BN

ارشاد احمد عارف



چوروں کی بارات


ریاست مدینہ کے قیام اور تبدیلی کا سفر جاری رہے گا یا ریورس گیئر لگ سکتا ہے؟ یہ بنیادی سوال ہے۔ یہ زمانہ طالب علمی کا واقعہ ہے‘ دو تین دوستوں کے ساتھ اسلام آباد جانے کا موقع ملا تو اسمبلی کا اجلاس دیکھنے چلے گئے۔ اتفاق سے یہ پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس تھا۔ ان دنوں افغان حکمران سردار دادو نے پاکستان کو دھمکیاں دی تھیں اور اجلاس سرحدی صورتحال پر غور کے لئے بلایا گیا تھا۔ مہمانوں کی گیلری میں ہمارے ساتھ دو تین بزرگ بیٹھے تھے جن کا جھکائو اپوزیشن کی طرف تھا۔ وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو ایوان
جمعرات 17 جنوری 2019ء

تازہ فیصلہ

منگل 15 جنوری 2019ء
ارشاد احمد عارف
سپریم کورٹ کا تازہ فیصلہ میاں نواز شریف کے سیاسی مخالفین کے لئے مایوس کن ہے مگر مسلم لیگ (ن) کے لئے بھی حوصلہ افزا نہیں۔ چیف جسٹس ثاقب نثار‘ ان کے جانشین جسٹس آصف سعید کھوسہ اور جسٹس گلزار احمد اسلام آباد ہائی کورٹ کا فیصلہ برقرار اور ضمانت بحال رکھنے والے بنچ میں شامل تھے اور یہ فیصلہ دے کر انہوں نے ثابت کیا کہ دیانتدار‘ بااصول اور آئین و قانون کے پابند جج صرف مقدمے کی نوعیت دیکھتے ہیں‘ ملزم یا مدعی کی حیثیت کو خاطر میں نہیں لاتے۔ میاں نواز شریف اور ان کی صاحبزادی نے
مزید پڑھیے


عوام دشمن فیصلہ

اتوار 13 جنوری 2019ء
ارشاد احمد عارف
ادویات کی قیمتوں میں اضافہ عوام دشمن فیصلہ ہے اور حکومت کی ڈرگ مافیا کے سامنے پسپائی۔ شرمناک پسپائی۔ جلد بازی ہمارا قومی شیوہ ہے اور بے صبری مزاج کا حصہ۔کچھ توقعات حکمرانوں نے خود بڑھائیں‘ باقی کسر میڈیا نے پوری کر دی۔ عمران خان کی حکومت کو اقتدار میں آئے ابھی چار ماہ پورے نہیں ہوئے‘ تاثر مگر یہ ہے کہ چار سال گزر چکے ‘عمران خان نے یہ بھی نہیں کیا‘ وہ بھی نہیں کیا اور باقی ماندہ مدت میں شائد کچھ کر بھی نہ پائیں۔مسلم لیگ(ن) اور پیپلز پارٹی شکوہ بلکہ سینہ کوبی کرے تو حق بجانب ہے
مزید پڑھیے


توہین؟ کیا مطلب

جمعه 11 جنوری 2019ء
ارشاد احمد عارف
نیب کے سربراہ جسٹس جاوید اقبال کے منہ میں گھی شکر‘ کوئی دوسرا احتساب سے بالاتر نہیں تو عمران خان کیونکر؟ بجا کہ وہ وزیر اعظم ہیں اور ایک مقبول سیاسی جماعت کے سربراہ‘ ایک کروڑ ستر لاکھ پاکستانی ووٹروں کے محبوب رہنما۔ مگر قانون کی نظر میں وہ دوسرے شہریوں کے برابر ہیں‘ میاں نواز شریف اور آصف علی زرداری کی طرح۔ میاں نواز شریف وزیر اعظم کے طور پر جے آئی ٹی کے روبرو پیش ہوتے رہے اور آصف علی زرداری سابق صدر ہیں مگر بنکنگ کورٹ میں پیش ہونے پر مجبور۔ میاں نواز شریف اور آصف علی
مزید پڑھیے


پستی کا کوئی حد سے گزرنا دیکھے

جمعرات 10 جنوری 2019ء
ارشاد احمد عارف
اومنی گروپ‘ زرداری گروپ اور بحریہ ٹائون کا کیس اب نیب ہی دیکھے گی‘ دولت اکٹھی کرنے اور اسے باہر منتقل کرنے کے لیے ’’مرد حر‘‘ کے ساتھیوں نے جو جتن کئے‘ سرکاری اداروں کو جس مہارت سے استعمال کیا اور سندھ بینک کی خدمات کو ناکافی سمجھ کر سمٹ بنک اور سلک بینک وجود میں لائے گئے‘ وہ جے آئی ٹی رپورٹ کا حصہ ہے۔ اس مہارت سے زیادہ‘ وہ ڈھٹائی قابل داد ہے‘ زرداری صاحب کے حاشیہ نشیں اور عقیدت مند جس کا مظاہرہ اپنے بیانات اور ٹی وی انٹرویوز میں فرما رہے ہیں۔ وزیراعلیٰ سندھ اور بلاول
مزید پڑھیے




