BN

کالم



آج کے کالم 


  


کالم آرکیو



پیار کا پہلا خط

جمعرات 05 دسمبر 2019ء
سجا د جہانیہ
پہلی ملاقات کی ایک جھجھک ہوتی ہے اوراگر ملاقات ایسی ہو کہ جس میں شوق و نیاز کی کرم فرمائی بھی ہو تو انسان کچھ سِوا ہی تیاری کرتا ہے۔ یہ تو رہی روبہ رو ملاقات، آدھی ملاقات بھی اگر پہلی ہو تو اس کا اہتمام بھی کچھ کم نہیں ہوتا۔ میری عمر کے لوگ وہ زمانہ جانتے ہیں کہ جب خط کو آدھی ملاقات کہا جاتا تھا۔ احباب کو، اقرباء کو‘ اپنے پیاروں کو خط لکھے جاتے اور نامۂ شوق کا تو خیر اہتمام ہی کچھ جدا ہوتا۔ شاعر نے کہا تھا۔ پیار کا پہلا خط لکھنے میں وقت تو
مزید پڑھیے


کتنے گریباں چاک ہوں گے

جمعرات 05 دسمبر 2019ء
اشرف شریف
موسم بدلا رت گدرائی اہل جنوں بے باک ہوئے ظہیر کاشمیری کی یہ غزل تو موسم بہار کی آمد کا مضمون باندھتی ہے لیکن مجھے لگتا ہے کہ دس ماہ گرمی کی لپیٹ میں رہنے والے ہم لوگوں کے لیے سردیاں وہی لطف لاتی ہیں کہ جنون میں بے باک ہونے کو جی چاہتا ہے۔ اس بے باکی کے ساتھ ہوش ضروری ہے وگرنہ خواہ مخواہ جی چاہے گا کہ اس تصفیے کی حقیقت جانی جائے جس کے نتیجے میں پاکستان کو بیٹھے بٹھائے 38ارب روپے مل گئے۔ کسی کی جیب سے اتنی بڑی رقم نکلی ہے تو معاملہ ایسا سادہ تو
مزید پڑھیے


بچوں سے مکالمہ کیجیے

جمعرات 05 دسمبر 2019ء
آصف محمود
میں تو ایشیاء کو سبز کرنے کے دعووں سے بھی پناہ مانگتا ہوں کہ وہ مذہب کی آڑ میں فسطائیت مسلط کرنے کی کوشش ہے تو میں اس ترانے پر کیسے سر دھن سکتا ہوں کہ جب لال لال لہرائے گا پھر ہوش ٹھکانے آئے گا۔ انتہائی بچگانہ اور مجہول قسم کا نعرہ ہے جس کے گانے والوں کی اکثریت کو خود نہیں معلوم، شدت جذبات میںوہ کس کس کے ہاتھوں استعمال ہو رہے ہیں۔ میرے جیسوں کا ہوش البتہ بہت پہلے ہی ٹھکانے آ چکا ہے کہ ان خوش کن نعروں کی کوئی حیثیت نہیں ہوتی اور ان
مزید پڑھیے


نوجوانوں کا مسئلہ اور مقتدر اشرافیہ کے مفادات

جمعرات 05 دسمبر 2019ء
محمد عامر رانا
ہمارے ہاں ’’سیاست‘‘ کا لفظ ایک گالی کی سی حیثیت اختیار کرچکا ہے اور اس کوچہِ خراباں میں نوجوانوں کا قدم دھرنا معیوب سمجھا جاتا ہے۔ تاہم کچھ عرصہ سے پاکستان میں یہ تصور پنپ رہا ہے کہ مقتدر اشرافیہ ملک میں سیاسی سماج کی تشکیل پر یقین رکھتی ہے اور اس مقصد کے لیے وہ نوجوانوں کو متحرک کرنے اور ان میں بیداریِ شعورپیدا کرنے پر مائل نظرآتی ہے۔ دوسری طرف یہ رائے بھی سامنے آتی ہے کہ یہ سچ ادھورا ہے، مقتدر اشرافیہ سیاست پر یقین ضرور رکھتی ہے لیکن وہ اسے مخصوص طبقات تک محدود رکھنا چاہتی
مزید پڑھیے


مغرب کی علم دشمنی کی روایت کا تسلسل (آخری قسط)

