اسلام آباد( خصوصی نیوز رپورٹر) پاکستان کا آئی ایم ایف کے ساتھ 450ملین ڈالر کی دوسری قسط کیلئے سٹاف سطح کا معاہدہ ہوگیا۔ وزارت خزانہ کے مطابق جائزہ کے آخری روز آئی ایم ایف ٹیم نے حکومت کی معاشی ٹیم سے ملاقات کی۔ مشیر خزانہ حفیظ شیخ نے آئی ایم ایف کی پاکستان کیلئے مالی ، تکنیکی اور مشاورتی حمایت کو زبردست سراہا،آئی ایم ایف مشن چیف نے اہداف کے حصول کے حوالے سے حکومت کی کاوشوں کا اعتراف کیا اور چیلنجنگ صورتحال میں مشکل معاشی اصلاحات متعارف کرانے پر حکومت کی تعریف کی ، آئی ایم ایف کا دوسرا سہ ماہی جائزہ آئندہ سال ہوگا۔ آئی ایم ایف کے مطابق مہنگائی میں کمی ہو گی، سٹیٹ بنک کی جانب سے ایکسچینج ریٹ کو مارکیٹ کی بنیاد پر تعین کرنے اور لچکدار کرنے سے بیرونی شعبے کی صورتحال بہتر ہورہی ہے اور غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر میں توقع سے زیادہ اضافہ ہوا ہے ،ٹیکس انتظامیہ کی کاوشوں اور پالیسی تبدیلیوں سے ریونیو بڑھ رہا ہے ۔آئی ایم ایف مشن چیف کے مطابق مذاکرات کے دوران پاکستان کی مضبوط اور متوازن گروتھ کے حصول کے لیے پالیسیوں پر توجہ مرکوز رکھی گئی، رواں مالی سال کے بجٹ پر احتیاط سے کے ساتھ عملدرآمد، نئی پبلک فنانس مینجمنٹ قانون سازی پر عملدرآمد،صوابدیدی ٹیکس استثنیٰ کو ختم کرکے ٹیکس بیس میں اضافے کو جاری رکھتے ہوئے مالیاتی خامیوں کو کم کرنے کی ضرورت ہے جبکہ سماجی و ترقیاتی اخراجات کا تحفظ بھی اہم ہے ، بجلی کے شعبے میں اصلاحات پر اتفاق کیا گیا ہے ،سرمایہ کاری میں اضافے ، روزگار کے مواقع اور ترقی کے لیے حکومتی اداروں میں گورننس اور آپریشنز میں بہتری، انسداد بدعنوانی اصلاحات پر عملدرآمد اور کاروباری ماحول میں بہتری اہم ہے ،آئی ایم ایف ٹیم پاکستانی حکام کے ساتھ تعمیری مذاکرات اور مہمان نوازی پر شکرگزار ہے ۔