لاہور (خصوصی نمائندہ) صوبائی وزیر برائے اطلاعات و ثقافت فیاض الحسن چوہان نے کہا ہے کہ بلاول زرداری کی تقریر سن کر ایسا لگا کہ تیسری جماعت کا طالبعلم معاشرتی علوم کے سبق کا رٹا لگا کر آیا ہے اور اپنے استاد کو اپنا سبق سنا رہا ہے ،بالکل اسی طرح لکھی ہوئی تقریر موصوف پڑھ رہے تھے ،میں کب سے یہ کہہ رہا ہوں کہ سابق صدر زرداری اپنی اور اومنی گروپ کی لوٹ مار اور کرپشن کو چھپانے کے بجائے اپنا دھیان اپنے بیٹے کی تربیت پر لگائیں،بلاول سیاستدان اور پارٹی چیئرمین بن گیا ہے مگر ابھی تک لکھی تقریریں غلط ادائیگی کے ساتھ پڑھتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بلاول نے یہ بھی کہاکہ وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کا مقابلہ وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کے ساتھ نہیں ہو سکتا،میں ان کی اس بات کی مکمل تائید کرتا ہوں کیونکہ کہاں مراد علی شاہ جیسا کارندہ جو آل زرداری کی منی لانڈرنگ اور لٹ مار کا بندوبستی ہے اور کہاں سردار عثمان بزدار جیسا پرتحمل اور بردبار وزیر اعلیٰ جو صوبے کے معاملات کو مکمل تدبر سے چلا رہا ہے ،سرادر عثمان بزدار پر تنقید کرنے سے پہلے انہیں یہ سوچنا چاہیے کہ قائم علی شاہ کی صورت میں انہوں نے جو فرعون کی ممی کو عوام کے سروں پر مسلط کیا ہوا تھا جو ای سی ایل کو پی ٹی سی ایل کہتے ہیں وہ کیا وزیر اعلیٰ تھے ، آصف زرداری، بلاول اور آل زردار ی کے دو مسئلے ہیں ایان علی اور پتلی گلی، ایان علی او ر اس جیسے دوسرے اداکاروں سے یہ پہلے منی لانڈرنگ کرواتے ہیں اور پھر گھیرا تنگ ہونے کی صورت میں پتلی گلی سے دبئی اور لندن فرار ہو نے کی کوشش کرتے ہیں۔میں ان کو بتا دینا چاہتا ہوں کہ مرغیوں اور انڈوں کے ساتھ ساتھ ہم کرپشن کے سنڈوں سے بھی لوٹی گئی تمام دولت واپس لے کر معیشت کو مضبوط کریں گے ۔قبل ازیں صوبائی وزیر نے تحریک انصاف کے علما ونگ کے زیر اہتمام منعقدہ پیغام پاکستان کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پچھلے چوبیس گھنٹوں میں ن لیگ کی جانب سے نواز شریف کی صحت کے حوالے پروپیگنڈہ کیا جا رہا ہے ، جمعرات کو مریم نواز نے نواز شریف کے معالج کے ساتھ ملاقات کی، ہفتے کو جیل ڈاکٹر نے بھی نواز شریف کا معائنہ کیا،نوا ز شریف بالکل ٹھیک اور ہٹے کٹے ہیں۔مولانا فضل الرحمن صاحب نے پورے خاندان کو ایم این اے بنوایا تھا وہ کس منہ سے عمران خان پر تنقید کرتے ہیں۔