جمعرات 05 دسمبر 2019ء
اوریا مقبول جان
گلیلیو کے مقدمے اور جیل خانے میں موت، دراصل قدیم رومن اور یونانی مذہبی نظریات کے ٹکرائو کی وجہ سے ہوئی۔ یہ ایسے نظریات تھے جنہیں پادریوں نے عیسائی مذہب کا حصہ بنا لیا اور پھر اس پر ڈٹ گئے۔ بائبل کی تعلیمات سے الگ تھلگ یہ ایک مذہبی سائنسی فکر تھی جو پادریوں کی زبان پر جاری تھی۔ جیسے ارسطو کا نظریہ کہ ’’سورج ساکن اور زمین چپٹی ہے‘‘ ایسی سائنس کو الہامی اشیر باد دینے کا مقصد صرف یہ تھا کہ ہر سائنسی تصور کو مذہب کی پیش گوئیوں سے منسلک کر دیا جائے۔ ایسے میں جب کوئی
مزید پڑھیے


سخت کوشی سے ہے جامِ زندگانی انگبیں

جمعرات 05 دسمبر 2019ء
ہارون الرشید
گل رنگ الفاظ نہیں زندگی ریاضت چاہتی ہے اور پیہم ریاضت۔ عصرِ رواں کا ادراک اور عرق ریزی کی تاب۔ عمل سے زندگی بنتی ہے جنت بھی جہنم بھی/ یہ خاکی اپنی فطرت میں نہ نوری ہے نہ ناری ہے۔ ملک ریاض سے تین سو ملین ڈالر ملنے کی امید کیا پیدا ہوئی، چہار سمت خوابوں کی فصل لہلہانے لگی۔ ہر سراب پھر سے دریا نظر آنے لگا۔ چھوٹی بڑی رنگین سکرینوں پہ، پی ٹی آئی والوں کے پیغامات میں مرکزی نکتہ یہ ہے:یہ پہلی قسط ہے، ہمارے دیوتا کے طفیل سیم و زر کی اب بارش ہوتی
مزید پڑھیے


غیر معیاری بیجوں اور زرعی ادویات کی بھرمار

جمعرات 05 دسمبر 2019ء
اداریہ
پنجاب میں حکومتی عدم توجہی کے بعد مختلف جعلی ادویات و بیج اور کھادوں کی وجہ سے فی ایکڑ پیداوار انتہائی کم ہو گئی۔ کھادیں اور پیسٹی سائیڈ بنانے والی کمپنیاں کسانوں کا خون چوسنے لگی ہیں۔ زراعت ہماری معیشت میں ریڑھ کی ہڈی جیسی حیثیت رکھتی ہے لیکن بدقسمتی سے 72 برس میں آج تک کسی بھی حکومت نے کسانوں کی بہتری کیلئے کوئی بھی منصوبہ پیش نہیں کیا جس کے باعث فی ایکڑ پیداوار میں کافی حد تک کمی واقع ہو چکی ہے۔ کسان مختلف کمپنیوں سے ادویات خریدتے ہیں لیکن یہ ادویات ناقص اور غیرمعیاری ہوتی ہیں
مزید پڑھیے


امریکی میگزین کی کشمیر کے بارے میں چشم کشا رپورٹ

جمعرات 05 دسمبر 2019ء
اداریہ
امریکی میگزین نیویارکر نے اپنی رپورٹ میں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی جارحیت کے حوالے سے چشم کشا انکشاف کرتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ جس دن بھارتی پابندیاں ہٹیں کشمیری مودی کے خلاف پھٹ پڑیں گے۔ بھارتی فوج نے کشمیر کو گزشتہ 121 روز سے دنیا کی سب سے بڑی جیل میں تبدیل کر رکھا ہے۔ کشمیری نہ صرف مسلسل بھارتی فوج کے محاصرہ میں ہیں بلکہ وادی میں ذرائع ابلاغ بشمول سوشل میڈیا اور انٹرنیٹ کی سہولیات بھی معطل ہیں۔ نقل و حمل پر پابندی کے باعث کشمیر میں غذا اور ادویات کی قلت کے باعث انسانی المیہ
مزید پڑھیے


نیب کی جانب سے نئی تحقیقات کا فیصلہ

جمعرات 05 دسمبر 2019ء
اداریہ
نیب نے مسلم لیگ ن کے صدر اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف اور ان کے صاحبزادوں حمزہ اور سلمان شہباز کے اثاثے منجمد کرنے کا حکم دیتے ہوئے ن لیگ کے سابق دور حکومت میں پی ایچ اے کے منصوبوں کی تحقیقات کے لئے کمشن قائم کر دیا ہے۔ سابق وزیراعلیٰ اور ان کے اہل خانہ کے خلاف متعدد معاملات میں بدعنوانی کا جائزہ لیا جا رہا ہے۔ تحقیقات کا آغاز قانونی انداز میں کرکے سیاسی انتقام کے الزامات کو عملی انداز میں نیب نے مسترد کیا ہے۔میرٹ اور شفافیت کے بغیر کوئی ملک ترقی کر
مزید پڑھیے


ہم تیار ہیں!

