لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک)مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثنااللہ نے کہاہے کہ ہم نے تو یہ کہاہے کہ حکومت کوروناکیلئے میٹنگز کے علاوہ کچھ کام بھی کرے ،جس ٹائیگرفورس نے گھرگھرراشن پہنچانا ہے اس کا تو وجود ہی نہیں ہے ،عوام تو بھوکے مررہے اورحکومت ابھی فورس ہی بنارہی ہے ۔پروگرام نائٹ ایڈیشن میں میزبان شازیہ ذیشان سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اگر حکومت پنجاب میں لوکل باڈیز کو بحال کردیتے تو ان کو ہر گلی محلے میں ایک نمائندہ مل جاتا ۔ تجزیہ کار اوریا مقبول جان نے کہا کہ عمران کے ارد گرد بیٹھے ہوئے لوگوں کوپاکستان کے حالات کا اندازہ ہی ہے نہ ان کا کوئی تجربہ ،دس لاکھ کے قریب اساتذہ، لیڈی ہیلتھ ورکرز ، لوکل گورنمنٹ ملازمین موجود ہیں ایسے میں ٹائیگرفورس بنانے کی ضرورت ہی نہیں تھی۔ بیوروچیف لندن غلام حسین اعوان نے بتایا کہ برطانیہ میں 13اپریل کو لاک ڈائون کو تین ہفتے ہونگے لیکن اطلاعات یہ آرہی ہیں کہ اس میں مزید اضافہ کیاجائے گا ،13اپریل کے بعد ہوسکتا ہے کہ روزانہ ایک لاکھ افراد کا ٹیسٹ کیاجائے ۔امریکہ میں نمائندہ 92نیوز خرم شہزاد نے کہا کہ امریکہ میں مسلم کمیونٹی میں خوف ہے جس کو کورونا ہے وہ اس کو بتا نہیں رہا کیونکہ انہیں یہ خطرہ ہے کہ اگرمرگئے تو تدفین میں بھی کوئی نہیں آئے گا اس وجہ سے انہوں نے پوری کمیونٹی میں پھیلا دیاہے ۔ماہر افغان اموررحیم اللہ یوسف زئی نے کہا کہ قیدیوں کی رہائی کا افغان حکومت کے پاس ایک پتہ ہے جس کو وہ استعمال کررہی ہے ،افغان حکومت چاہتی ہے کہ جو طالبان قیدی رہا ہوں وہ دوبارہ حکومت کے خلاف جنگ میں شامل نہیں ہونگے لیکن طالبان اس شرط پر بھی تیارنہیں ۔