لاہور(سلیمان چودھری ) شہباز شریف کے دور میں پنجاب ووکیشنل ٹریننگ کونسل کی جانب سے گھریلو ملازمین کو ٹریننگ دینے کا منصوبہ ناکامی سے دوچار ہو گیا ۔ڈومیسٹک ورکرز ٹریننگ پروگرام مطلوبہ نتائج نہ دے سکا ۔5کروڑ روپے خرچ کر کے 1676خواتین کو ٹریننگ دلائی گئی لیکن ان میں کوئی بھی ٹریننگ سے متعلقہ ملازمت حاصل نہ کر سکی ۔منصوبہ کی کارکردگی رپورٹ نے مکمل ناکامی کا پول کھول دیا ۔92نیوز کو ملنے والی سرکاری رپورٹ کے مطابق ویمن ڈویلپمنٹ ڈیپارٹمنٹ کی جانب سے گھریلو ملازمین کی ٹریننگ کا منصوبہ بنایا گیا تھا جس کیلئے پنجاب ووکیشنل ٹریننگ کونسل کی خدمات حاصل کی گئی تھیں ۔ملتان ، لاہور اور فیصل آباد کی خواتین کو ٹریننگ ملنا تھی جس کے تحت کوکنگ ، سرونگ ، لانڈری ، صفائی اور کئیرنگ کے طریقہ کار سیکھانا تھے تاکہ بچوں ،نو زائیدہ اور بڑوں کی دیکھ بھال کا کام کیا جائے ۔کونسل نے آڈٹ کرنیوالی ٹیم سے اس پروگرام کے بارے میں پوری تفصیلات شیئر ہی نہیں کیں اور صرف824خواتین کا ڈیٹا ہی شیئر کیا گیا ۔ ڈیٹا سے یہ بات ثابت ہوگئی کہ خواتین کو ایڈوانس لیول کی ٹریننگ ہی نہیں کرائی گئی ۔خواتین نے دوران انٹرویو کہا کہ وہ ڈومیسٹک ورکر بننا چاہتی تھیں نہ انکے خاندان نے انہیں ایسے کام کرنے کی اجازت دی ۔جن خواتین کو ٹریننگ دی گئی وہ حاصل شدہ سکلز کے بجائے دیگر کام کر رہی ہیں ۔ ادارے کی جانب سے انکی ٹریننگ کے بعد ملازمت کیلئے کہیں نہیں رکھوایا گیا، یہ پروگرام اپنے مقاصد حاصل کرنے میں بری طرح ناکام ہو گیا اور اسے غیر کامیاب منصوبہ قرار دیا گیا ۔رپورٹ کے مطابق جن ٹرینرز کے ذریعے خواتین کو ٹریننگ کرائی گئی وہ خود ڈومیسٹک ورکر بھی نہیں تھے ۔منصوبہ کی ناقص حکمت عملی تیار کی گئی خواتین کو منصوبہ میں شامل کرنے کیلئے طریقہ کار کو فالو نہیں کیا گیا ۔