BN

اثر چوہان



’’کالا باغ ڈیم ؟‘‘۔ ریفرنڈم کرالیں!


کل (15 اگست کو ) بھارت نے اپنا 72 واں یوم آزادی منایا لیکن، پاکستان سمیت دُنیا بھر کے پاکستانیوں اور کشمیری مسلمانوں نے اِسے ’’یوم سیاہ‘‘ (Black Day) کے طور پر منایا۔ دُنیا بھر میں قائم بھارتی سفارت خانوں کے باہر احتجاج کِیا گیا، مقبوضہ کشمیر میں تو کئی مقامات پر بھارتی پرچم (ترنگا ) کو بھی نذر آتش کِیا گیا ۔ کئی بھارتی سیاسی راہنمائوں نے کہا کہ ’’ مقبوضہ کشمیر کی حیثیت تبدیل کرنے کے خطرناک نتائج برآمد ہوں گے‘‘۔ صدر جناب عارف اُلرحمن علوی، وزیراعظم عمران خان ، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ ، صدر آزاد
جمعه 16  اگست 2019ء

کشمیریوں سے یک ؔجہتی / پاکستانیوں سے مُؤاخاتؔ

بدھ 14  اگست 2019ء
اثر چوہان
معزز قارئین!۔ پاکستان کی ہر حکومت، مقبوضہ کشمیر کے عوام کی بھارتی تسلط سے نجات حاصل کرنے کی جدوجہد کی حمایت میں کئی سال سے ہر سال 5 فروری کو ، کشمیریوں سے یک جہتی کا دِن منا رہی ہے لیکن، بھارتیہ جنتا پارٹی کے وزیراعظم نریندر مودی کی طرف سے بھارتی آئین میں مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت سے متعلق آرٹیکل 370 اور 35 A ختم کرنے کے نتیجے میں مقبوضہ کشمیر میں حریت پسندوں نے جس انداز میں بغاوت کردی ہے اُس پر فی الحقیقت عالمی ضمیر جاگ اُٹھا ہے اور شاید اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل کا
مزید پڑھیے


’’ قائد ِملّت ؒ ‘‘ کا مُکّا اور ’’ بے تیغ سپاہی!‘‘

هفته 10  اگست 2019ء
اثر چوہان
معزز قارئین!۔ جب بھی مقبوضہ کشمیر میں حریت پسند کشمیریوں پر بھارت کی مسلح افواج کے ظلم و ستم کی داستان دہرائی جاتی ہے تو پاکستان کے حکمرانوں ، سیاستدانوں خاص طور پر تحریک پاکستان کے کارکنوں کی طرف سے اہل پاکستان کو علاّمہ اقبالؒ، قائداعظم محمد علی جناحؒ اور پاکستان کے پہلے وزیراعظم ’’ قائد ملّت ‘‘ خان لیاقت علی خانؒ ، کے افکار و نظریات سے آگاہ کرنے کا عمل تیز ہو جاتا ہے ۔ اِس بار بھی مودی حکومت کی طرف سے صدارتی فرمان کے ذریعے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت سے متعلق بھارتی آئین کے
مزید پڑھیے


حکومتؔ اور اپوزیشنؔ، غزوۂ تبوک ؔسے روشنی لے !

جمعه 09  اگست 2019ء
اثر چوہان
معزز قارئین!۔ خرابیٔ صحت کی بنا پر مَیں چند دِن تک کالم نہیں لکھ سکا ۔مودی حکومت کی طرف سے صدارتی فرمان کے تحت بھارتی آئین میں مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت سے متعلق آرٹیکل 370 اور 35 A ختم کرنے کے نتیجے میں مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت تبدیل کرنے کے واقعہ کے ردِ عمل میں مقبوضہ کشمیر میں حریت پسندوں کی سرگرمیاں تیز سے تیز تر ہوگئی ہیں ۔فی الحقیقت عالمی ضمیر جاگ اُٹھا ہے اور شاید اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل کا بھی ؟۔ 5 اگست کو وزیراعظم عمران خان کی صدارت میں قومی سلامتی
مزید پڑھیے


صادق ؔ سنجرانی ، سینٹ کے ،امینؔ،ٹھہرے!

هفته 03  اگست 2019ء
اثر چوہان
چیئرمین سینٹ جناب محمد صادق سنجرانی کے خلاف متحدہ اپوزیشن کی تحریک عدم اعتماد کی ناکامی سے یوں تو دو بڑی سیاسی پارٹیوں پاکستان مسلم لیگ (ن) اور پاکستان پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرینز ( پی۔ پی۔ پی۔ پی) کو شکست ہُوئی ہے لیکن، اصل ناکامی تو، متحدہ اپوزیشن کے متبادل چیئرمین سینٹ ’’ عوامی نیشنل پارٹی ‘‘میر حاصل خان بزنجو بلکہ اُن سے زیادہ امیر جمیعت عُلماء اسلام (فضل اُلرحمن گروپ) کو ہُوئی ہے۔ اِس لئے کہ اُنہوں نے تو، 28 جولائی کو کوئٹہ میں اپنی جمعیت کے "Million March" میں ہزاروں لوگوں سے خطاب کرتے ہُوئے وفاقی حکومت ( دراصل
مزید پڑھیے




عدالتی انقلابؔ جاری / لانگ ماؔرچ کی سیاست کاؔری!

