لاہور (خصوصی رپورٹر ،مانیٹرنگ ڈیسک) مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف نے لاہور میں جلسہ عام سے خطاب اور انٹرویو میں کہا کہ عوام نے 6 جولائی کا فیصلہ مسترد کر دیا ، عوام اپنا فیصلہ کل سنائیں گے ۔سابق وزیر اعلیٰ پنجاب نے کہا کہ نواز شریف کے استقبال کیلئے پورا لاہور امڈ آئے گا ، باقی معاملات 25جولائی کے الیکشن میں چھوڑ دیں ، پی ٹی آئی نے اورنج لائن میں جو مخالفت کی عوام اس کا جواب ن لیگ کو جتوا کر دیں ۔ شہبازشریف کا کہنا تھا کہ اورنج لائن منصوبے میں عمران خان نے رکاوٹ ڈالی ، 16 ماہ تک عدالت میں کیس چلتا رہا ، ہم اگر دوبارہ منتخب ہوئے تو بجلی کی قیمت کم کریں گے ، عوام کا بجلی کا بل آدھا ہو جائے گا۔شہباز شریف کا کہنا تھا کہ 2010 میں مینارِ پاکستان میں کالی پٹی باندھ کر 2 مہینے بیٹھا رہا، لیکن ہم نے پتھر نہیں مارے ، دھرنے نہیں دیے ۔ لوڈ شیڈنگ کے باعث واپڈا کے لوگوں کا گھیراؤ ہوتا تھا، اب ہمارے 5 سالوں میں بجلی آئی یا نہیں؟ان کا کہنا تھا کہ جہاں کرپشن کے انبار لگے ہیں انہیں کیوں نہیں پوچھا جاتا۔شہباز شریف نے کہا کہ بلدیاتی نمائندوں کو 25 جولائی تک معطل کیا گیا جو 26 جولائی کو پھر بحال ہوجائیں گے ۔ایک انٹرویو میں محمد شہباز شریف نے کہا ہے کہ انتخابات میں بائیکاٹ کا کوئی آپشن زیر غور ہے اور ناہی ایسی کوئی سوچ دور دور تک ہماری ذہن ہے ،شفاف الیکشن میں ووٹ کی طاقت سے جو بھی جیتا ہمیں قبول ہو گا۔نواز شریف کے خلاف نیب عدالت کے فیصلے میں صاف لکھا ہے کہ نیب کرپشن کا کوئی الزام ثابت نہیں کر سکا۔ صرف مفروضوں پر سزا سنائی گئی۔ فلیٹس کی ملکیت بھی نواز شریف کی ثابت نہیں ہوئی ہے ۔ہر قیمت پر نواز شریف کا استقبال کریں گے ،مجھے گرفتار کرنا چاہتے ہیں تو میں تیار ہوں۔ تمام تر منفی ہتھکنڈوں کے باوجود ہم الیکشن جیت رہے ہیں۔ ہمارا تماشا دیکھ کر خوش ہونے والے سیاسی مخالفین یاد رکھیں کل ان کی باری بھی آ سکتی ہے ۔پی ٹی آئی کی اربوں کی کرپشن پر کسی کو بلایا گیا،ہماری دن رات پیشیاں ہو رہی ہیں۔ عمران خان کو کل اس سے بھی برے سلوک کا سامنا کر نا پڑ سکتا ہے ۔جھوٹا شخص پاکستان کا وزیر اعظم بن گیا تو دنیا میں ہمارا کتنا مذاق بنے گا۔