قوم کو اُلّو بنا جمہوریت کے نام پر

منگل 08 جنوری 2019ء
ارشاد احمد عارف
اللہ کرے، پیپلز پارٹی کے رہنمائوں بالخصوص لطیف کھوسہ اور مرتضیٰ وہاب کی خوشیاں دائمی ہوں۔ لطیف کھوسہ قابل وکیل ہیں۔ اگر وہ سمجھتے ہیں کہ نیب بھی جے آئی ٹی کی رپورٹ کو اٹھا کر پھینک دے گی کہ اس پر کارروائی نہیں ہو سکتی تو ہم آپ بھلا کون انہیں جھٹلانے والے۔ لیکن پیپلز پارٹی کی قانونی قیادت کی خوشی کہیں ویسی ہی خوش فہمی نہ ہو جو سپریم کورٹ کے پانچ رکنی بنچ کی طرف سے جے آئی ٹی کی تشکیل پر مسلم لیگی قیادت کو لاحق ہوئی تھی۔ فرق صرف اتنا ہے کہ پیپلز پارٹی زبانی
مزید پڑھیے


دن گنے جاتے تھے اس دن کے لئے

اتوار 06 جنوری 2019ء
ارشاد احمد عارف
اعظم سواتی عمران خان کی حکومت کے لئے بدنامی کا باعث بنے‘ جے آئی ٹی رپورٹ نے انہیں غریب خاندان سے زیادتی‘ اختیارات سے تجاوز‘ اسلام آباد پولیس کے پیشہ ورانہ فرائض اور کار سرکار میں مداخلت کا مرتکب قرار دیا جس پر انہیں استعفیٰ دینا پڑا‘ بابر اعوان کی طرح اعظم سواتی کے رضا کارانہ استعفیٰ پر تحریک انصاف کی حکومت کو داد ملی‘ ماضی میں ماڈل ٹائون سانحہ پر بھی کسی نے استعفے کا تکلف نہ کیا‘ رانا ثناء اللہ نے منصب چھوڑا مگر کچھ عرصے بعد دوبارہ سنبھال لیا‘ اعظم سواتی کے استعفیٰ کو ’’نئے پاکستان‘‘
مزید پڑھیے


چھچھوندر

جمعه 04 جنوری 2019ء
ارشاد احمد عارف
پہلی بار ایک مضبوط سکینڈل اپوزیشن کے ہاتھ لگا ہے۔ جلد بازی میں تحریک انصاف کی حکومت نے اپوزیشن کو پروپیگنڈے کا موقع فراہم کیا۔ منڈا/مہمند ڈیم کی تعمیر کے لئے منصوبہ بندی 2004ء سے جاری ہے۔ جولائی 2010ء میں نوشہرہ تباہ کن سیلاب کا نشانہ بنا تو دسمبر 2010ء میں سپریم کورٹ نے شہریوں کے جان و مال کی تباہی میں انتظامیہ کی ذمہ داری کا تعین کرنے کے لئے تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دی جس کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ اگر منڈا مہمند ڈیم مقررہ مدت میں مکمل ہوتا تو نوشہرہ ‘ چارسدہ اور دیگر علاقے تباہی سے بچ
مزید پڑھیے


یہ نصیب اللہ اکبر

جمعرات 03 جنوری 2019ء
ارشاد احمد عارف
وفاقی کابینہ نے 172افراد کے نام ای سی ایل سے نکالنے کا معاملہ کابینہ کی ذیلی جائزہ کمیٹی کے سپرد کر دیا ہے۔ اس فیصلے سے ایک تو یہ تاثر پختہ ہوا کہ جے آئی ٹی کی رپورٹ میں شامل افراد کے خلاف کارروائی کے لئے ریاست پُرعزم ہے‘ کسی قسم کی کمزوری دکھانے پر تیار نہیں۔ دوسرے نظرثانی کا عمل سترہ جنوری تک جاری رکھنا چاہتی ہے۔ پاکستان میں دیرینہ روائت یہ رہی کہ جو معاملہ کمیٹی کے سپرد ہو جائے وہ داخل دفتر سمجھو۔ کمیٹی کے سپرد معاملہ‘ پر غور اس وقت تک جاری رہتا ہے جب تک
مزید پڑھیے


سندھ کا اونٹ اور سیاست کی کروٹ

منگل 01 جنوری 2019ء
ارشاد احمد عارف
سندھ میں پیپلز پارٹی کی حکومت کو تبدیل کرنا مشکل نہیں‘ نتائج و عواقب کا مگر وفاقی حکومت کو ادراک ہونا چاہیے۔ سیاسی عصبیت کے فلسفے کا میں قائل ہوں نہ گلوبل ویلج میں اس کی گنجائش ہے۔ جب مختلف عصبیتیں دم توڑ رہی ہیں اور تعصب‘ تنگ نظری‘ منافرت اور قبائلی طرز کی جتھے بندی کو انسانیت اور جمہوریت کے علاوہ ہر سماج کے لئے زہر قاتل سمجھا جا رہا ہے ‘تو سیاسی عصبیت کا پرچار ذہنی عیاشی کے سوا کچھ نہیں ‘ویسے بھی میاں نواز شریف اور آصف علی زرداری کی مشکلات اور ان کے حامیوں کی بے
مزید پڑھیے