BN









کالم


آج کے کالم 


  


کالم آرکیو


دہشت گردی کا ناسور

هفته 24  ستمبر 2022ء
ظہور دھریجہ
دہشت گردی کے پیچھے ایک گہری سازش ہے۔ جس کا ایک ہی مقصد ہے کہ ڈی آئی خان، ٹانک کے مقامی لوگوں بکو مجبور کر دیا جائے کہ وہ نقل مکانی کر جائیں اور دریائے سندھ کے اس ذرخیز خطے پر باہر سے آنیوالے لوگوں کا قبضہ ہو جائے۔ میں بار بار لکھتا آرہا ہوں کہ ان علاقوں کے مسائل پر توجہ کی ضرورت ہے۔ یہ حقیقت ہے کہ ان اضلاع کے لوگوں کو صوبائی حکومت سے بہت سی شکایات ہیں اور لوگوں کو یہ بھی شکایت ہے کہ اچھی بات ہے کہ وزیر اعظم شہبا زشریف پچھلے دنوں
مزید پڑھیے


سیلاب سے اٹھتی آواز یں!!

هفته 24  ستمبر 2022ء
سرور باری
سیلاب سے متاثرہ لوگوں کی ایک بڑی اکثریت ریاستی اداروں اور حکمران جماعتوں کی کارکردگی سے نالاں ہے۔ تاہم، ابتدائی سماجی رشتے ؛جیسے عزیزو اقارت ، دوستوں اور پڑوسیوں نے سیلاب زدگان کیساتھ سب سے زیادہ ہمدردی کا مظاہرہ کیا ہے۔ اس حوالے سے انہوں نے بہت عمدہ کردار ادا کیا لیکن انتہائی خاموشی کی ساتھ۔ سیلاب زدہ علاقوں میں پتن تنظیم کے تازہ ترین جائزہ سروے کے دوران یہ بنیادی نکات سامنے آئے ہیں۔ گیارہ سے پندرہ ستمبر کے دوران مقامی کارکنوں کے ذریعے تین صوبوں کے 14 اضلاع کے 38 آفت زدہ علاقوں میں کئے گئے پتن
مزید پڑھیے


ٹرانسفارمر اتارنے میں بائیس سال لگ گئے

هفته 24  ستمبر 2022ء
آصف محمود
ایک خبر یہ ہے کہ گھر کے باہر لگے ٹرانسفارمر کو ہٹوانے کے لیے ایک شہری کو بیس سال قانونی جدوجہد کرنا پڑی اور تب جا کر اس کے حق میں فیصلہ آیا۔بظاہر یہ ایک خبر ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ برطانوی نو آبادیات کے تحت قائم کیے گئے اس افسر شاہی اور قانونی نظام کا نوحہ ہے جسے قائد اعظم نے بدلنے کا فیصلہ کیا تھا اور اس کی جگہ بتدریج اپنا مقامی نظام قانون لایا جانا تھا جو اسلامی اصولوں سے مزین ہوتا لیکن ان کے انتقال کے بعد کسی کو یاد ہی نہ رہا کہ اس
مزید پڑھیے


نئی حکومت

هفته 24  ستمبر 2022ء
ڈاکٹر جام سجاد
صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے کچھ عرصہ قبل ایک ٹوئیٹ کے ذریعے نئی حکومت کے قیام کی خواہش کا اظہا ر کیا تھا۔انہوں نے کہا کہ جمہوریت کو مفاد پرست ٹولہ کے ہاتھوں یرغمال بنانے کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔ بادیِ النظر میں نئی حکومت کے قیام کا مطلب ان کی معاونت سے دوبارہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت لیا جارہا ہے۔اس وقت پاکستان دیوالیہ ہونے کے دھانے پر کھڑا ہے۔ معاشی بدحالی کا اندازہ لگانا مشکل ہے۔ ڈالر 240 روپے کا ہوگیا ہے۔جبکہ سری لنکا تب دیوالیہ ہوگیا تھا جب ڈالر نے 200کے
مزید پڑھیے


