آصف محمود



کشمیر کا مقتل اور یہ ’ ملنگ لوگ‘


کشمیر میں کرفیو کا عذاب اترا ہوا ہے اور آسام میں 19 لاکھ مسلمانوں کو شہریت سے محروم کر دیا گیاہے۔سوال یہ ہے روشن خیالی کے وہ’ ملنگ لوگـ‘ کہاں ہیں ، رعونت کے تکیے پر حقارت کی بھنگ پی کر جو دھمالیں ڈالا کرتے تھے : صاحب ہم کسی دین کے پیروکار نہیں ، ہمارا مذہب تو انسانیت ہے۔مردودانِ حرم کہیں مزید سیکولر تو نہیں ہو گئے کہ اپنے اختیاری مذہب سے بھی بے زار ہو گئے ہوں؟داغ دہلوی نے کہا تھا: روز معشوق نیا ، روز ملاقات نئی۔ قومی بیانیے سے لاتعلقی اور اس کا تمسخر اڑانا ان حضرات
منگل 03  ستمبر 2019ء

ہم آہستہ آہستہ مرتے ہیں

هفته 31  اگست 2019ء
آصف محمود
گائوں میں اپنے خاندان کے قبرستان میں کھڑا تھا اور کچھ یاد نہیں آ رہا تھا کون کہاں دفن ہے۔ صرف دو قبروں پر کتبے لگے تھے ۔مٹی کی کچھ ڈھیریاں تھیں اور یادوں کا ہجوم۔ان ڈھیریوں میں میرے اپنے ہی دفن تھے۔ مگر کون کہاںتھا ، کچھ معلوم نہ تھا۔کہیں پڑھا تھا ، اچانک ہمیں موت نہیں آتی۔ ہم آہستہ آہستہ مرتے ہیں۔ ہمارے دوست ، احباب ، رشتہ داروں میں سے جب کوئی ہم سے بچھڑتا ہے تو ان کے ساتھ ہمارے وجود کا ایک حصہ بھی دفن ہو جاتا ہے۔اپنے وجود کے یہ ٹکرے دفن کرتے کرتے
مزید پڑھیے


کیا اقوام متحدہ کی قراردادیں بے معنی ہو چکی ہیں؟

جمعرات 29  اگست 2019ء
آصف محمود
بعض حلقوں کی جانب سے کہا جاتا ہے کہ شملہ معاہدے کے بعد اقوام متحدہ کی قراردادوں کی کوئی حیثیت نہیں رہی۔ اس معاہدے میں ہم بھارت کے ساتھ اپنے تنازعات کو دو طرفہ مذاکرات کے ذریعے حل کرنے کی بات کر چکے ہیں اور اب یہ ایک دو طرفہ معاملہ ہے اور اقوام متحدہ کی قراردادیں اب کوئی اہمیت نہیں رکھتیں کیونکہ ویانا کنونشن کے آرٹیکل 59 کے تحت جب فریقین باہم کوئی نیا معاہدہ کر لیتے ہیں تو پرانا معاہدہ کالعدم سمجھا جاتا ہے۔ یہ موقف درست نہیں ہے۔ اس کے ابلاغ کی دو ہی صورتیں ہو سکتی
مزید پڑھیے


پاکستان نے کشمیر میں فوج کیوں اتاری؟

بدھ 28  اگست 2019ء
آصف محمود
کیا آپ جنرل گریسی کو جانتے ہیں؟ یہ پاکستان کے دوسرے کمانڈر انچیف تھے ۔قائد اعظم نے انہیںکشمیر پر حملے کا حکم دیا تھا اور انہوں نے اس حکم پر عمل کرنے سے انکار کر دیا تھا۔دل چسپ بات یہ ہے کہ اکتوبر 1947ء میں قائد اعظم کے حکم پر عمل نہ کرنے والے جنرل گریسی کو صرف چھا ماہ بعد ہی حکومت پاکستان سے تحریری طور پر یہ کہنا پڑا کہ پاکستان کی سلامتی خطرے میں ہے اور اسے بچانا ہے تو فوری طور پر کشمیر میں فوجیں بھیجی جائیں۔کیا آپ غور نہیں فرمائیں گے کہ جو جرنیل
مزید پڑھیے


کشمیر۔۔۔۔کیا پاکستان نے جارحیت کی تھی؟

منگل 27  اگست 2019ء
آصف محمود
اب آئیے اس الزام کی طرف کہ یہ پاکستان تھا جس نے ’ سٹینڈ سٹل‘ معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کشمیر میں پہلے مسلح قبائل بھیجے اور پھر فوج اتار دی اور اس کانتیجہ یہ نکلا کہ مہاراجہ نے بھارت سے الحاق کر لیا۔ سٹینڈ سٹل ایگریمنٹ کی آڑ میں مسلمانوں کا جو قتل عام کیا گیا اس پر ٹائمز آف لندن ، سنیڈن کرسٹوفر ، وید بھیسن اور لُو پوری وغیرہ کی گواہیاں آپ گذشتہ کالم میں پڑھ چکے۔اب آگے کی سنیے۔ مہاراجہ نے صرف آر ایس ایس اور اکالی دل کے جتھوں کے ذریعے مسلمانوں کا قتل عام
مزید پڑھیے




