BN

ارشاد احمد عارف



دیسی گھی ہضم ہو تو کیسے؟


عمران خان نے صرف اپوزیشن نہیں‘ احتساب کے عمل سے خائف دیگر طبقات کی دکھتی رگ پر ہاتھ رکھ دیا ہے۔ طرح طرح کے دلائل تراشے جا رہے ہیں کہ احتساب کا عمل جاری رہا تو معیشت کا بیڑا غرق ہو گا اور سرمایہ کار بھاگ جائے گاوغیرہ وغیرہ۔ چند ماہ قبل صحافیوں کے ایک وفد نے عوامی جمہوریہ چین کا دورہ کیا’’انڈر سٹینڈ چائنا‘‘ تنظیم کے سربراہ ظفر محمود نے مہارت سے چین کے بڑے سرمایہ کار گروپوں سے ملاقات کا اہتمام کیا تھا‘ جو پاکستان میں مختلف منصوبوں پر کام کر رہے ہیں۔ چین پاکستان کا آزمودہ یار
جمعه 14 جون 2019ء

دودھ کا دودھ پانی کا پانی

جمعرات 13 جون 2019ء
ارشاد احمد عارف
انتظار بہت کرنا پڑا‘ طبیعت مکدّر ہوئی مگر تقریر سن کر مزہ آ گیا۔ نو دس ماہ گزرنے کے باوجود عمران خان بہتر میڈیا ٹیم کیوں نہیں بنا سکے ؟اور ہر بار دودھ میں مینگنیاں کیوں پڑ جاتی ہیں‘ اس سوال کا جواب ڈھونڈے سے نہیں مل رہا۔ تقریر اگر بروقت نہ ہو پائی تو دوسرے دن کرنے میں کیا حرج تھا ؟رات بارہ بجے جب اسی نوے فیصد لوگ خواب خرگوش کے مزے لے رہے تھے یہ تقریر نشر کرنے کی کیا مجبوری تھی ؟اور دوران تقریر تین بار تسلسل کا ٹوٹنا؟ کم از کم اپنی صحافتی زندگی میں کسی
مزید پڑھیے


ریاست کی انگڑائی

منگل 11 جون 2019ء
ارشاد احمد عارف
بجٹ اجلاس کے دوران سابق صدر آصف علی زرداری کی گرفتاری کا پیغام کیا ہے؟ جرم اور سیاست کے ملاپ کو زمینی حقیقت اور جمہوری تقاضہ سمجھنے والوں جو اب ہو گا نیب کی ناعاقبت اندیشی اور انتقامی ذہنیت‘ میاں شہباز شریف اور مریم نواز شریف ایسے آصف علی زرداری کے تازہ خیر خواہوں بلکہ مداحوں کے نقطہ نظر سے عمران خان کی بوکھلاہٹ اور منہ کھائے آنکھ شرمائے پر ایمان لانے والے دانشوروں‘ تجزیہ نگاروں اور قلمکاروں کے نزدیک غیر جمہوری‘ غیر سیاسی اقدام مگر جنہیں شخصیات اور مفاد پرست گروہوں سے زیادہ ملک اور معاشرہ عزیز ے‘ ان
مزید پڑھیے


کیا کسی کو پھر کسی کا امتحاں مقصود ہے

اتوار 09 جون 2019ء
ارشاد احمد عارف
شمالی وزیرستان میں دہشت گرد ایک بار پھر سرگرم عمل ہیں اور تخریب کاری بڑھنے لگی ہے۔ پاک فوج کے تین افسروں اور ایک جوان کی شہادت معمولی سانحہ ہے نہ ضرب عضب اور ردالفساد آپریشن کے بعد سکھ کا سانس لینے والی قوم کے لئے قابل برداشت صدمہ۔ خارکمر کیمپ کے علاقہ میں چند ہفتوں کے دوران دس فوجی افسر و اہلکار شہید اور پینتیس زخمی ہو چکے‘ جس کا مطلب ہے کہ دہشت گرد تازہ دم ہو کر نئے بھیس میں قومی امن و سلامتی پر حملہ آور ہیں۔ تحریک طالبان پاکستان نے پر پرزے نکالے تو ابتدا میں
مزید پڑھیے


سوال برقرار ہے

منگل 04 جون 2019ء
ارشاد احمد عارف
بنیادی سوال برقرار ہے اور تسلی بخش جواب سیاستدانوں کو سوجھ رہا ہے نہ وکلاکے قابل احترام نمائندوں اور دانشوروں‘ تجزیہ کاروں کو۔ سوال یہ ہے کہ کیا ہر عام و خاص‘ ادنیٰ و اعلیٰ کا محاسبہ کرنے والے اعلیٰ عدلیہ کے جج صاحبان قابل احتساب ہیں یا نہیں؟ اس سے جڑا ضمنی سوال یہ بھی ہے کہ اگر آئینی و قانونی تقاضے پورے کرتے ہوئے حکومت صدر مملکت کے توسط سے کسی جج کے خلاف ریفرنس سپریم جوڈیشل کونسل کو ارسال کرے تو اس اعلیٰ ادارے کو حق سماعت حاصل ہے یا نہیں؟ سیاستدان تو الاماشاء اللہ منطق و
مزید پڑھیے




