اسلام آباد (اے پی پی) وفاقی وزیر تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت شفقت محمود نے کہا ہے کہ وزیراعظم ہائوس کو اعلیٰ درجہ کی یونیورسٹی اور چاروں گورنر ہائوسز کو میوزیم بنانے کا فیصلہ کر لیا گیا ہے جبکہ دیگر سرکاری عمارتوں کو سیاحتی مقامات اور ہوٹلز میں تبدیل کیا جائے گا، ان عمارتوں پر آنے والے سالانہ 105 کروڑ روپے کے اخراجات کی بچت ہو گی۔جمعرات کو وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت تاریخی عمارات کے دوبارہ استعمال مجوزہ منصوبے کے بارے میں اجلاس کے بعد میڈیا کے نمائندوں کو تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے انہوں نے بتایا حکومتوں کے شاہانہ طور طریقے سے لوگ پریشان ہیں، اس لئے حکومت نے شاہانہ اخراجات کو ختم کر کے سادگی اختیار کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ انہوں نے کہا اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ 1096 کنال پر محیط وزیراعظم ہائوس اسلام آباد کو ایک اعلیٰ درجہ کی یونیورسٹی میں تبدیل کیا جائے گا، وزیراعظم ہائوس پر سالانہ 47 کروڑ روپے کے اخراجات آتے تھے جس کی بچت ہو گی۔ انہوں نے کہا وزیراعظم ہائوس کے پیچھے موجود زمین پر یونیورسٹی کے لئے نئی عمارت تعمیر کی جائے گی، یونیورسٹی کے لئے پی سی ون بنایا جائے گا، یونیورسٹی کے قیام کے لئے وزیر تعلیم شفقت محمود، چیئرمین ایچ ای سی ڈاکٹر طارق بنوری اور ڈاکٹر عطاء الرحمن پر مشتمل کمیٹی بنائی گئی ہے ، یہ یونیورسٹی تعلیمی لحاظ سے منفرد ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ گورنمنٹ ہائوس مری کو ہیریٹج بوتیک ہوٹل بنایا جائے گا، اس عمارت پر سالانہ چار کروڑ روپے کے اخراجات آتے تھے ۔ انہوں نے کہا پنجاب ہائوس مری کو سیاحتی کمپلیکس میں تبدیل کیا جائے گا، پنجاب ہائوس مری پر سالانہ اڑھائی کروڑ روپے اخراجات آ رہے تھے ۔ وزیر تعلیم نے بتایا راولپنڈی میں پنجاب ہائوس اور اس سے ملحق گورنر انیکسی کو اعلیٰ تعلیمی ادارے میں تبدیل کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا گورنر ہائوس لاہور میں قائم ووکیشنل ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ اور سکول کو الگ کر کے عمارت میں میوزیم اور آرٹ گیلری بنائی جائے گی جبکہ اس کے پارکس کو عوام کے لئے کھول دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا اجلاس میں 19 شاہرہ قائداعظم کو کرافٹ میوزیم میں تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ، یہاں وزیر اعلیٰ کا دفتر قائم تھا اور اس عمارت پر 8 کروڑ روپے کے سالانہ اخراجات آتے تھے ، اس عمارت کے کانفرنس ہال کو پبلک کے لئے رینٹ آئوٹ کیا جائے گا اور اس سے بھی آمدن حاصل ہو گی۔ انہوں نے کہا چنبہ ہائوس کو گورنر آفس کے لئے استعمال کیا جائے گا، سٹیٹ گیسٹ ہائوس مال روڈ لاہور کو فائیو سٹار ہوٹل میں تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا گورنر ہائوس کراچی میں میوزیم بنایا جائے گا جبکہ سٹیٹ گیسٹ ہائوس کراچی کو گورنر ہائوس کے طور پر استعمال کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا اجلاس میں قصر ناز کراچی کی عمارت کو فائیو سٹار ہوٹل میں تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ انہوں نے کہا گورنر ہائوس بلوچستان کو میوزیم اور بلوچ ہیریٹج میں تبدیل کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا گورنر ہائوس پشاور کو میوزیم اور قبائلی ثقافت کا عکاس بنایا جائے گا، نتھیا گلی گورنر ہائوس کو ایک اعلیٰ درجہ کے ہوٹل اور سیاحتی مقام میں تبدیل کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا اس سے حکومت کو سالانہ 105 کروڑ روپے کی بچت ہو گی اور یہ عمارتیں آمدن کا ذریعہ بنیں گی۔ایک نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے شفقت محمود نے کہا وزیر اعظم ہائوس کو دوسے تین سال میں ریسرچ یورنیورسٹی میں تبدیل کردیا جائے گا، افسران کی بڑی بڑی رہائش گاہوں کا ڈیٹا بھی اکٹھا کیا جا رہا ہے ۔ اسلام آباد(خصوصی نیوز رپورٹر؍آ ئی این پی)وفاقی کابینہ نے بیرون ملک سرمایہ اور اثاثہ جات کی واپسی کے لیے ریکوری یونٹ کے قیام کی منظوری دے دی،ریکوری یونٹ احتساب کے حوالے سے ٹاسک فورس کی معاونت کرے گا۔جمعرات کو وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا جس میں 9 نکاتی ایجنڈے پر غور کیا گیا۔وفاقی کابینہ نے کیڈ ڈویژن کو ختم کرنے کی منظوری دے دی جبکہ وفاق میں صحت سے متعلقہ امور وزارت نیشنل ہیلتھ سروسز کے ماتحت کرنے اور ملکی اداروں میں ریگولیٹری نظام کی کارگردگی بڑھانے کیلئے ٹاسک فورس قائم کرنے کی بھی منظوری دے دی گئی۔ ذرائع کے مطابق کابینہ نے اورنج ٹرین سمیت گزشتہ حکومت کے تمام ماس ٹرانزٹ منصوبوں کا خصوصی آڈٹ کرانے کی منظوری دی جس کے تحت راول پنڈی، لاہور، ملتان اور پشاور میٹرو بس منصوبوں کا عالمی معیارکی آڈٹ فرم سے خصوصی آڈٹ کرایا جائے گا۔ذرائع نے بتایا کابینہ نے پاکستان نیوی ایکٹ 1961میں ترمیم اور سپریم کورٹ کے فیصلے کی روشنی میں انکم ٹیکس ترمیمی آرڈنینس میں ترمیم کی بھی منظوری دے دی ہے ۔اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہا کہ بجلی اور گیس کی قیمتوں میں کوئی اضافہ نہیں کیا جا رہا،تنخواہ دار طبقے کیلئے ٹیکس شرح میں کوئی ردوبدل نہیں کیا جا رہا۔وزیر اطلاعات نے بتایا کہ کابینہ اجلاس میں بیگم کلثوم نواز کیلئے دعائے مغفرت کی گئی، گزشتہ حکومت میں یوریا کھاد کی پیداوار کیلئے گیس نہیں دی گئی، گیس کی کم یابی سے یوریا کھاد کی پیداواررک گئی ، ایک لاکھ ٹن یوریا کھاد درآمد کرنا ہو گی،15نومبر تک اپنے پلانٹس کو مکمل گیس دینے کا فیصلہ کیا ہے ،کھاد کی فی بوری درآمد کرکے 2550 روپے میں پڑے گی، حکومت اس پر سبسڈی دیکر 1650روپے میں کسانوں کو فراہم کرے گی۔