جمعرات 05 دسمبر 2019ء
سجاد میر
یار برا نہ ماننا کیا یہ طلبہ یونینوں کی بحالی کی تحریک ہے۔ ایسا ہے تو میں ایمان لایا، مگر بہت سے سوالات پیدا ہوتے ہیں۔ پوچھنا تو بنتا ہے اگر یہ طلبہ یونینوں کی بحالی کی تحریک ہے تو مجھے تو بہت خوش ہونا چاہیے کہ میں تو ان تحریکوں کا پروردہ ہوں۔ پاکستان میں جب طلبہ تحریک کا ذکر آتا ہے تو کراچی والوں کا حوالہ دوسرا ہوتا ہے، لاہور کا دوسرا۔ کراچی والے 53 سے آغاز کرتے ہیں۔ اس وقت یہ تحریک بائیں بازو کی تحریک تھی۔ 12 طلبہ شہر بدر ہوئے تھے۔ وہ ساری زندگی اسی
مزید پڑھیے


تاریخی جامع مسجدسری نگر4ماہ سے مقفل!

بدھ 04 دسمبر 2019ء
عبدالرفع رسول
قابض بھارتی فوج نے مداخلت فی الدین کاایک بارپھرارتکاب کرتے ہوئے 5اگست 2019سے کشمیرکی تاریخی جامع مسجد سری نگرکومحاصرے میں لے رکھااورتام دم تحریر18جمعہ مسلسل ہوچکے ہیں کہ مسلمانان کشمیر کو مسجدمیں نمازجمعہ کی ادائیگی سے روک لیاگیاہے اس طرح گذشتہ 4 ماہ سے جامع مسجد سری نگرمیںنمازجمعہ ادانہ ہوسکی۔اسے قبل 2016ء میں بھی جامع مسجدسرنگر اس وقت4ماہ تک مسلسل مقفل رہی کہ جب برہان وانی کی شہادت کے بعد مقبوضہ کشمیرمیں عوامی احتجاجی لہر نے کشمیرپربھارتی ناجائزقبضے اوراسکے جارحانہ تسلط کو مستردکردیا۔خیال رہے جامع مسجد سرینگر کی سخت سے سخت ناکہ بندی کر دی گئی ہے اوراسے
مزید پڑھیے


خاں صاحب!کیا اس کی کسر باقی ہے

بدھ 04 دسمبر 2019ء
سعد الله شاہ
کہنے کو اک الف تھا مگر اب کھلا کہ وہ پہلا مکالمہ تھا مرا زندگی کے ساتھ اپنا تو اصل زر سے بھی نقصان بڑھ گیا سچ مچ کا عشق مر گیا اک دل لگی کے ساتھ کئی باتیں بہت دیرمیں جا کر کھلتی ہیں خاص طور پر جب انسان عنفوان شباب میں ہوتا ہے تو ہوا کا لمس بھی گدگداتا ہے۔ چندا ماموں ساتھ ساتھ چلتا ہے۔ بادل اس کے لئے خوبصورت شکلوں میں ڈھلتے ہیں اور دھوپ چھائوں اس کی آنکھوں میں جھلملاتی ہے۔ رنگ استعارا بنتے ہیں اور خوشبو اشارا ۔ مگر پھر رفتہ رفتہ وہ بھی پھول کی نمی کی
مزید پڑھیے


