BN

ارشاد احمد عارف


موسم اچھا‘ پانی وافر‘ مٹی بھی زرخیز


چالیس سال قبل لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل درویش صفت میجر جنرل (ر) محمد حسین انصاری نے سرکاری زمین پر قابض نرسری مالکان کو بے دخل کر کے اپر مال سے ٹھوکر نیاز بیگ تک نہر کنارے درخت لگانے کا آغاز کیا تو اس وقت کے گورنر لیفٹیننٹ جنرل غلام جیلانی خان نے انہیں بُلایا اور پوچھا کہ وہ نہر کے دونوں طرف کس قسم کے درخت لگا رہے ہیں‘ انصاری صاحب نے بتایا کہ انہوں نے جامن‘شیشم‘ نیم‘ پیپل اور اس نوعیت کے دیسی درخت لگانے کا فیصلہ کیا ہے‘ غلام جیلانی خان جو خود بھی سبزے کے
منگل 11  اگست 2020ء

تلخ سچائی

جمعه 07  اگست 2020ء
ارشاد احمد عارف
شاہ محمود قریشی اپنی جگہ سچے ہیں ملائشیا کانفرنس کے موقع پر ہمارے دیرینہ دوست سعودی عرب نے پاکستان کو بلیک میل کیا‘عمران خان کو کانفرنس میں شرکت کا مزہ چکھانے کے لئے لاکھوں پاکستانیوں کی ملک بدری اور معاشی مفادات کو نقصان پہنچانے کی دھمکی دی گئی‘ مہاتیر محمد خاموش رہے مگر طیب اردوان نے محتاط الفاظ میں برادر ملک کے ’’حسن سلوک‘‘ کا تذکرہ کیا لیکن ردعمل ظاہر کرنے کا یہ کون سا موقع ہے؟ یہ کانفرنس عربوں کے خلاف منعقد کی جا رہی تھی نہ اس کے مقاصد میں مسلمانوں کے اتحاد کو نقصان پہنچانے کا نکتہ
مزید پڑھیے


کب اشک بہانے سے کٹی ہے شب ہجراں

جمعرات 06  اگست 2020ء
ارشاد احمد عارف
قوم نے یوم استحصال کشمیر منا لیا‘ حکومت نے جرأت کی‘ پاکستان کا حتمی سیاسی نقشہ پیش کردیا جس کے مطابق مقبوضہ کشمیر‘ لداخ اور جموں پاکستان کا حصہ ہیں۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا دعویٰ ہے کہ بھارت نے مختلف اطراف سے پاکستان کو مذاکرات کی پیشکش کی‘ یہ سنجیدہ پیشکش تھی مگر پاکستان نے 5 اگست کے یکطرفہ اقدام کی واپسی تک مذاکرات کی میز پر بیٹھنے سے انکار کردیا‘لیکن؟کشمیری عوام بھارتی محاصرے سے آزاد ہوئے نہ شہادتوں اور گرفتاریوں میں کمی آئی اور نہ نام نہاد عالمی برادری کے دبائو پر ایک سال سے اپنے گھروں
مزید پڑھیے


لفظ کچھ دائیں بائیں کرتا ہے

منگل 04  اگست 2020ء
ارشاد احمد عارف
سوچا عید کے چوتھے روز قارئین کے ذوق اور ذائقے کو سیاسی موضوعات سے بوجھل کرنے سے بہتر ہے کہ علمی و ادبی لطائف سے محظوظ کیا جائے سو پڑھیے اور لطف اٹھائیے۔ ٭۔سرسید احمد خان ٹرین میں سفر کر رہے تھے کہ ان کے ڈبے میں ایک انگریز آ کر بیٹھ گیا۔ کچھ دیر بعد انہیں بھوک محسوس ہوئی تو انہوں نے اپنا ناشتہ دان کھول کر رکھا اور ہاتھ دھونے کے لئے غسلخانہ میں چلے گئے‘ لوٹ کر آپ نے ناشتہ دان غائب پایا۔ دراصل انگریز نے ان کی غیر حاضری میں ناشتہ دان چلتی گاڑی سے باہر پھینک دیا
مزید پڑھیے


جو تری بزم سے نکلا سو پریشاں نکلا

جمعه 31 جولائی 2020ء
ارشاد احمد عارف
ظفر مرزا اور تانیہ ایدروس کے استعفے دونوں معاونین خصوصی کی دوہری شہریت کا شاخسانہ ہیں یا مالی معاملات میں گڑ بڑ کا نتیجہ؟فی الحال وثوق سے کچھ کہنا مشکل ہے‘ البتہ عوامی تنقید اور دبائو پر استعفیٰ کی روایت پاکستانی سیاست میں ایک نئی روایت ہے۔ کہنے کو یہ بھی کہا جا سکتا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان نے دونوں کو معاونین خصوصی کا منصب سونپتے وقت دوہری شہریت کے مضمرات پر غور کیوں نہ کیا؟ آخر اپنی ٹیم کے ارکان کا انتخاب کرنے سے پہلے مناسب چھان پھٹک اور خوب غورو خوض کی ضرورت کیوں محسوس نہیں
مزید پڑھیے



