اسلام آباد(سہیل اقبال بھٹی)وفاقی حکومت نے سٹیٹ بینک آف پاکستان اور دیگر بینکوں سے مشاورت کے نتیجے میں4 ماہ بعد ملک بھر کے نو جوانوں کو آسان شرائط پر قرض فراہم کرنے کیلئے وزیراعظم کے کامیاب جوان پروگرام کے نام اور شرائط تبدیل کردی ہیں۔پروگرام کا نیا نام وزیراعظم کی کامیاب جوان یوتھ انٹرپنیورشپ سکیم رکھ دیا گیا۔ قرض کے حصول کیلئے فارم کی فیس 100روپے مقرر کردی گئی ہے ۔ بینکوں کی برانچز اور انکی ویب سائٹس پر فارم کی فراہمی منسوخ اور درخواست پر عملدرآمد کا دورانیہ 15دن سے بڑھا کر 30دن کردیا گیا ہے ۔ قرض کے حصول کیلئے فارم صرف کامیاب جوان پورٹل پر دستیاب ہو نگے ۔وزیراعظم آفس نے سٹیٹ بینک اور دیگر بینکوں سے مشاورت کے بعد شرائط تبدیل کیں۔92نیوز کوموصول سرکاری دستاویز کے مطابق چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروبار کیلئے قرض دینے کیلئے وزیر اعظم کامیا ب جوان پروگرام کو سٹیٹ بینک، نیشنل بینک،بینک آف پنجاب،بینک آف خیبر کی مشاورت سے تیار کیا گیا جس کی وفاقی کابینہ نے 21مئی2019ئکے اجلاس میں پروگرام شرائط وضوابط کی منظوری دی تھی۔ پروگرام کی منظوری کے بعد سٹیٹ بینک سمیت دیگر بینکوں اور وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی کی جانب سے کئی آراء موصول ہوئیں جس کے بعد ایک مرتبہ پھر وزیرا عظم آفس نے سٹیٹ بینک، نیشنل بینک،بینک آف پنجاب،بینک آف خیبراور سمال اینڈ میڈیم انٹرپرائزز ڈیویلپمنٹ اتھارٹی (سمیڈا) سے مشاورت کرکے شرائط وضوابط پر نظرثانی کی۔ جوانوں کیلئے قرض پروگرام کا نام وزیر اعظم کامیاب جوان ایس ایم ای لینڈنگ پروگرام رکھا گیا تھا جسے اب تبدیل کرکے وزیر اعظم کامیاب جوان یوتھ انٹریپرینیورشپ سکیم رکھنے کی منظوری دیدی گئی ہے ۔ 21مئی کومنظورشدہ شرائط وضوابط کے تحت فارم بینکوں کی برانچو ں اور ان کی ویب سائٹ پر دستیاب ہونا تھا مگر نگرانی کے عمل کو مؤثر بنانے کیلئے اب یہ درخواست فارم کامیاب جوان پورٹل پر دستیاب ہوگا۔پورٹل کے ذریعے درخواست گزا ر براہ راست متعلقہ بینکوں میں درخواست جع کرا سکیں گے ۔پورٹل کو نیشنل انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ کے ذریعے کنٹرول کیا جائیگا۔صرف متعلقہ افراد کو پورٹل تک رسائی دی جائیگی جن میں درخواست گزار،درخواست وصول کرنے والے بینک،رہنمائی کیلئے سمیڈا، اور وزیر اعظم یوتھ آفس کو پورٹل تک رسائی ہوگی۔ آزاد آئی ٹی ماہرین سے پورٹل کا سالانہ آڈٹ کروانے بھی کروایا جائیگا۔وفاقی حکومت نے بے روزگاری کے خاتمے اور کاروباری مواقعوں کے فروغ کیلئے قرض کے اجراء کو آسان اورانتہائی کم وقت ادارہ جاتی عمل مکمل کرنے کی ہدایت کی تھی جس کے تحت قرض کی درخواست پر عملدر آمد کی مدت 15دن مقرر کیا گیا تھا مگر اب یہ مدت 30دن کر دی گئی ہے ۔ فارم جمع کرانے کی فیس ناقابل واپسی 100روپے مقرر کردی گئی ہے ۔ قرض پروگرام کے تحت1 لاکھ 38ہزار نوجوان فائدہ اٹھا سکیں گے ۔پروگرام کے تحت کل رقم 200ارب روپے ہو گی اور یہ پروگرام5 سال کیلئے ہو گا۔جس کے تحت 10 لاکھ کے قریب پاکستانی نوجوانوں کو روزگار کے مواقع میسر آئینگے ۔وزیر اعظم کے کامیاب نوجوان پروگرام کے تحت 20لاکھ ملازمتوں کے ٹارگٹ کو پورا کرنے میں مدد ملے گی جس کی وزیر اعظم نے نیشنل فنانشل انکلوژن سٹریٹجی کے تحت منظوری دی تھی۔پہلے سال کے دوران 60 کروڑ جب کہ دوسرے سال کے دوران 3.8ارب روپے حکومت کی جانب سے مارک اپ سبسڈی اور اور کریڈٹ لاس سبسڈی کے تحت مختص کرنے کا تخمینہ لگایا گیا ہے ۔