BN

ارشاد احمد عارف



چیلنج


اہم مقدمات کی تفتیش کرنے والے پولیس افسر کا وفاقی دارالحکومت سے اغوا بذات خود باعث تشویش مگر اس کا افغانستان میں قتل صرف تشویشناک نہیں‘ریاستی اداروں کے لیے شرمناک ہے۔ شہری زندگی کو محفوظ بنانے کے لیے نصب کیمرے کام آئے نہ اسلام آباد سے افغان سرحد تک موجود جگہ جگہ پولیس ناکے اور نہ سراغرساں اداروں کی پُھرتیاں۔ یہ مگر پہلا واقعہ نہیں‘ سابق وزیر اعظم مخدوم یوسف رضا گیلانی کا صاحبزادہ علی حیدر گیلانی ملتان اور سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کا برخوردار لاہور سے اسلحے کے زور پر اغوا کر کے افغانستان لے جایا گیا اور
جمعرات 15 نومبر 2018ء

سنگ وخشت مقید و سگ آزاد

منگل 13 نومبر 2018ء
ارشاد احمد عارف
ملازمتی مجبوری کے تحت مجھے نیا بینک اکائونٹ کھولنا پڑا‘ پتہ چلا کہ اب یہ جان جوکھوں کا کام ہے یہ دستاویز‘ وہ دستاویز‘ یہ تفصیل‘ وہ تفصیل۔ سر چکرا گیا۔ چند سال پیشتر مکان بیچا بیعانہ کا ڈرافٹ جمع کرایا تو دوسرے روز بنک سے فون آیا ذرا تشریف لائیے اور بنک کو مطمئن کیجئے کہ یہ رقم آپ کو کہاں سے ملی‘ حتیٰ کہ ایک بنک سے دوسرے بنک اکائونٹ میں رقم منتقل کی تو ٹیکس وکیل نے پوچھی کہ منتقلی کی وجہ پوچھی؟ کھاتہ دار کواپنے ہی اکائونٹ سے پچاس ہزار روپے سے زائد کی رقم نکلوانی
مزید پڑھیے


تخریب جاری مگر تعمیر؟

جمعه 09 نومبر 2018ء
ارشاد احمد عارف
ہر سو فساد برپا ہے۔ گلی، محلے، کوچہ و بازار اورپارلیمانی ایوانوں میں توتکار ‘ ہاتھا پائی اور لڑائی جھگڑا‘ تخریب، انتشار، خلفشار، بحران، ہیجان، قومی شیوہ‘صرف ہیجان واضطراب نہیںفکر وعمل اور خیال و کردار میں یکسوئی کم‘ بے صبری‘ مایوسی اور بے یقینی زیادہ۔ اس قدر پریشان خیالی کہ اقبال ہوتے تو پکار اٹھتے ، شیرازہ ہوا ملت مرحوم کا ابتر اب تو ہی بتا تیرا مسلمان کدھر جائے اس راز کو اب فاش کر ‘ اے روح محمدؐ آیات الٰہی کا نگہبان کدھر جائے آج یوم اقبالؒ ہے جس پر سالانہ چھٹی میاں نواز شریف کے دور میں
مزید پڑھیے


بیاں میں نکتہ توحید آ تو سکتا ہے

جمعرات 08 نومبر 2018ء
ارشاد احمد عارف
ناقدین مانیں ‘نہ مانیں عمران خان عوامی جمہوریہ چین سے خالی ہاتھ نہیں لوٹے۔ وزیر خزانہ اسد عمر ادائیگیوں کے توازن پر دبائو ختم ہونے کا انکشاف اسی باعث کر رہے ہیں۔ آسیہ بی بی کیس کے عدالتی فیصلے اور تحریک لبیک کے شدید ردعمل سے اگرچہ عمران خان کی پوزیشن کمزور ہوئی، تحریک لبیک کی قیادت کے غیر ذمہ دارانہ بیانات سے صرف آزاد عدلیہ کاامیج مجروح نہیں ہوا، ہنگامہ آرائی اور شہروں کی بندش سے ریاست کے تحکم اور دبدبے پر بھی سوال اٹھا، اپنے شہریوں اور سرمایہ کاری کے حوالے سے حساس چین بہرحال یہ سوچنے پر
مزید پڑھیے


جنگ کے بعد یاد آنے والا مُکّا

منگل 06 نومبر 2018ء
ارشاد احمد عارف
دھرنا ختم ہو گیا۔ اپنے پیچھے مگر بہت سے سوالات چھوڑ گیا۔ کچھ حقیقی اور کچھ غیر حقیقی۔ پاکستان میں عدالتی فیصلے کے خلاف یہ پہلا احتجاج نہ تھا۔ عدالتی فیصلوں کو بے توقیر کرنے اور ججوں کی دیانت و امانت پر سوال اٹھانے کا آغاز عوامی مقبولیت کی دعویدار، تجربہ کار اور آئین و قانون کی حکمرانی کی علمبردار جماعتوں نے عشروں قبل کیا۔قتل کیس میں پیپلزپارٹی کے چیئرمین ذوالفقار علی بھٹو مرحوم کو سزا ملنے پر جوڈیشل مرڈر کا نعرہ لگا۔ چیف جسٹس انوارالحق اور سپریم کورٹ کے دیگر قابلِ احترام ججوں کو بھٹو کا قاتل ٹھہرایا
مزید پڑھیے




