BN

کالم



آج کے کالم 


  


کالم آرکیو



سانپ اور سنپولئے پھنکارتے رہ جائیں گے

هفته 17  اگست 2019ء
جسٹس نذیر غازی
کیا یہ عارضی لہرہے کہ کشمیر‘ کشمیر اور ہر زبان پر بیان کا عنوان کشمیر ہے؟ یا ایک مستقل درد لادوا جو ایک طویل عرصے سے ملت اسلامیہ کو کس کروٹ چین سے بیٹھنے نہیں دے رہا؟ ہر اخبار‘ ہر چینل ‘ ہر دانشور ہر جذباتی نوجوان اور ہر محب وطن عمر رسیدہ کشمیر کے فکر میں گم ہے۔ کشمیر کا قضیہ برصغیر ہی نہیں عالم اسلام اور صرف عالم اسلام ہی نہیں پوری دنیا کے سیاسی مزاج کو برہم کئے ہوئے ہے۔ بظاہر تو بھارت اور بھارت کے مسلم دشمن نیتا کشمیر میں انسانیت کو اپنی درندگی کا نشانہ بنائے
مزید پڑھیے


شہہِ رگِ پاکستان۔۔۔ 3

هفته 17  اگست 2019ء
مجاہد بریلوی
چلیں پہلے تو حکمرانوں ،خاص طور پر وزارت خارجہ کے بابوؤں کے ساتھ تالیوں سے بلکہ باجے تاشے سے جشن مناتے ہیں کہ ’’50سال‘‘ بعد سلامتی کونسل ،جمعۃ المبارک کے دن اس بات پر غور کرے گی کہ واقعی کشمیریوں پر اتنے بڑے مظالم ڈھائے جارہے ہیں جن پر وہ مذمتی قرار داددلائے۔سلامتی کونسل کے دس غیر اہم رکن ممالک کا کردار تو خیر سے قرار داد آبزرور سے زیادہ نہ ہوگا۔مگر دیکھنا یہ ہے کہ حالیہ عالمی تاریخ میں اس نئے پیمانے پر بھارتی مظالم ڈھانے پر جس میں اب تک 70ہزار سے زائد کشمیری جام
مزید پڑھیے


منزل سے قریب

هفته 17  اگست 2019ء
ڈاکٹر حسین پراچہ
میرا اپنے قارئین کے ساتھ ایک خاموش معاہدہ ہے! معاہدہ یہ ہے کہ جب میری رسائی کسی دل کش اور فکر انگیز نئی کتاب تک ہو گی میں اسے اپنے قارئین کے ساتھ شئیر کروں گا۔ چند روز پہلے ڈاکٹر جاوید احمد نے بڑی محبت کے ساتھ مجھے جناب لالہ صحرائی کی نئی کتاب ’’منزل سے قریب‘‘ بھجوائی اس کتاب میں عالمی ادب کے معروف افسانوں اور سفرناموں کے تراجم پیش کئے گئے۔ ہر ادب پارے کا ترجمہ اپنی جگہ تخلیقی ادب کا خزینہ محسوس ہوتا ہے۔ جناب لالہ صحرائی کی نثر نگاری دراصل قلمی ساحری ہی ساحری ہے۔ ان
مزید پڑھیے


کس کا یقین کیجیے‘ کس کا یقین نہ کیجیے

هفته 17  اگست 2019ء
محمد اظہارالحق
’’آفتابِ علم و عرفان سید ابوالاعلیٰ مودودی‘‘ کے عنوان سے مولانا مودودی کے بیٹے سید حسین فاروق مودودی کی تصنیف منظر عام پر آئی ہے۔ مطبع کا نام عفاف پرنٹر اردو بازار لاہور ہے۔ کتاب پر ’’ترجمان القرآن پبلی کیشنز 5۔اے ذیلدار پارک اچھرہ لاہور کا نام بھی درج ہے۔ یہ کتاب بنیادی طور پر مولانا مرحوم کے خاندان اور جماعت اسلامی کے درمیان نزاع کی تفصیل ہے تاہم اس میں کچھ اطلاعات ایسی بھی ہیں جو ہمارے ملک کی سیاست‘ نظام اور ہماری قومی اخلاقیات کے متعلق بہت کچھ بتاتی ہیں۔ جنرل ضیاء الحق کے حوالے سے سید حسین فاروق مودودی
مزید پڑھیے


