لاہور (نامہ نگار، نمائندہ خصوصی سے ،مانیٹرنگ ڈیسک ) وزیر ریلوے شیخ رشید نے چیئرمین پی اے سی شہباز شریف کے معاملے سپریم کورٹ جانے کا اعلان کر دیا۔ ریلوے ہیڈکوارٹرزآفس لاہور میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عمران خان کو خط لکھوں گا کہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی میں اپنے کسی ممبر کو ڈراپ کر کے مجھے شامل کریں ،مسلم لیگ (ن) کا احتساب کروں گا۔زرداری اور شریف خاندان کا سیاسی مستقبل تاریک ہے ۔ اُن کا کہنا تھا کہ تین بار وزیراعظم رہنے والے شخص کے لئے کوئی نہیں نکلا۔ انہوں نے بلاول کو زرداری سے بچنے کا مشورہ بھی دیا۔شیخ رشید نے کہا کہ جس پر ماڈل ٹاؤن سمیت121 کیسز ہوں کیا وہ قوم کا احتساب کرے گا۔ جب چیخیں آنا شروع ہوں سمجھ جائیں یہ این آر او مانگ رہے ہیں۔ شریف خاندان اور زرداری کی سیاست کو اب نہیں دیکھ رہا۔ انہوں نے اپنے محکمے کی کارکردگی کا ذکر کرتے ہوئے سال کے آخر تک بیس فریٹ ٹرینیں چلانے کا دعوی ٰکیا اور ریل گاڑیوں میں فائیو سٹار ہوٹل جیسی آسائشیں فراہم کر کے کرائے بڑھانے کی خبر بھی سنا دی۔وزیر ریلوے نے کہا ہم نے چوبیس گھنٹے دفتر شروع کیا۔ دوہفتوں میں ریلوے کو 10 کروڑ روپے کی آمدن ہوئی۔شیخ رشید نے کہا روہڑی سٹیشن پر نیا پلیٹ فارم بنانے جارہے ہیں۔ساری توجہ 10 نئی ٹرینوں پر ہے ۔ ہم دو نئی وی وی آئی پی ٹرینیں چلانے جارہے ہیں۔ مدثرشاہ زیدی نے انجنوں میں ٹریکنگ سسٹم لگانے کے لیے ہمیں بالکل مفت دیئے ہیں وہ آج سے انجنوں میں لگنا شروع ہوجائیں گے ۔ فیصلہ کیاہے کہ نئی ٹرینوں میں کھانے اور بستر کی کمپلیمنٹری سروس دیں گے ۔ ایک ہفتے میں بغیر ٹکٹ سفر کرنے والوں سے تین کروڑ روپے وصولی ہوئی ہے ہم نے پولیس کو بھی آج خودمختار ریڈ ر کے اختیارات دے دیئے ہیں جو اگلے پندرہ دن میں ریلوے سٹیشنوں پر سفرکرنے والے مسافروں سے ٹکٹیں چیک کریں گے جبکہ پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ بورڈ کے دورے کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا ہے کہ نالہ لئی پراجیکٹ پر کمیٹی بنا دی گئی ہے ۔ منی بجٹ پر وزیر خزانہ اسد عمر کے ساتھ تفصیل کے ساتھ بات ہوئی ہے ، حتی الامکان کوشش کر رہے ہیں کہ زیادہ بوجھ عوام پر نہ ڈالا جائے اور اپنی شرائط پر آئی ایم ایف سے قرض حاصل کریں ۔