اسلام آباد، راولپنڈی (وقائع نگار خصوصی، 92 نیوز رپورٹ، مانیٹرنگ ڈیسک ،نیوزایجنسیاں ) پاک فوج نے لائن آف کنٹرول (ایل او سی) پر بھارت کی جانب سے جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کا موثر جواب دیتے ہوئے ایک افسر سمیت 6 بھارتی فوجیوں کو ہلاک جبکہ متعدد کو زخمی کردیا اور 2 بنکرز بھی تباہ کردیے ۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے ڈائریکٹر جنرل (ڈی جی) میجر جنرل آصف غفور نے ایک ٹویٹ میں بتایا کہ پاک فوج نے لائن آف کنٹرول پر تتہ پانی سیکٹر میں بھارت کی جانب سے کی گئی جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کا موثر جواب دیا۔ بھارتی فائرنگ سے ایک 7 سالہ بچے سمیت 3 شہری شہید ہوگئے تھے ، جس پر پاک فوج نے بھارتی چیک پوسٹوں کو نشانہ بنایا اور ایک افسر سمیت 6 بھارتی فوجیوں کو ہلاک، متعدد کو زخمی اور 2 بنکرز کو تباہ کردیا۔خیال رہے بھارت کی جانب سے 18 اگست کو لائن آف کنٹرول پر کی گئی بلا اشتعال فائرنگ کے نتیجے میں 2 بزرگ شہری شہید ہوئے تھے جبکہ ایک 7 سالہ بچہ صدام زخمی ہوا تھا، جو بعد ازاں شہید ہوگیا۔بھارت نے اپنے ایک فوجی نائیک روی رنجن کمار کی ہلاکت اور چار فوجیوں کے زخمی ہونے کی تصدیق کی ہے ۔ادھر پاکستان نے سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی پر بھارتی ڈپٹی ہائی کمشنر کو طلب کرکے شدید احتجاج کیا ہے ۔ترجمان دفترخارجہ کے مطابق پاکستان نے کنٹرول لائن کی مسلسل خلاف ورزیوں پر بھارت سے شدید احتجاج کیا۔ بھارتی فورسز نے ایل او سی پرتتہ پانی سکیٹرپر18اگست کو بلااشتعال فائرنگ کی تھی ۔بھارتی فورسز ایل او سی پر مسلسل شہری آبادی کو نشانہ بنارہی ہے ۔بھارت کی جانب سے 2017سے جنگ بندی کی خلاف ورزیوں میں تیزی آئی۔بھارت نے 2سال کے دوران 1970مرتبہ جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کی۔بھارت جان بوجھ کر شہری آبادی کو نشانہ بنا رہا ہے جو بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی ہے ۔بھارتی سیزفائرکی خلاف ورزیاں علاقائی امن و سلامتی کیلئے خطرہ ہیں۔بھارت اپنی فورسز کو جنگ بندی معاہدے پر مکمل عملدرآمد کی ہدایت کرے ۔