اسلام آباد(خصوصی نیوز رپورٹر)آل پاکستان سی این جی ایسوسی ایشن کے مرکزی رہنما غیاث عبداﷲ پراچہ نے کہا ہے کہ بجٹ میں سی این جی شعبہ کے لئے درآمد کی جانے والی ایل این جی پر کسٹم ڈیوٹی لگانے کی تجویز واپس لی جائے کیونکہ اس سے ماحول دوست ایندھن کی قیمت میں ساڑھے پانچ روپے سے چھ روپے فی لیٹر کا ناقابل برداشت اضافہ ہو جائے گا۔قیمت بڑھنے سے ٹرانسپورٹ کے کرائے اور پٹرول کا استعمال بڑھ جائے گا جس سے ماحول متاثر اور آئل امپورٹ بل بڑھے گا۔ غیاث پراچہ نے اے پی سی این جی اے کی کورکمیٹی کے ہنگامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے بجٹ میں ایل این جی کی درامد پر پانچ فیصد کسٹم ڈیوٹی عائد کرنے اور دس فیصد فیڈرل ایکسائیز ڈیوٹی عائد کرنے کی تجویز دی ہے جس سے ایل این جی کی قیمت میں چھ روپے فی لیٹرتک کا اضافہ ہو جائے گا جس سے سی این جی مالکان کے مسائل بڑھ جائیں گے ۔ سی این جی سیکٹر ٹیکس ادا کرنا چاہتا ہے تاہم ودھولڈنگ ٹیکس اور سیلز ٹیکس کے فارمولے سے اختلاف ہے ۔