پشاور،کراچی ،ماسکو ، بیجنگ، ٹوکیو ، روم (خبرنگار ، بیورورپورٹ ،،نیوزایجنسیاں ) کرونا وائرس سے مزید 141 افراد ہلاک ہوگئے جبکہ روس نے چینی شہریوں کے ملک داخلے پر پابندی لگادی ہے ۔ کرونا وائرس سے 24گھنٹوں میں مزید 141 افراد ہلاک ہوگئے جسکے نتیجے میں ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 2014ہوگئی جبکہ 1872نئے کیس سامنے آئے ہیں۔ چین میں مزید 138مریض دم توڑ گئے جس سے ہلاکتوں کی تعداد 2006ہو گئی جبکہ 1756نئے کیس سامنے آئے ہیں۔ ایران میں بھی بدھ کے روز2افراد میں کرونا وائرس کی تصدیق ہوئی بعدازاں ایرانی وزارت صحت نے تصدیق کی کہ دونوں مریض دم توڑ گئے ۔ہانگ کانگ میں کرونا کا ایک اور مریض چل بسا۔جاپان میں 10،سنگاپور میں3،ہانگ کانگ میں 2 اور تائیوان میں مزید ایک کیس سامنے آیا۔جاپان میں قرنطینہ کیے گئے بحری جہاز ڈائمنڈ پرنسس پر مزید 79مسافروں میں کرونا وائرس کی تصدیق ہوگئی جس کے بعد متاثرین کی تعداد621ہو گئی ہے ۔دنیا بھر میں کے 30متاثرہ ممالک میں متاثرین کی تعداد 75309ہو گئی جن میں سے 15126مریض صحتیاب ہو چکے جبکہ 12056مریضوں کی حالت تشویشناک ہے ۔ ڈائمنڈ پرنسس پر56 ممالک کے 3771 مسافر سوار ہیں۔ ان مسافروں کو جانے کی اجازت دیدی گئی جن میں کرونا وائرس نہیں پایا گیا۔ امریکہ نے بھی اپنے 328 مسافر ڈائمنڈ پرنسس سے نکال لیے ۔ ہوبئی میں کرونا وائرس کا علاج کرنے والے ڈاکٹرز اور میڈیکل سٹاف کے بچوں کو امتحانات میں اضافی نمبرز دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔ادھرروس میں دو چینی شہریوں میں کروناوائرس کی تصدیق ہونے کے بعد روس نے چینی شہریوں کے ملک میں داخلے پرپابندی لگادی ہے ۔ الجزیرہ کے مطابق اٹلی میں چینی سیاحوں، چینی نژاد اطالوی باشندوں سمیت ایشیائی ممالک سے تعلق رکھنے والے افراد کو نفرت پر مبنی امتیازی سلوک اور تشدداور ہراسگی کے واقعات کا سامنا ہے ۔ پشاورمیں کرونا کا ایک اور مشتبہ مریض ہسپتال میں داخل کرادیا گیا ہے جس کے خون کے نمونے لیبارٹری ارسال کر دئیے گئے ہیں۔ چین میں کرونا وائرس کے پیش نظر تھر میں کام کرنے والے 600سے زائد چینی باشندوں کی پاکستان واپسی موخرکردی گئی ۔