حکمرانی

جمعه 02 نومبر 2018ء
ارشاد احمد عارف
حکمرانی مسلم معاشرے میں خدمت خلق کا ذریعہ تھی،خوف خدا سے سرشار انسانوں کے لیے عدل و انصاف کی فراہمی کا ذریعہ اور فساد فی الارض کو روکنے کا موثر ہتھیار مگر پھر یہ ظلم وتعدّی کا آلہ بن گئی۔ جمہوری معاشروں میں یہ پھر خلق خدا کی زندگی کو آسان اور معاشرے کو طویل انسانی جدوجہد کے مفید ثمرات سے فیضیاب کرنے کا سبب بن رہی ہے مگر بیشتر مسلم ممالک میں کارطفلاں ہے۔ ریک میں سجی کتاب ’’حضرت عمر بن عبدالعزیزؓ ‘‘پر نظر پڑی اور جستہ جستہ دیکھنا شروع کیا تو لطف آگیا چند واقعات قارئین کی
مزید پڑھیے


حماقت یا عادت

جمعرات 01 نومبر 2018ء
ارشاد احمد عارف

نیک نام سابق پولیس افسر‘ اسلم ترین اپنے ایک ڈی آئی جی کے بارے میں بتا رہے تھے کہ بیس پچیس سال قبل وہ سینئر سرکاری افسروں اور دوسرے شعبوں کے سربراہان کو طفل نادان قرار دیا کرتے۔ جس طرح کم سن بچے نفع نقصان سے لاپروا کبھی دیا سلائی جلاتے‘ کبھی بجلی کے پلگ میں انگلی ڈالتے اور کبھی جلتا انگارا پکڑنے کی ضد کرتے ہیں۔ بعینہ قوم کی قسمت کے مالک ان افراد کا وطیرہ ہے‘ ہرگز نہیں سوچتے کہ نتیجہ کیا نکلے گا۔ بات تو کسی اور تناظر میں ہو رہی تھی مگر موجودہ حکومت کے بعض
مزید پڑھیے


عقل کل اور ہر فن مولا

پیر 29 اکتوبر 2018ء
ارشاد احمد عارف
اسرائیلی طیارے کی اسلام آباد ایئرپورٹ پر اُترنے کی درفنطنی چھوڑنے والے صحافی ایوی شراف کا شکریہ کہ اس نے ہمارے فارغ بیٹھے سیاستدانوں، دانشوروں اور سوشل میڈیا کے مجاہدین صف شکن کو چوبیس گھنٹے مصروف رکھا۔ اس بات سے قطع نظر کہ حکومت کے مخالفین نے بات کا بتنگڑ بنایا اور قوم کا وقت ضائع کیا یا حکومتی ترجمانوں نے جھوٹ بولا؟اس معاملے کا خطرناک پہلو یہ ہے کہ بیرون ملک بیٹھا کوئی بھی شخص سوشل میڈیا کے ذریعے قومی سطح پر انتشار پھیلا سکتا ہے قرآن مجید نے خبر کو تصدیق کے بغیر آگے بڑھانے سے منع کیا
مزید پڑھیے


محنت کبھی رائیگاں نہیں جاتی

هفته 27 اکتوبر 2018ء
ارشاد احمد عارف
محنت کبھی رائیگاں نہیں جاتی اور حسن عمل کا انسان کو صلہ ملتا ہے ۔سعودی عرب کا دورہ بار آور رہا اور چین کے نائب سفیر نے عمران خان کے اگلے ہفتے دورہ بیجنگ کی کامیابی کا مژدہ سنا دیا۔ متحدہ عرب امارات کا اعلیٰ سطحی وفد طویل ملاقاتوں کے بعد وطن واپس جا چکا اور اُمید یہ کی جا رہی ہے کہ دوست ملک ہماری مشکلات کم کرنے میں مددگار ہو گا۔ عمران خان نے کفائت شعاری مہم کا آغاز کیا تو مخالفین کے علاوہ فعال میڈیا نے مذاق اُڑایا۔ گاڑیاں اور بھینسیں بیچنے سے کتنی بچت ہو گی؟ دسترخوان
مزید پڑھیے


دل بدلا، دن بدلے

جمعه 26 اکتوبر 2018ء
ارشاد احمد عارف
واقعی ’’ہمت کرے انسان تو کیا ہو نہیں سکتا‘‘ عمران خان سعودی عرب سے کامران لوٹے، توقعات پہلے دورے سے بھی وابستہ تھیں مگر معاملہ دو طرفہ مذاکرات تک موخر ہوا۔ وزارت خزانہ کے بابو آئی ایم ایف کے سوا سوچنے کی صلاحیت نہیں رکھتے اور وزیر خزانہ اسد عمر لکیر کے فقیر ہیں وزارت خزانہ کے بابوئوں نے باور کرا دیا کہ بجلی‘ گیس اور پٹرول کی قیمتیں بڑھانے اور آئی ایم ایف سے قرض لے کر قسطیں چکانے کے سوا کوئی چارہ نہیں تو وزیر خزانہ آسانی سے سپر انداز ہو گئے۔ کپتان مگر دیگر ذرائع ‘امکانات تلاش
مزید پڑھیے