’’سٹینڈ سٹل ایگریمنٹ‘‘۔۔۔حقائق کیا ہیں؟

هفته 24  اگست 2019ء
آصف محمود
ایک صریحا غلط بات یہ کہی جاتی ہے کہ پاکستان کے ساتھ کشمیر کے مہاراجہ نے ’ سٹینڈ سٹل ایگریمنٹ‘‘ کر رکھا تھا لیکن پاکستان نے اس کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کشمیر کی معاشی ناکہ بندی کی ، پھر قبائل کو لڑنے کے لیے بھیج دیا ، جارحیت کی اور اقوام متحدہ نے بھی اس کو جارح قرار دے دیا۔اس بے بنیاد استدلال کے بعد یہ نتیجہ اخذ کیا جاتا ہے کہ پاکستان جارحیت نہ کرتا تو مہاراجہ کشمیر کا الحاق بھارت کے ساتھ نہ کرتا۔ چلیے آج اسی پہلو پر بات کر لیتے ہیں۔ سب سے پہلے یہ دیکھتے
مزید پڑھیے


کشمیر ۔۔۔۔۔ انٹر نیشنل لاء کیا کہتا ہے؟

جمعرات 22  اگست 2019ء
آصف محمود
’مطالعہ پاکستان‘ کی پھبتی کس کر پاکستان کے قومی بیانیے کوبے توقیر کرنے کی کوشش کرنے والے سورمائوں نے اب کشمیر پر پڑائو ڈال لیا ہے ۔ قوم کو باور کرایا جا رہا ہے کہ کشمیر پر اقوام متحدہ کی قراردادوں کا حوالہ دینے کی کوئی ضرورت نہیں کیونکہ وہ صرف حق خود ارادیت کی بات نہیں کر رہیں بلکہ وہ بھی کہہ رہی ہیں کہ پہلے پاکستان آزاد کشمیر سے فوجیں ہٹائے ، اس کے بعد استصواب رائے ہو گا اور اس استصواب رائے تک بھارت کی فوج کشمیر میں موجود رہے گی۔ اس کے بعد یہ حضرات فوری
مزید پڑھیے


کشمیر ۔۔۔۔ عربی ادب میں؟

منگل 20  اگست 2019ء
آصف محمود
اردو ادب میں فلسطین کا توبہت ذکر ہے سوال یہ ہے کیا عربی ادب میں کشمیر پر لکھی گئی دو سطریں بھی تلاش کی جا سکتی ہیں؟ انتظار حسین کا افسانہ ’ کانا دجال‘ میں نے بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی کی لائبریری میں بیٹھ کر پڑھا تھا۔مسلمانوں کے سرنڈر کی خبر سن کر بوڑھا دیہاتی جب ٹھنڈی سانس لے کر کہتا ہے : ’ جہاں ہمارے حضور ﷺ بلند ہوئے تھے وہاں ہم پست ہو گئے‘‘ تو آنکھیں بھر آتی ہیں۔ میں اس افسانے کا حسن بیان نقل کرنے سے قاصر ہوں۔ آپ خود پڑھ کے دیکھ لیجیے
مزید پڑھیے


حکومت نے کشمیر کا سودا کر دیا؟

هفته 17  اگست 2019ء
آصف محمود
تو کیا حکومت نے کشمیر کا سودا کر لیا؟کچھ ساکنان ِ کوچہِ دلدار اپنے روایتی اہتمام کے ساتھ اس کا جواب اثبات میں دے رہے ہیں اور کچھ اپنی دائمی سادہ لوحی میں اس پروپیگنڈے سے متاثر ہو رہے ہیں۔ بہت سارے معاملات میں حکومت کا ناقد ہونے کے باوجود میرے نزدیک البتہ اس سوال کا جواب نفی میں ہے۔ ایسا ممکن ہی نہیں۔ دشمن باہر سے حملہ آور ہے اور کچھ لوگ اندر سے۔یہ جو اندر سے حملہ آور ہیں یہ دشمن سے کم خطرناک نہیں۔یہ منصوبہ بندی سے وار کرتے ہیں ، افواہیں پھیلاتے ہیں ، مایوسی کو فروغ
مزید پڑھیے


شاہ محمود قریشی کیا کہنا چاہتے ہیں؟

جمعرات 15  اگست 2019ء
آصف محمود
شاہ محمود قریشی صاحب کا غیر معمولی بیان میرے سامنے رکھا ہے اور میں اسے سمجھنے کی کوشش کر رہا ہوں۔ آپ بھی اس مشق کا حصہ بن سکتے ہیں۔ یہ ذہن میں رکھیے یہ مراد سعید یا شیخ رشید کا بیان نہیں ہے، یہ پاکستان کے وزیر خارجہ کا بیان ہے۔ یہ کسی جلسہ عام میں اچھالا گیا فقرہ بھی نہیں ہے، یہ بات آزاد کشمیر میں کھڑے ہو کر کہی گئی ہے۔ غیر ذمہ دار اور غیر سنجیدہ فقرے بازی شاہ محمود قریشی کا عمومی مزاج بھی نہیں ہے۔ انہیں خوب احساس ہو گا کہ وہ
مزید پڑھیے