بن میرے شاید آپ کی پہچان بھی نہ ہو

هفته 24  ستمبر 2022ء
سعد الله شاہ
سوچا ہے اب کے بار تجھے چھوڑ دیں گے ہم گویا کہ اپنے آپ سے بدلہ بھی لیں گے ہم مشکل سہی یہ تجربہ لیکن کریں گے ہم تنہائیوں کو اوڑھ کے زندہ رہیں گے ہم سوچا کہ آج خوشگوار آغاز کیا جائے کہ ملکی معاملات تو بڑے گھمبیر ہیں۔اس لئے ایک رومانوی سی فضا میں ہم چلے گئے۔ یادوں میں تیری شام کو نکلیں گے باغ میں راتوں کو تیری یاد میں گھوما کریں گے ہم ۔ ہم بھی اناپرست ہیں بس ٹوٹ جائیں گے لیکن زبان سے نہ کبھی اف کریں گے ہم کچھ بھی نہیں ہے بات تو پھر ختم کیجیے۔کچھ
مزید پڑھیے


پاکستان کا المیہ!

هفته 24  ستمبر 2022ء
احمد جمال نظامی
ناجانے کب سحر ہوگی! ناجانے کب؟ اک نسل اس امید میں بجھ گئی‘دوسری تگ ودوکے مرحلے میں کبھی داخل تو کبھی نا امیدی کی رسم کفر کا شکار ہوجاتی ہے‘کیوں نہ ہو؟ اس کا مقابلہ براہ راست مافیا سے ہے۔بیورو کریسی سے لیکر اشرافیہ اور حکمران اشرافیہ کیا کسی مافیا سے کم ہیں؟ اس سوال کا جواب تلاش کرتے عام آدمی کے 75سال بیت گئے‘اس دوران کئی لیڈر ابھرے‘انہوں نے امیدسحر دکھائی‘ خواب کو حقیقت کا روپ دینے کے متلاشی پروانوں کی مانند ان کے پیچھے چل دئیے مگر کہیں کچھ تبدیل نہ ہوسکا۔پاکستان کا سب سے بڑا المیہ یہی
مزید پڑھیے


کابل کہانی: حکمت یار سے ملاقات

هفته 24  ستمبر 2022ء
محمد عامر خاکوانی
کتابوں سے آراستہ ایک ہال میں ہم آٹھ دس صحافی بیٹھے افغانستان کے ممتاز گوریلا کمانڈر اور رہنما گلبدین حکمت یارکا انتظار کر رہے تھے۔ کابل کے جس علاقہ میں ان کا وسیع وعریض مگر سادہ گھر واقع ہے، وہاں پہنچنے سے پہلے چوک اور دیواروں پر حکمت یار کی تصویریں اور تعریف آمیز فقرے لکھے نظر آنے لگے۔کابل میں یہ بات نوٹ کی کہ وال چاکنگ کابڑے منظم اور بھرپور انداز میںاستعمال کیا جاتا ہے۔ شائد ہی کسی ملک میں ایسا دیکھا ہو کہ حکومت اور انتظامیہ اپنے مختلف اعلانات اور پبلک سروس میسجز کے لئے اتنے زور شور
مزید پڑھیے


پنجاب: بھرتیوں پر پابندی اٹھانے کا مستحسن فیصلہ!

