لاہور، اسلام آباد ( کامرس رپورٹر ،این این آئی) پنجاب سے بلامقابلہ منتخب سینیٹرز کے اثاثوں کی تفصیلات منظر عام پر آگئیں ۔ ن لیگ کے سینیٹر اعظم نذیر تارڑ کی لاہور، مری اور حافظ آباد میں 38 جائیدادوں کی مالیت 9 کروڑ 57 لاکھ روپے ہے ، لندن میں ایک کروڑ 15 لاکھ کا رہائشی فلیٹ بھی ہے ،ان کے 7 پاکستانی بینکوں میں ایک کروڑ 72 لاکھ روپے ، غیر ملکی بینکوں میں 84 ہزار پاؤنڈ اور 9 ہزار 478 امریکی ڈالر ہیں، 3 گاڑیاں، 130 تولے سونا اور 3 لاکھ کا فرنیچر بھی ہے ۔ پی ٹی آئی کے سینیٹر سید علی ظفر کی پاکستان میں 5 کروڑ کی 11 جائیدادیں ، لندن اور دبئی میں جائیدادوں کی مالیت 25 کروڑ روپے ہے ، 7 پاکستانی بینکوں میں 13 کروڑ روپے جبکہ غیر ملکی بینکوں میں 10 کروڑ روپے ہیں، ان کے پاس 3 گاڑیاں اور 15 تولے سونا بھی ہے ۔پی ٹی آئی کی سینیٹر ڈاکٹر زرقا سہروردی کی پاکستان میں 4 جائیدادوں کی مالیت 4 کروڑ 67 لاکھ روپے ، 3 لاکھ کا فرنیچراور بینک میں 61 لاکھ روپے ہیں، دستاویز میں ڈاکٹر زرقا کے پاس گاڑی ہے نہ جیولری۔ ن لیگ کی سینیٹر سعدیہ عباسی 38 کروڑ کی جائیداد کی مالک ہیں۔ ان کے پاس 50 لاکھ نقد، 100تولہ سونا، 3 گاڑیاں اور 3 لاکھ کا فرنیچر بھی ہے ۔ سینیٹر ساجد میر کی ایک کروڑ 40 لاکھ روپے کی 3 جائیدادیں ہیں، کیش 31 لاکھ روپے ، 10 تولہ سونا، 2 لاکھ کا فرنیچر اور بینکوں میں 3 لاکھ روپے ہیں،کوئی گاڑی نہیں۔ ق لیگ کے سینیٹر کامل علی آغا 8 جائیدادوں کے مالک، مالیت ایک کروڑ 50 لاکھ ہے ، ان کا 45 لاکھ کا کاروبار ہے ،ایک گاڑی اور 31 لاکھ روپے کیش ہے ،تین بینکوں میں 88 لاکھ روپے اور 5 لاکھ کا فرنیچر بھی ہے ،پی ٹی آئی کے سینیٹر اعجاز احمد چودھری کے پاس کوئی جائیداد ہے نہ گاڑی، دو بینکوں میں 13 لاکھ روپے ہیں، ان کے پاس 80 تولہ سونا اور ایک لاکھ کا فرنیچر بھی ہے ۔پی ٹی آئی کے سینیٹر سیف اللہ سرور کے پاس 2 گاڑیاں، 30 تولے سونا اور ایک لاکھ 35 ہزار روپے کیش ، 2 مقامات پر 15لاکھ روپے کی جائیدادیں اور بینکوں میں 27 لاکھ روپے ، 30 لاکھ کے کاروباری اثاثے اور 7 لاکھ کا فرنیچر بھی ہے ،پی ٹی آئی کے سینیٹر عون عباس کی دو جائیدادوں کی مالیت 5 کروڑ ، ان کے پاس 295 کنال زرعی اراضی بھی ہے ، کاروباری اثاثوں کی مالیت 40 لاکھ ہے ،ان کے پاس 2 گاڑیاں اور 35 تولے سونا بھی ہے ، 10 لاکھ کا فرنیچر، 54 لاکھ کے زرعی آلات اور جانور بھی ہیں۔