حضرت خواجہ غلام فریدؒ کا عرس

بدھ 04 دسمبر 2019ء
ظہور دھریجہ
بر صغیر کے عظیم صوفی شاعر حضرت خواجہ غلام فرید ؒ کا 122 واں تین روزہ سالانہ عرس کوٹ مٹھن میں شروع ہے ۔ اس وقت ہزاروںعقیدت مند عرس میں شریک ہیں ۔ ایک اندازے کے مطابق تین دن کے مختلف اوقات میں قریباً پانچ لاکھ افراد عرس میں شرکت کی سعادت حاصل کرتے ہیں ۔ خواجہ فرید کے ہندوستان کے صوبہ راجھستان میں بھی عقیدت مندوں کی کثیر تعداد موجود ہے کہ یہ صوبہ چولستان سے ملحقہ ہے اور تقسیم سے پہلے پورا ہندوستان ایک تھا ۔ خواجہ فرید نے اپنی زندگی کے 17 سال چولستان میں گزارے ،
مزید پڑھیے


پنجاب کی مفلوج حکومت

بدھ 04 دسمبر 2019ء
عدنان عادل
پنجاب میں ایک نحیف و ناتواں حکومت ہے جس کے وجودکااحساس عوام کو نہیں ہورہا۔صوبہ کے وزیر اعلی عثمان بُزدار شریف آدمی لیکن کمزور منتظم ہیں۔ انہیں صوبائی حکومت سنبھالے سولہ ماہ ہوگئے ہم نے نہیں سنا کہ انہوں نے کسی کو نقصان پہنچایا ہو ‘ سرکاری طاقت استعمال کرتے ہوئے کسی کو ظلم و زیادتی کا نشانہ بنایا ہو۔ اسی طرح ان کی کرپشن کا کوئی اسکینڈل بھی نہیں ہے۔ اس کے باوجودعوام کی ایک بڑی تعدادوزیراعلی سے مطمئن نہیں۔وہ اب تک کوئی ایسا کام نہیں کرسکے جس سے عوام کو ریلیف ملا ہو۔عوام سے بات چیت کرنے
مزید پڑھیے


کیا خواجہ سرا انسان نہیں ہوتے؟

بدھ 04 دسمبر 2019ء
آصف محمود
گلی محلوں میں چلتے پھرتے خواجہ سرائوں کو تو آپ نے اکثر دیکھا ہو گا، کبھی نفرت سے ، کبھی حقارت سے ، کبھی آپ کے متقی وجود نے انہیں غلاظت سمجھ کر منہ موڑ لیا ہو گیا اور کبھی آپ کی مردانگی نے انہیں زمین کا ایک غیر ضروری بوجھ سمجھ کر تمسخر اڑایا ہو گا لیکن سچ بتائیے کیا آپ کی زندگی میں کبھی ایک بار بھی وہ لمحہ آیا جب آپ نے انہیں ایک زندہ انسانی وجود سمجھ کر ان سے بات کی ہو ، ان کی دل جوئی کی ہو ، ان کا دکھڑا سنا ہو
مزید پڑھیے






کالم نگار

اداریہ
اداریہ









سجاد میر
شہر آشوب

مستنصر حسین تارڑ
ہزار داستان

مجاہد بریلوی
شہر ناپرساں


مبشر لقمان
کھرا سچ

عبداللہ طارق سہیل
وغیرہ وغیرہ


بشریٰ رحمان
چادر چاردیواری اور چاندنی

نو شی گیلا نی
کا لم کہا نی


افتخار گیلانی
مکتوب دہلی

خاور نعیم ہاشمی
پردہ اٹھتا ہے


رضا رومی
رومی نامہ

انجم نیاز
یادداشت از امریکا



خاور گھمن
گھمن گھیریاں


سعید خا ور
حر ف درما ں


راوٗ خالد
رولا رپہ



اشرف شریف
شہر نامہ

ایچ اقبال
ایچ اقبال


قدسیہ ممتاز
حرف تازہ




سعود عثمانی
دل سے دل تک

اثر چوہان
سیاست نامہ

عامر متین
عامر متین

ارشاد محمود
بات یہ ہے


ناصرخان
فرنٹ لائن

عدنان عادل
امروزوفردا

ذوالفقار چودھری
تیسری آنکھ

شاہین صہبائی
چلتے چلتے



سعید خاور
حرفِ درماں


رعایت اللہ فاروقی
گفتار و پندار

یوسف سراج
نقش قدم


عمر قاضی
لالہ صحرائ

عبدالرفع رسول
مکتوب سری نگر

احمد اعجاز
کہانی کی کہانی

خالد ایچ لودھی
دل کی باتیں

رحمت علی رازی
درون پردہ

وسی بابا
باتاں


راحیل اظہر
غبارِخاطر

محمد عامر رانا
اقلیم در اقلیم