هفته 24  ستمبر 2022ء
اداریہ
وزیر اعلیٰ پنجاب چودھری پرویز الٰہی نے صوبے بھر میں بھرتیوں پر پابندی ختم کرکے درجہ چہارم کی 16ہزار پوسٹوں پر بھرتی کی اجازت دے دی ہے۔ ایک رپورٹ کے مطابق پنجاب میں صرف محکمہ تعلیم میں 60ہزار آسامیاں خالی ہیں، جس کی وجہ سے سرکاری سکولوں میں خاص طور پر سائنس مضامین پڑھانے والے ٹیچرز کی شدید کمی ہے۔ اس طرح محکمہ زراعت میں 11ہزار منظور شدہ سیٹوں پر عرصہ دراز سے بھرتی نہیں ہو سکی۔ سرکاری اداروں میں بھرتی پر مسلسل پابندی سے نہ صرف اداروں کی کارکردگی شدید متاثر ہو رہی ہے بلکہ عوام کو بھی شدید
مزید پڑھیے


ڈالر کی قیمت میں مسلسل اضافہ

هفته 24  ستمبر 2022ء
اداریہ
فاریکس رپورٹ کے مطابق انٹر بنک میں ڈالر جمعرات کو مسلسل اضافے کے بعد 240 روپے 25 پیسے میں فروخت ہوا۔موجودہ حکومت نے جب سے اقتدار سنبھالا ہے، ڈالر سنبھلنے کا نام ہی نہیں لے رہا۔ جب سے حکومت آئی تو ڈالر 178روپے کا تھا جو اب 240روپے سے تجاوز کر چکا ہے حکومت کی طرف سے عوام کو یقین دہانی کروائی جاتی رہی کہ آئی ایم ایف سے ڈیل کے بعد روپیہ مستحکم ہو جائے گا، جبکہ عالمی مالیاتی ادارے سے معاہدے کے بعد بھی ڈالر کی قیمت میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔ ماہرین اقتصادیات ڈالر کے بے
مزید پڑھیے


موسمیاتی تبدیلی کے ذمہ دار نقصان کا ازالہ کریں

هفته 24  ستمبر 2022ء
اداریہ
وزیراعظم شہباز شریف نے بلومبرگ کو خصوصی انٹرویو کے دوران کہا ہے کہ سیلاب کے باعث ملک کا ایک تہائی حصہ ڈوب گیا ہے، موسمیاتی تبدیلی کے باعث سیلاب سے لاکھوں لوگ بے گھر ہوئے ہیں،اپنے وسائل سے متاثرین کی مدد نہیں کر سکتے ،اس سلسلے میں دنیا کو ساتھ دینا ہو گا ۔دوسری جانب وزیر خارجہ بلاول بھٹو نے کہا ہے کہ عالمی برادری سے بھیک یا قرض نہیں مانگتے صرف انصاف چاہتے ہیں ۔ اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ پاکستان میں ہونی والی حالیہ سیلاب سے تباہی کسی صرف آفاقی آفت کا نتیجہ نہیں بلکہ عالمی برادری
مزید پڑھیے


مفتاح صاحب!آزاد کشمیر کے ساتھ یہ سلوک کیوں؟

هفته 24  ستمبر 2022ء
اسداللہ خان

سیاست بے رحم ہے، اتنی بے رحم کے ریاست کے مفادات کو نقصان پہنچانے سے بھی نہیں ہچکچاتی۔اپنی تختی لگانے اور دوسرے کی تختی کو روکنے کی خواہش میں یہاں کئی مرتبہ نوے فیصد مکمل منصوبوں کو بھی ادھورا چھوڑ دیا گیا کہ کہیں فریق مخالف کی تختی آویزاں نہ ہو جائے یا اسے اس کا کریڈیٹ نہ مل جائے ۔ سیاست کے لئے عوام کو نقصان پہنچانے کا چلن تو عام ہے مگر اپنے سیاسی مفادات کے لیے ریاست کو نقصان پہنچانا کہاں کی حب الوطنی ہے۔ اہلیانِ آزاد کشمیر آجکل روتے نظر آتے ہیں ۔ تبھی وہ ہمیشہ
مزید پڑھیے


