وزارت داخلہ نے حکام کو چینی شہریوں کو بم و بلٹ پروف گاڑیاں استعمال کرنے کی ہدایت کر دی ہے۔روزنامہ 92نیوز کے مطابق امن و امان اور سکیورٹی سے متعلق اجلاس کے دوران تمام غیر ملکیوں کے ساتھ ڈیوٹی کرنیوالے سٹاف کا سکیورٹی آڈٹ کروایا جائے گا اور سیف سٹی کے سی سی ٹی وی کیمروں کے ذریعے غیر ملکیوں کی آمدورفت کی نگرانی کی جائے گی۔اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ چینی شہریوں پر پے درپے کئی حملے ہو چکے ہیں ،جس بنا پر انھیں جان سے ہاتھ دھونے پڑے ہیں ،پاکستان اور اور چین کے درمیان دوستانہ تعلقات ہیں ،دونوں دکھ سکھ میں ایک دوسرے کے ساتھی ہیں لیکن دونوں ممالک کا مشترکہ دشمن امن و امان کی صورتحال خراب کرنے اور دونوں دوستوں کے درمیان دوری پیدا کرنے کے لیے آئے روز حملے کرتا ہے ،ان حملوں کا مقصد چینی حکام کو پاکستان سے دور کرنااور پاکستان میں سی پیک سمیت دیگر منصوبوں پر کام رکوانا ہے ۔لیکن حکومت پاکستان نے اب دشمن کی ان سازشوں کا توڑ کرتے ہوئے چینی شہریوں کو صرف بم اور بلٹ پروف گاڑیوں میں سفر کرنے کی اجازت دی ہے اور اس کے ساتھ ٹائم بھی مقرر کر دیئے ہیں تاکہ رات کے وقت کوئی بھی چینی شہری سفر نہ کرے ،اس کا مقصد چینی شہریوں کی جان و مال کی حفاظت کو یقینی بنانا ہے ۔اب سوال یہ پید اہوتا ہے کہ سفری اخراجات کون پورے کرے گا ؟ اس سلسلے میں حکام کا کہناہے کہ اخراجات منصوبے میں شامل ہوں گے ۔