جنرل محمد ضیاء الحق

هفته 17  اگست 2019ء
ہارون الرشید
جنرل ضیاء الحق کے عہدِ اقتدار کا اگر کوئی سبق ہے تو شاید یہ کہ فوجی حکمران کتنا ہی دانا اور دیانت دار ہو ،قومی فروغ کی ضمانت مہیا نہیں کر سکتا۔ جتنا جھوٹ جنرل محمد ضیاء الحق کے بارے میں لکھا اور بولا گیا ، شاید ہی اس کی کوئی دوسری نظیر ہو ۔ جنرل کے طرزِ حکومت کی تحسین کی جا سکتی ہے اور نا مارشل لا کی ۔ تاریخ کا سبق یہ ہے کہ ہمیشہ سول ادارے ملکوں اور قوموں کو قوت اور بالیدگی عطا کرتے ہیں ۔ اچھی پولیس ، اچھی عدالت ، خدمت گزار
مزید پڑھیے


ہاری خواتین: مساوی معاوضہ کے لئے قانون سازی

هفته 17  اگست 2019ء
اداریہ
روزنامہ 92 نیوز کی رپورٹ کے مطابق سندھ میں زراعت ، لائیو سٹاک اور ماہی پروری کے شعبوں سے وابستہ لاکھوں خواتین کو سماجی، قانونی اور معاشی تحفظ فراہم کرنے کے لئے مردوں کے برابر معاوضہ دینے کامسودہ قانون تیار کر لیا گیا ہے۔ سندھ میں وڈیرہ شاہی اور جاگیردارانہ نظام کی وجہ سے ہاریوں کی زندگی نسل در نسل غلاموں سے کچھ زیادہ نہیں۔ دیہی سندھ میں وڈیروں کے ہزاروں ہاری اور خاندانی ملازم کئی نسلوں سے غلامی کرتے چلے آ رہے ہیں۔ سماجی عدم مساوات اور انسانیت کی تذلیل کی اس سے بدترین مثال بھلا اور کیا
مزید پڑھیے


ریل گاڑیوں کی آمد و رفت میں تاخیر

هفته 17  اگست 2019ء
اداریہ
عیدالاضحی کے بعد سے ٹرینیں 20 بیس گھنٹے لیٹ ہونا شروع ہو گئی ہیں جس کے باعث مسافروں کو بروقت گھر اور ملازمین کو دفاتر پہنچنے میں شدید دشواری کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ کچھ ماہ سے ٹرینوں کا سارا شیڈول درہم برہم ہو چکا ہے۔ پہلے حادثات کے باعث ٹرینیں تاخیر کا شکار ہوتی رہیں، اب بارشوں کے باعث نظام میں گڑبڑ ہو چکی ہے حالانکہ محکمہ ریلوے کو ایک بہترین ادارہ بنا دیا گیا تھا لیکن نہ جانے اسے کیا نظربد لگی کہ اب ٹرینوں پر سفر نہ صرف غیر محفوظ ہو چکا ہے بلکہ وقت پر بھی
مزید پڑھیے


ایل او سی پر فائرنگ:کشمیریوں کے لئے مستقل خطرہ

هفته 17  اگست 2019ء
اداریہ
بھارت کی طرف سے کنٹرول لائن پر جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کے تازہ واقعہ میں 3پاکستانی فوجی اور 2شہری شہید ہو گئے ہیں۔ بھارتی فائرنگ سے کئی مکانات اور گاڑیوں کو نقصان پہنچا۔ پاکستانی فوج کی جوابی کارروائی میں بھارت کے 5اہلکار ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے ہیں۔ پاک فوج نے جوابی کارروائی میں بھارت کے متعدد بنکرز کو بھی تباہ کر دیا ہے۔ بھارت کی طرف سے جنگ بندی معاہدے کی مسلسل خلاف ورزی کے واقعات جاری ہیں۔ ایک سال میں پاکستان کے درجنوں فوجی اور 200سے زائد کشمیری شہری اس اشتعال انگیز فائرنگ اور گولہ باری
مزید پڑھیے


