اسلام آباد(سپیشل رپورٹر،خصوصی نیوز رپورٹر،لیڈی رپورٹر) وزیراعظم عمران خان نے نوجوانوں کو نئی مہارتوں سے روشناس کرنے اور ہنرمند افرادی قوت کے فروغ کیلئے ورلڈ اکنامک فورم کی شراکت داری سے پاکستان میں نیشنل ایکسلیٹر آن کلوزنگ دی سکلز گیپ منصوبہ کے قیام کا اعلان کیا ہے ۔ وزیراعظم عمران خان سے ورلڈ اکنامک فورم کے صدر بروج برینڈ نے ملاقات کی۔ وزیر تعلیم و تربیت شفقت محمود، مشیر تجارت عبدالرزاق داؤد، مشیر ماحولیاتی تبدیلی امین اسلم، مشیر برائے ادارہ جاتی اصلاحات ڈاکٹر عشرت حسین اور سیکرٹری خارجہ سہیل محمود بھی موجود تھے ۔دریں اثناصدر عالمی اقتصادی فورم بروجِ برینڈنے مشیرتجارت عبدالرزاق دائود، معاون خصوصی برائے پٹرولیم ندیم بابر،مشیربرائے ماحولیاتی تبدیلی ملک امین اسلم سے الگ الگ ملاقاتیں کیں۔ مشیرتجارت اور بروج برینڈکی ملاقات میں پاکستان میں تجارت اور باہمی دلچسپی کے شعبوں کے بارے میں تبادلہ خیال کیا گیا۔ عالمی اقتصادی فورم کے سربراہ نے پاکستان پر زور دیا کہ وہ قابل تجدید توانائی میں بدلتے ہوئے رجحانات سے فائدہ اٹھائے اور قابل تجدید توانائی کے شعبے میں سرمایہ کاری لائے ۔ معاونِ خصوصی برائے پٹرولیم اور صدر عالمی اقتصادی فورم کی ملاقات میں قابلِ تجدید انرجی پالیسی، انرجی سیونگ اور پیداوار پر گفتگو کی گئی۔ملک امین اسلم اوربروج برینڈکی ملاقات میں صدر عالمی اقتصادی فورم نے عالمی موسمیاتی تبدیلیوں کے حوالے سے حکومتی کاوشوں کو سراہااوربلین ٹری سونامی منصوبے کی تعریف کی۔قبل ازیں ایک تقریب سے خطاب میں صدرعالمی اقتصادی فورم نے کہا کہ پاکستانی معیشت، سلامتی اور توانائی شعبے میں بہتری آئی ہے اور وزیراعظم عمران خان تبدیلی لا رہے ہیں۔ گزشتہ دورے پر آیا تو پاکستان کو لوڈ شیڈنگ کا سامنا تھا، اگرچہ اب بھی پاکستان کو چیلنجز درپیش ہیں تاہم سکیورٹی کی صورتحال اور توانائی کے شعبے میں بہتری آئی۔ حکومت، سول سوسائٹی اور نجی شعبے کے ساتھ مل کر کام کرنا چاہتے ہیں، پاکستان میں سرخ فیتے کے مسائل بھی حل کرنے کی ضرورت ہے ، ٹیکس نیٹ میں اضافہ بہت ضروری ہے ۔