مال بچائیں یا کھال

اتوار 02 جون 2019ء
ارشاد احمد عارف
لیفٹیننٹ جنرل(ر) جاوید اقبال اور بریگیڈیئر (ر) راجہ رضوان کی سزائوں کا اعلان ہوا تو ہر انصاف پسند اور محب وطن شہری نے پاک فوج کے احتسابی نظام کی تعریف کی مگر پاکستان میں سول بالادستی کے نام نہاد علمبرداروں اور’’ فوج سمیت کوئی احتساب سے بالاتر نہیں‘‘ کا نعرہ لگانے والے بعض سیاستدانوں‘ دانشوروں‘ تجزیہ کاروں‘ وکیلوں اور سول سوسائٹی کے ارکان کو سانپ سونگھ گیا‘ حرف تحسین تو خیر کیا بلند ہونا تھا‘ جھوٹے منہ کسی نے یہ بھی نہ کہا کہ جنرل قمر جاوید باجوہ کی زیر قیادت پاک فوج نے قومی مفادات کو نقصان پہنچانے والے
مزید پڑھیے


منزل ہے کہاں تیری؟

جمعه 31 مئی 2019ء
ارشاد احمد عارف
علی وزیر کے پروڈکشن آرڈر کا مطالبہ کرنیوالے بلاول بھٹو بے چارے کو کیا معلوم کہ اس معاملے پر ان کی والدہ محترمہ بے نظیر بھٹو نے اپنے سپیکر مخدوم یوسف رضا گیلانی سے کیا سلوک کیا تھا؟یوسف رضا گیلانی کا قصور یہ تھا کہ اس نے اپوزیشن کے مطالبے اور پیپلز پارٹی کے وفاقی وزراء ‘ وزیر داخلہ نصیر اللہ بابر‘ وزیر قانون اقبال حیدر اور وزیر تعلیم سید خورشید شاہ کے مشورے پر شیخ رشید احمد‘ شیخ طاہر رشید اور حاجی محمد بوٹا کے پروڈکشن آرڈر جاری کئے اور رول90کے تحت قومی اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کی
مزید پڑھیے


حذ راے چیرہ دستیاں

جمعرات 30 مئی 2019ء
ارشاد احمد عارف
یوم تکبیر کے موقع پر مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز شریف کی تقریر سن کرخوشی ہوئی‘ عمران خان کو مہرہ تو قرار دیا مگر خلائی مخلوق کا نہیں‘ خار کمرکیمپ حادثہ کی ذمہ داری بھی انہوں نے سکیورٹی فورسز پر نہ ڈالی حالانکہ ایک روز قبل وہ اپنی ٹویٹ میں بلاول بھٹو کی طرح محسن داوڑ اور علی وزیرکو بے گناہ اور سکیورٹی اداروں کو قصور وار قرار دے چکی تھیں۔ یوم تکبیر پر انہوں نے یہ تک کہہ ڈالا کہ عمران خان نے سانحہ وزیرستان پر جوابدہی کے لئے فوج کو اکیلا چھوڑ دیا جبکہ آپریشن
مزید پڑھیے


میرے اندر عدو‘میرے باہر عدو

منگل 28 مئی 2019ء
ارشاد احمد عارف
1971ء کی طرح پاکستانی ریاست ایک بار پھر اندرونی اور بیرونی دشمنوں کے نرغے میں ہے‘ حفیظ تائب مرحوم نے جب برسوں قبل کہا ؎ دشمن جاں ہوا میرا اپنا لہو‘میرے اندر عدو‘ میرے باہر عدو ماجرائے تحیر ہے پر سیدنی‘ صورت حال ہے دیدنی یا نبیؐ تو حالات اتنے خراب تھے نہ اندر و باہر کے دشمنوں کے حوصلے اس قدر بلند۔ گزشتہ روز میرانشاہ کے علاقے میں افسوسناک حادثہ‘ انہی دشمنوں کی کارستانی ہے۔ شمالی وزیرستان دہشت گردوں کی آماجگاہ بنا‘ یہاں خودکش بمباروں کی تربیت گاہیں قائم ہوئیں‘ خودکش جیکٹیں اور مختلف قسم کا بارودی
مزید پڑھیے


تمہارے سینے میں دل تو ہو گا؟

جمعه 24 مئی 2019ء
ارشاد احمد عارف
پہلے قصور کی معصوم زینب اور اب اسلام آباد کی مظلوم فرشتہ واقعہ کی تفصیل سن کر کلیجہ منہ کو آتا ہے‘ لاش ملی تو صرف درندہ صفت چچا زاد بھائی نے کم سن بچی کو نہیں نوچا تھا بلکہ جنگلی جانوروں نے بھی خوب بھنبھوڑا اور جسم کے کئی حصے چباڈالے۔ یہ واقعہ وزیر اعظم کی ذاتی قیام گاہ بنی گالہ کے قریب پیش آیا‘ وفاقی دارالحکومت میں سکیورٹی معمول سے زیادہ سخت ہوتی ہے اور بنی گالہ ریڈ زون۔ پھر بھی مظلوم بچی اغوا ہوئی‘ والدین رپٹ درج کرانے تھانے پہنچے تو بدبخت پولیس اہلکار کا جواب تھا
مزید پڑھیے