اسلامی دنیا ،نیم دروں نیم بروں

هفته 17  اگست 2019ء
عا رف نظا می
بھارتی آئین کے آرٹیکل 370کی تنسیخ کے بعد مقبوضہ کشمیر میں لاک ڈاؤن کو 14روز گزر چکے ہیں ۔ آٹھ لاکھ کے قریب فوج غاصبانہ بھارتی اقدامات کے خلاف کشمیریوں کی آواز دبانے کے لیے فسطائی ہتھکنڈے استعمال کر رہی ہے ۔مسلسل کرفیو کے باعث پورا مقبوضہ کشمیر جیل خانے میں تبدیل ہو چکا ہے ۔آزادی کا پیدائشی حق مانگنے والوں کو شیلنگ، تشدد اور پیلٹ گنوں کے ذریعے معذور کیا جا رہا ہے ۔محاصرے کے باعث لوگ خوراک اور ادویات کی قلت کا شکار ہو رہے ہیں۔ مقبوضہ کشمیر کا دورہ کرنے والے سول سوسائٹی کے نمائندوں کا کہنا
مزید پڑھیے


سوشل میڈیا ایکٹوسٹ

هفته 17  اگست 2019ء
رعایت اللہ فاروقی
دو برس قبل کراچی آنا ہوا تو کلفٹن میں واقع گرافک ڈیزائننگ کے ادارے میں سوشل میڈیا مارکیٹنگ کے ایک ماہر ٹکر گئے، پوچھنے لگے "آپ فیس بک استعمال کرتے ہیں ؟" عرض کیا"جی کرتا ہوں !" فرمانے لگے"پوسٹیں لکھتے ہیں ؟" عرض کیا"تھوڑی بہت لکھ لیتا ہوں" بولے"کریکٹ می اف آئی رونگ کہ لائیکس صرف تصاویر پر آتے ہوں گے، لکھی ہوئی پوسٹ پر دو چار لائیکس ہی آتے ہوں گے ؟" عرض کیا"دو چار تو نہیں تھوڑے زیادہ ہی آجاتے ہیں لیکن تصاویر سے واقعی کم ہوتے ہیں" فرمانے لگے" کریکٹ می اِف آئی رونگ، لکھی پوسٹ پر دس بیس لائیکس آجاتے ہوں گے ؟
مزید پڑھیے


کشمیر ، چنداہم مغالطے جو دور ہونے چاہئیں

جمعه 16  اگست 2019ء
محمد عامر خاکوانی
ہمارے ہاں بیشتر معاملات میں حقائق سے دور عجیب وغریب مغالطے اور غلط نظریات گھڑ لئے جاتے ہیں۔ بعض اوقات وہ اس قدر بچکانہ بلکہ احمقانہ ہوتے ہیں کہ کوئی ان کی اصلاح یا تردید کی ضرورت بھی محسوس نہیں کرتا۔ یہ سوچ کر کہ اتنی کمزور بات پر وقت ضائع کرنے کی کیا ضرورت ہے۔ پھر وقت گزرنے کے ساتھ وہ سازشی تھیوریز پختہ ہوجاتی ہیں۔ آج کا دور مین سٹریم میڈیا سے زیادہ سوشل میڈیا کے گرد گھوم رہا ہے۔ فیس بک اور سوشل میڈیابلاگرز ویب سائٹ پر بہت سے نئے لکھاری آ چکے ہیں، ان میں سے
مزید پڑھیے


’’کالا باغ ڈیم ؟‘‘۔ ریفرنڈم کرالیں!

جمعه 16  اگست 2019ء
اثر چوہان
کل (15 اگست کو ) بھارت نے اپنا 72 واں یوم آزادی منایا لیکن، پاکستان سمیت دُنیا بھر کے پاکستانیوں اور کشمیری مسلمانوں نے اِسے ’’یوم سیاہ‘‘ (Black Day) کے طور پر منایا۔ دُنیا بھر میں قائم بھارتی سفارت خانوں کے باہر احتجاج کِیا گیا، مقبوضہ کشمیر میں تو کئی مقامات پر بھارتی پرچم (ترنگا ) کو بھی نذر آتش کِیا گیا ۔ کئی بھارتی سیاسی راہنمائوں نے کہا کہ ’’ مقبوضہ کشمیر کی حیثیت تبدیل کرنے کے خطرناک نتائج برآمد ہوں گے‘‘۔ صدر جناب عارف اُلرحمن علوی، وزیراعظم عمران خان ، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ ، صدر آزاد
مزید پڑھیے


رومانٹک کامریڈ!

