمان حسیب نے کہا کہ وزیر اعلی ٰپنجاب سے مطالبہ کرتے ہیں کہ ہسپتالوں میں ادویات نہ ہونے کے باعث ڈاکٹرز کو معطل کرنے کی بجائے اپنی حکومت کی ناکامیوں پر کارروائی کریں۔وزیر صحت اور ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی ادویات کی قیمتوں میں کمی کریں۔ علاوہ ازیں فارماسوٹیکل اندسٹریز کے دباو پرادویات کی من مانی قیمتوں میں اضافے کے لئے جہاں مارکیٹ میں ضروری ادویات کی مصنوعی قلت پیدا کر دی گئی وہاں کتے کے کاٹے کی ویکسین انٹیی ریبیز بھی سرکاری ہسپتالوں میں ناپید ہو گئی ہے ۔ جس کی وجہ سے ویکسین لگوانے والے مریضوں کو سخت دشواری کا سامنا ہے ۔ذرائع کے مطابق کسی بھی اس نوعیت کے مریض کو ویکسین کی ایک خوراک دے کر اس کی زندگی بچائی جا سکتی ہے ۔