نصیحت

منگل 28 جولائی 2020ء
ارشاد احمد عارف
’’میں نے شروع ہی میں اپنے ایک جرم کا جس کو میں چھپاتا رہا‘ ہلکا سا اقبال کر لیا ہے۔ یعنی شعر و سخن کا ذوق ۔ میں نے جب آنکھ کھولی تو ملک میں امیر و داغ کے معرکے تھے۔ میرے ایک استاد شمس العلماء مولانا حفیظ اللہ صاحب مدرس دارالعلوم جو جنرل عظیم الدین خان کے زمانہ میں رائپور میں رہے تھے اور وہاں منشی امیر احمد صاحب مینائی کی صحبت برسوں اٹھائی تھی۔ وہ اکثر امیر مرحوم کے تذکرے کیا کرتے تھے اور ان کے شعر سناتے تھے۔ ایک اور اتفاق یہ ہے کہ حضرت امیر مینائی
مزید پڑھیے


اللہ اکبر

اتوار 26 جولائی 2020ء
ارشاد احمد عارف
رجب طیب اردوان کا شکریہ۔جمعتہ المبارک کو اس نے پورے عالم اسلام کے لئے یوم عید بنا دیا‘ مسجد آیا صوفیہ میں نماز جمعہ کی ادائیگی پر صرف ترکی کے کروڑوں مسلمان شاداں نہ تھے‘ مشرق و مغرب میں بسنے والے مسلمانوں کی خوشی بھی دیدنی تھی‘ سیکولرزم کے لبادے میں کمال اتاترک اور اس کے مذہب دشمن ساتھی عصمت انونونے مسجد آیا صوفیہ کو عجائب گھر میں تبدیل کر کے دنیا بھر کے مسلمانوں کے قلب و روح پر جو گہرا زخم لگایا تھا‘ رجب طیب اردوان نے اس پر مرہم رکھ دیا‘ عدالتی فیصلے پر عملدرآمد روکنے
مزید پڑھیے


ہو فکر اگر خام تو آزادیٔ افکار

جمعه 24 جولائی 2020ء
ارشاد احمد عارف
سوشل میڈیا کے فوائد و نقصانات پر دنیا بھر میں بحث جاری ہے‘ شراب کے ضمن میں قرآن مجید نے ایک ابدی اُصول بیان کیا‘ اس کے نقصانات فوائد سے زیادہ ہیں‘ سوشل میڈیا کو بھی اسی اُصول پر جانچنے کی ضرورت ہے پاکستان میں مادر پدر آزادی کے علمبردار وںکا مگراصرار ہے کہ ریاست‘ پارلیمنٹ ‘ عدالت اور کسی ادارے کو یہ حق حاصل نہیں‘سوشل میڈیا کو ریگولرائز کرنا انسان کے بنیادی حق‘ اظہار رائے کے حق کو سلب کرنے کے مترادف ہے۔سپریم کورٹ نے قابل اعتراض مواد کی بندش پر پی ٹی اے سے باز پرس کی تو
مزید پڑھیے


آئیں گے غساّل کابل سے کفن جاپان سے

جمعرات 23 جولائی 2020ء
ارشاد احمد عارف
1973ء کے متفقہ آئین میں منتخب عوامی نمائندوں کے لئے دوہری شہریت رکھنے پر پابندی ہے۔ دوہری شہریت رکھنے والا شخص بنیادی طور پر دو ریاستوں کا وفادار ہوتا ہے ۔امریکہ اور بھارت سمیت دنیا کے بیشتر قابل ذکر ممالک میں جونہی کوئی شخص ان کی شہریت حاصل کرتا ہے اُسے پہلی شہریت ترک کرنی پڑتی ہے‘ وجہ بالکل واضح ہے کہ دوہری شہریت سے انسان کی وفاداری منقسم ہوتی ہے اور وہ مشکل گھڑی میں ایک ریاست سے جس کا وہ شہری ہے بے وفائی کا مرتکب ہو سکتا ہے۔ منتخب عوامی نمائندوں کے لئے دوہری شہریت کی ممانعت
مزید پڑھیے


اس میں کچھ پردہ نشینوں کے بھی نام آتے ہیں

منگل 21 جولائی 2020ء
ارشاد احمد عارف
بالآخر پی ٹی آئی حکومت کا ایک مالیاتی سکینڈل آ ہی گیا‘ لاہور رنگ روڈ منصوبے میں ردوبدل کی کوشش اگرچہ عمران خان نے ناکام بنا دی‘ صوبائی وزیر اسد کھوکھر‘ صوبائی سیکرٹری سروسز شعیب اکبر ‘کمشنر لاہور آصف بلال لودھی اِدھر اُدھر ہو گئے مگر منصوبے میں ردوبدل کے اصل کردار بچ گئے شائد عمران خان کو جُل دینا آسان ہے اور بندر کی بلا طویلے کے سر ڈال کر اصل کرداروں کو بچا لینا یار لوگوں کے لئے بائیں ہاتھ کا کھیل۔ ورنہ توقع یہ تھی کہ اربوں روپے کی اس واردات میں ملوث تمام کرداروں کو سزا
مزید پڑھیے