جمعه 16  اگست 2019ء
ناصرخان
1987ء کی بات ہے مال روڈ پر ایک صحافی کی دکان تھی۔ وہ پبلشر بھی تھا اور کتابیں امپورٹ بھی کرتا تھا۔ اس زمانے میں وہ اپنی دکان اور پبلشنگ ہائوس کو بہت وقت دیا کرتے تھے۔ پاکستان کے سیاسی نظام پر انگریزی میں کسی اچھی کتاب کی تلاش میں تھا۔ جب بک شیلف دیکھ کر تسلی نہ ہوئی تو مَیں موصوف کے دفتر کے اندر چلا گیا۔ ان سے پوچھنے ، ان سے کچھ مشورہ کرنے۔ اس صحافی نے کافی کی دعوت دی اور انگریزی زبان کے بڑے بڑے رائٹرز اور ان کی تحریروں پر بات ہونے لگی۔ انہوں
مزید پڑھیے


سلیقہ‘ ڈھنگ اور ترتیب سے عاری قوم!

جمعه 16  اگست 2019ء
سعدیہ قریشی
پہلی عید ایسی گزری کہ جس میں دل رفتگاں کی یاد سے زیادہ کشمیریوں کی حالت زار سے بوجھل تھا۔ اگرچہ ہم سینکڑوں میل کے فاصلے پر اپنے اپنے گھروں کی محفوظ پناہ گاہوں اور اپنے دیس کی آزاد فضائوں میں عید قربان منا رہے تھے لیکن دل میں ایسا ملال تھا‘ایسی اداسی تھی عید مبارک کا فون تک کسی کو نہ کیا۔ اس گہری اداسی میں یوں لگتا تھا کہ مظلوم اور ستم زدہ کشمیر میرے دل میں آباد ہو گیا ہو۔ رہ رہ کر یہی خیال دامن گیر ہوتا کہ خدایا‘ کشمیر کے ستم کدے میں عید کیسی ہو
مزید پڑھیے


وہ اینٹ چلا کر تو دیکھے…

جمعه 16  اگست 2019ء
عبداللہ طارق سہیل
وزیر اعظم نے آزاد کشمیر میں خطاب فرمایا کہ بھارت کو اینٹ کا جواب پتھر سے دیں گے۔ سننے والے سوچ میں ہیں کہ بھارت نے تو کشمیر ضم کر کے اینٹوں کی پوری دیوار ہم پر پھینک ماری۔ اس کا جواب کہاں ہے؟ دراصل بات شاید ایک اینٹ کی ہے۔ بھارت نے ایک اینٹ ماری تو پتھر ماریں گے۔ اینٹوں کی دیوار کا معاملہ اس اصولی جواب میں الگ ہے۔ یا شاید یہ بھی ہو سکتا ہے کہ بھارت نے جو اقدام کیا‘ وزیر اعظم اسے ’’اینٹ‘‘ سمجھتے ہی نہیں۔ ایسا ہے تو یہ عالی جناب وزیر اعظم کی
مزید پڑھیے






کالم نگار

اداریہ
اداریہ





سجاد میر
شہر آشوب




مستنصر حسین تارڑ
ہزار داستان

مجاہد بریلوی
شہر ناپرساں


مبشر لقمان
کھرا سچ

عبداللہ طارق سہیل
وغیرہ وغیرہ


بشریٰ رحمان
چادر چاردیواری اور چاندنی

نو شی گیلا نی
کا لم کہا نی


افتخار گیلانی
مکتوب دہلی

خاور نعیم ہاشمی
پردہ اٹھتا ہے


رضا رومی
رومی نامہ

انجم نیاز
یادداشت از امریکا



خاور گھمن
گھمن گھیریاں


سعید خا ور
حر ف درما ں

راوٗ خالد
رولا رپہ



اشرف شریف
شہر نامہ

ایچ اقبال
ایچ اقبال


قدسیہ ممتاز
حرف تازہ




سعود عثمانی
دل سے دل تک

اثر چوہان
سیاست نامہ

عامر متین
عامر متین

ارشاد محمود
بات یہ ہے


ناصرخان
فرنٹ لائن


عدنان عادل
امروزوفردا

ذوالفقار چودھری
تیسری آنکھ

رعایت اللہ فاروقی
گفتار و پندار

یوسف سراج
نقش قدم


عمر قاضی
لالہ صحرائ

عبدالرفع رسول
مکتوب سری نگر

احمد اعجاز
کہانی کی کہانی

خالد ایچ لودھی
دل کی باتیں

رحمت علی رازی
درون پردہ

وسی بابا
باتاں


راحیل اظہر
غبارِخاطر

محمد عامر رانا
اقلیم در اقلیم