کبھی خوشی، کبھی غم۔ مرتضی بھٹو کی یاد میں

هفته 24  ستمبر 2022ء
سہیل دانش

یہ 19 ستمبر 1996ء کا دن تھا۔ جب بینظیر بھٹو بہت خوش تھیں۔ ملک کی وزیراعظم کیلئے یہ خوشی بہت ہی کم وقتی رہی۔ محض چند گھنٹے۔ یہ وہ دور تھا جب سب اس سوال کا جواب تلاش کرنے میں مصروف تھے کہ آخر کیا وجہ ہے کہ بینظیر بھٹو اور مرتضی بھٹو میں اختلاف کی خلیج ختم نہیں ہوپا رہی۔ بینظیر بھٹو ملک کی وزیراعظم تھیں اور بھائی ایک الگ سیاسی شناخت بناکر انتظامیہ کے کردار پر نالاں دکھائی دے رہا تھا۔ سابق وزیراعظم ذوالفقار علی بھٹو کے صاحبزادے میر مرتضیٰ کی زندگی 18 ستمبر اور 20 ستمبر 2
مزید پڑھیے


منزل انہیں ملی جو شریک سفر نہ تھے

جمعه 23  ستمبر 2022ء
ظہور دھریجہ
منزل انہیں ملی جو شریک سفر نہ تھے کے مصداق تحریک آزادی کیلئے قربانیاں دینے والے مشاہیر کا نام آج بھی نصاب کی کتابوں میں نہیں ہے جبکہ حریت پسندوں کے قاتلوں کی اولادیں ایوانوں میں مسلسل موجود نظر آ رہی ہیں۔ جھوک سرائیکی ملتان کی طرف سے منعقد کی گئی رائے احمد خان کھرل کانفرنس میں پروفیسر ڈاکٹر مقبول حسن گیلانی نے کہا کہ آج عمران خان سمیت سب لوگ آزادی کی بات کرتے ہیں اور کہتے ہیں کہ ہم عوام کو حقیقی آزادی دلائیں گے جبکہ ان تمام جماعتوں میں ان لوگوں کی اولادیں موجود ہیں جنہوں نے
مزید پڑھیے


مال روڈ کی کہانی……(2)

جمعه 23  ستمبر 2022ء
اشرف شریف
زمزمہ کو 1761ء میں پانی پت کی جنگ میں استعمال کیا گیا۔اس توپ کے متعلق بہت سی کہانیاں مشہور تھیں کہ جس کے پاس یہ ہو وہ لڑائی جیت جاتا ہے۔انگریز سے پہلے یہ توپ بھنگی مثل کے پاس رہی اس وجہ سے اسے بھنگیوں کی توپ بھی کہتے ہیں۔1870ء کے عشرے میں مال روڈ پر عجائب گھر کی بغل میں میو سکول آف انڈسٹریل آرٹ قائم کیا گیا۔جہاں آرٹ سکول تعمیر ہوا یہاں مغل اور سکھ عہد مین ایک باغ تھا۔یہ سکول آج این سی اے کے نام سے مشہور ہے۔1877ء میں گورنمنٹ کالج کی موجودہ عمارت مکمل
مزید پڑھیے


کون عافیہ۔۔؟؟

جمعه 23  ستمبر 2022ء
سعدیہ قریشی
دوہزار بائیس کے اسی ستمبر کے تیسرے ہفتے کا کوئی دن تھا۔ مسز شارلین کیکورا صبح ساڑھے تین بجے فون کی گھنٹی بجنے سے گہری نیند سے بیدار ہوتی ہیں، فون ہر ہیلو کہتی ہیں تو دوسری طرف لائن پر۔ کوئی اور نہیں امریکی صدر جو بائیڈن ہیں جو مسز شارلین کو خوشخبری دیتے ہیں آپ کے بھائی کی رہائی کی کوششیں کامیاب ہوچکیں وہ جلد آپ سے آن ملے گا۔اگلے دو دن امریکی میڈیا میں مسز شارلین کے ایکسکلوزیو انٹرویوز اور سٹوریز چلنے لگتی ہیں۔کہانی کیا ہے اس کے پس منظر میں جھانکتے ہیں۔چند دن پہلے عالمی میڈیا میں
مزید پڑھیے