انہوں نے کہا راولپنڈی ، اسلام آباد میٹروبس منصوبہ 45ارب روپے میں بنا، حکومت پنجاب راولپنڈی میٹرو کیلئے 2ارب روپے کی سبسڈی دیتی ہے ، ملتان میٹرو بس منصوبہ 29ارب روپے میں مکمل کیا گیا،حکومت پنجاب 3 میٹرو بس منصوبوں کیلئے 8ارب روپے سالانہ دیتی ہے ، حکومت آج 8ارب روپے دینا بند کر دے تو منصوبے بند ہو جائیں گے ، پشاور میٹرو بس منصوبہ 67ارب روپے میں مکمل ہو گا، پشاور میٹرو منصوبے میں حکومت کو سبسڈی نہیں دینا پڑے گی،اورنج لائن ٹرین کیلئے بھی سالانہ 3ارب سے زائد سبسڈی دینا پڑے گی۔انہوں نے کہا یہ پنجاب کا معاملہ ہے ، اس پر منحصر ہے کہ سبسڈی جاری رکھتی ہے یا بند کرتی ہے ۔وزیر اطلاعات نے کہا پی ٹی وی بورڈ آف گورنر ز کا چیئرمین وزیر ہو گا، سیکرٹری اطلاعات بورڈ کے وائس چیئرمین ہوں گے ، ارشد خان کو ایم ڈی پی ٹی وی کیلئے نامزد کیا جا سکتا ہے ،ہارون شریف سرمایہ کاری بورڈ کے چیئرمین ہوں گے ، کابینہ اجلاس میں وزارت کیڈ ختم کرنے کا فیصلہ کیا گیا اورسی ڈی اے وزارت داخلہ کے ما تحت کام کرے گا، 34ہزار459کنال جگہ کوکمرشل استعمال میں لایا جائے گا، گزشتہ 5سال میں وزیراعظم آفس نے 2.3ارب روپے خرچ کئے ، سی ایم آفس میں 2.9ارب روپے خرچ کئے گئے ،گورنر پنجاب نے ایک 1.29ارب روپے خرچ کئے ،گورنر سندھ نے 5سال کے دوران 1.4ارب روپے خرچ کئے ۔وزیر اطلاعات نے کہا پاکستان میں ہسپتالوں کی حالت بہت خراب ہے ، ڈیمز فنڈ کا آغاز چیف جسٹس نے کیا ، کابینہ نے چیف جسٹس کی کوششوں کا خیر مقدم کیا، کمزور طبقات کے ساتھ کھڑا ہونا حکومت کا فرض ہے ۔وزیر اطلاعات نے کہا پاکستان قرضوں پر سود کی مد میں روزانہ 500ارب روپے ادا کر رہا ہے ، وزیراعظم آفس کے ہیلی کاپٹرز ائیر ایمبولینس کیلئے این ڈی ایم اے کو فراہم کئے جا سکتے ہیں۔انہوں نے کہا فنانس بل کابینہ کے ایجنڈے پر نہیں تھا ۔فواد چودھری نے کہا انکم ٹیکس آرڈیننس کو پارلیمنٹ میں لایا جائے گا، انکم ٹیکس ترمیمی آرڈیننس کی سفارشات کابینہ نے مسترد نہیں کیں،سی ڈی اے نے اسلام آباد میں 7.5 ارب روپے کی سرکاری زمین خالی کرائی ہے ، آپریشن جاری رہے گا۔نجی ٹی وی کے مطابق فواد چودھری نے کہا کہ پی ٹی وی کا بورڈ آف گورنرزتشکیل دے دیا ہے ، بورڈ کے چیئرمین کووزیرکی حیثیت حاصل ہوگی،ڈی جی آئی ایس پی آر سمیت بورڈ کے 8 ارکان ہوں گے ۔ فواد نے کہا ڈیمز فنڈ کیلئے کابینہ نے پوری رپورٹ پیش کی، ڈیمز فنڈ کوٹیکس سے مستثنیٰ کردیا جائے گا۔انہوں نے کہا نوازشریف نے بطور وزیراعظم 2 ارب 30کروڑ روپے خرچ کئے ، شہبازشریف نے 5 سالوں میں 2 ارب 90 کروڑ روپے خرچ کئے ۔