لاہور(جوادآراعوان)پاکستان اور چین نے دونوں ممالک کے ٹاپ انٹیلی جنس اداروں کے درمیان خطے کی سکیورٹی اور سی پیک کے تناظر میں معلومات کے تبادلے کو مزید بڑھانے پر بات چیت کی اور قابل عمل خفیہ معلومات کے تبادلے کو اگلے لیول پر لے جانے پراتفاق کیا ہے ۔اعلیٰ حکومتی آفیشلز نے روزنامہ 92نیوز کو بتایا کہ پاکستان اور چین کے پریمیئر انٹیلی جنس اداروں کے درمیان اپنے مشترکہ مفادات کے خلاف آپریٹ کرنے والی انٹیلی جنس ایجنسیوں کے آفینسو آپریشنز سے متعلق قابل عمل خفیہ معلومات کے تبادلے کو اگلے لیول پر لے جانے کے لئے اتفاق کیا گیا،جبکہ سی پیک کی پروٹیکشن کے حوالے سے ’’جنرل اور سپیسیفک انٹیلی جنس انفارمیشن‘‘ کی شیئرنگ کو مزید بڑھانے پر بھی اتفاق کیا،وزیراعظم کے دورہ چین کی سائیڈ لائنز پر دونوں ممالک کے ٹاپ انٹیلی جنس آفیشلز نے بھی ملاقاتیں کیں اور انٹیلی جنس ایریا میں تعاون کو مزید بڑھانے پر اتفاق کیا،وزیر اعظم کے دورہ چین میں ڈی جی آئی ایس آئی بھی شامل تھے ،جبکہ چائنیز سٹیٹ سکیورٹی کے چیف بھی شامل تھے ،سی پیک کے حوالے سے جہاں چین کے سکیورٹی آپریٹس کو ایک مرتبہ پھر بتایا گیا کہ پاکستان نے اس ملٹی بلین پراجیکٹ کے لئے سپیشل سکیورٹی ڈویژن بھی بنا رکھا ہے ، وہیں اس بات پر زور دیا گیا اور اتفاق کیا گیا کہ دونوں ممالک کے پریمیئر انٹیلی جنس ادارے خطے میں اپنے اس مشترکہ مفاد کے پراجیکٹ کی سکیورٹی کے معاملات کے دائرے کو مزید بڑھائیں گے ،اسکے ساتھ پاکستان اور چین کے مفادات کے خلاف دہشتگردی میں ملوث گروپس سے نمٹنے کے لئے جوائنٹ پلاننگ پر بھی بات چیت ہوئی ،دونوں ممالک کے مشترکہ مفاد سی پیک کے خلاف دہشتگرد کارروائیاں افغانستان اور ایران کے بارڈر ایریاز سے لانچ کی جاتی ہیں۔