بدھ 31 جولائی 2019ء
اثر چوہان
معزز قارئین!۔ آج 31 جولائی ہے آج سے دو سال اور تین دِن پہلے (28 جولائی 2017ء کو ) جب، (اُن دِنوں)چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار کے مقرر کردہ ، سپریم کورٹ کے جسٹس آصف سعید خان کھوسہ ، جسٹس اعجاز افضل خان ، جسٹس گلزار احمد ، جسٹس شیخ عظمت سعید اور جسٹس اعجاز اُلاحسن پر مشتمل سپریم کورٹ کے لارجر بنچ کے پانچوں جج صاحبان نے متفقہ طور پر آئین کی دفعہ "62-F-1" کے تحت (اُن دِنوں ) وزیراعظم میاں نواز شریف کو صادق ؔاور امین ؔنہ (ہونے ) پر تاحیات نااہل قرار دے دِیا
مزید پڑھیے


فضل اُلرؔحمن صاحب کا آزادی ماؔرچ ، اکتوبر ؔمیں؟

منگل 30 جولائی 2019ء
اثر چوہان
28 جولائی (اتوار) کو الیکٹرانک میڈیا پر سنایا اور دِکھایا گیا اور 29 جولائی ( پیر کو) پرنٹ میڈیا پر ۔ تصویر کے مطابق شائع کِیا گیا کہ ’’ امیر جمعیت عُلماء اسلام ( فضل اُلرحمن گروپ) کو ئٹہ میں "Million March" کے شُرکاء سے خطاب کر رہے ہیں اور اُنہوں نے "Warning" دِی (انتباہ کِیا )کہ ’’ اگر حکومت ( مرکزی حکومت یعنی وزیراعظم عمران خان کی حکومت ) نے اگست تک استعفیٰ نہ دِیا تو جمعیت عُلماء اسلام ( ف) اپنی دوسری اتحادی جماعتوں کو ساتھ لے کر اکتوبر میں اسلام آباد تک آزادی ؔمارچ کرے گی‘‘۔
مزید پڑھیے


جذبۂ ایمان کھپے !

جمعه 26 جولائی 2019ء
اثر چوہان
معزز قارئین!۔ آج پاکستان اور بیرونِ پاکستان ’’ مفسرِ نظریۂ پاکستان‘‘ تحریک پاکستان کے نامور مجاہد ڈاکٹر مجید نظامی کے دوست اور عقیدت مند ، اُن کی پانچویں برسی منا رہے ہیں ۔ جنابِ مجید نظامی 1928ء کو سانگلہ ہل میں پیدا ہُوئے تھے اور ایک بھرپور زندگی گزار کر 26 جولائی 2014ء کو خالقِ حقیقی سے جا ملے تھے۔ موصوف جب تک ، اِس دارِ فانی میں رہے ، علامہ اقبالؒ ، قائداعظمؒ اور مادرِ ملّت ؒ کے افکار و نظریات کے مطابق پاکستان کو ڈھالنے میں مصروف جدوجہد رہے۔ مَیں 1960ء میں گورنمنٹ کالج سرگودھا میں بی۔اے
مزید پڑھیے


"Trump Card" of P.M. Imran Khan"

جمعرات 25 جولائی 2019ء
اثر چوہان
معزز قارئین!۔ جنرل محمد ایوب خان نے 27 اکتوبر1958ء کو چیف مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر اور صدرِ پاکستان کا منصب سنبھالاتھا ، پھر موصوف نے ’’فیلڈ مارشل کا اعزاز ‘‘بھی حاصل کرلِیا تھا اور وہ مشرقی اور مغربی پاکستان کے 80 ہزار منتخب ارکانِ بنیادی جمہوریت کے ووٹوں سے، 2 جنوری 1965ء کا صدارتی انتخاب بھی جیت گئے تھے، جس میں قائداعظم ؒ کی ہمشیرۂ مادرِ ملّت محترمہ فاطمہ جناحؒ اُن کی متحارب امیدوار تھیں۔ صدر محمد ایوب خان کو آہستہ آہستہ یہ احساس ہونے لگا تھا کہ ’’ اب وہ ، واحد "Super Power" امریکہ کے آشیر واد سے
مزید پڑھیے


’’وزیراعظم پاکستان "Virginia"کے شہر لاہور ؔمیں؟‘‘

پیر 22 جولائی 2019ء
اثر چوہان
وزیراعظم پاکستان جناب عمران خان امریکہ کے تین روزہ سرکاری دورے پر واشنگٹن پہنچ گئے۔ وہاں اُن کی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات ، پاکستانی کمیونٹی کے بڑے اجتماع سے خطاب اور بہت سی اہم شخصیات سے ملاقاتوں کا پروگرام ہے ۔ جنابِ وزیراعظم کے وفد میں چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ اور پاکستان کی کئی اہم شخصیات بھی شامل ہیں ۔ جو کچھ ہوگا وہ، الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا پر آ جائے گا ۔ وہ جانیں اور اُن کا کام؟۔ معزز قارئین!۔ مَیں نے اپنے کئی کالموں میں لکھا تھا/ ہے کہ ’’ مَیں 1960ء میں
مزید پڑھیے