BN

ارشاد احمد عارف



خبر لیجئے دہن بگڑا


صرف مُنہ چڑانے ‘ ایک دوسرے کا گریباں پکڑنے اور مُنہ نوچنے کی کسر باقی ہے‘ بدذوقی سیاست میں عام تھی۔ لچر پن اور ابتذال بھی در آیا‘ چند سال قبل تک بڑے سیاستدان اپنے مخالفین کی تحقیر کے لئے ان گھڑ اور کندہ ناتراش کارکنوں کو آگے کرتے۔ ماضی قریب میں دانیال عزیز‘ طلال چودھری اور عابد شیر علی کا مسلم لیگ میں مصرف یہی نظر آتا تھا کہ لیڈر اپنے سیاسی مخالفین بالخصوص عمران خان کے خلاف جو غیر ثقہ اور ناشائستہ بات‘ کہنا نہیں چاہتے ‘یہ مُنہ پھٹ کہہ گزرتے اور داد سمیٹتے ۔ تحریک انصاف نے
جمعه 26 اپریل 2019ء

جہاں عقل و خرد کی ایک بھی مانی نہیں جاتی

منگل 23 اپریل 2019ء
ارشاد احمد عارف
عمران خان نے وفاقی کابینہ میں ردوبدل کیا‘ کیا‘ پنجاب میں بھی فوری تبدیلی کی خواہش جاگ اٹھی۔ پنجاب کے ابتر معاملات وفاق کو متاثر کر رہے ہیں اور طرح طرح کی قیاس آرائیاں ہونے لگی ہیں۔ بعض تجزیہ کاروں کو زمین عمران خان کے پیروں سے کھسکتی محسوس ہو رہی ہے اور موجودہ فرسودہ پارلیمانی نظام کی بساط لپیٹے جانے کا خدشہ ہے۔ بلا شبہ پنجاب کے بغیر وفاقی حکومت’’سلطنتِ شاہ عالم‘ از دلی تابہ پالم ہے‘‘ بہادر شاہ ظفر کی طرح مجبور و بے بس حکمرانی پر آخر ایک ایسا شخص کیسے قانع ہو سکتا ہے جو برملا
مزید پڑھیے


کعبہ مرے پیچھے ہے کلیسا مرے آگے

اتوار 21 اپریل 2019ء
ارشاد احمد عارف
ہم ایک بار پھر دوراہے پر کھڑے ہیں‘ وہی کیفیت جو غالب پر طاری تھی ؎ ایماں مجھے روکے ہے جو کھینچے ہے مجھے کفر کعبہ مرے پیچھے ہے‘ کلیسا مرے آگے کابینہ میں ردوبدل پر وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ کا اختیار ہے اور عمران خان نے اپنا یہ اختیار استعمال کر کے برا کیا نہ کچھ عجیب۔ اگر ٹیم کا کوئی رکن کپتان کی توقعات پر نہیں اترتا اور شائقین بھی بور ہو رہے ہیں تو تبدیلی میں مضائقہ کیا ہے؟۔ میاں نواز شریف اور آصف علی زرداری کی بات الگ ہے کہ وہ عوام ‘پارٹی اور
مزید پڑھیے


اپنی حدود سے نہ بڑھے کوئی عشق میں

جمعرات 18 اپریل 2019ء
ارشاد احمد عارف
میرے خیال میں یہ طے کرنا ضروری ہو گیا ہے کہ پاکستان کو ایک مہذب‘جدّت پسند‘ جمہوری اور فلاحی ریاست بنانا ہے یا قوم بدستور پارلیمانی جمہوریت کے نام پر گلے میں چند افراد اورخاندانوں کی غلامی کا طوق پہنے ‘سسک سسک کر زندگی گزاریگی۔؟ عجیب تماشہ ہے کہ دو حکمران خاندانوں پر منی لانڈرنگ کا سنگین الزام ہے اور دونوں واضح‘ دو ٹوک جواب دینے کے بجائے کبھی ادھر کی ہانکتے ہیں‘ کبھی ادھر کی‘ سوال گندم جواب چنا‘ قوم نے جن لوگوں کو رہ نماجانا اور اپنا مستقبل سنوارنے کی ذمہ داری سونپی ‘وہ رہزن اور ڈاکو نکلے‘ عدم
مزید پڑھیے


نیب بیک فٹ پر

منگل 16 اپریل 2019ء
ارشاد احمد عارف
مسلم لیگ (ن) کی حکمت عملی کامیاب رہی‘ حمزہ شہباز شریف کی پریس کانفرنس کام دکھا گئی۔ نیب کو بالآخر بیک فٹ پر جانا پڑا‘ چیئرمین نیب نے میاں شہباز شریف کی اہلیہ اور بیٹیوں کو جاری طلبی کے نوٹس منسوخ کر دیے اور عوام کو یقین دہانی کرائی کہ چادر اور چار دیواری کا تقدس بہرحال ملحوظ رکھا جائے گا۔ اب نیب شریف خاندان کی خواتین کو سوالنامہ جاری کرے گا اور جوابات موصول ہونے پر نئی حکمت عملی وضع کی جائے گی۔ نیب لاکھ ڈھول پیٹتا رہے کہ وہ ’’فیس‘‘ نہیں’’ کیس ‘‘دیکھ کر فیصلہ کرتا ہے‘ کسی
مزید پڑھیے




بے حیا باش و ہرچہ خواہی کن

اتوار 14 اپریل 2019ء
ارشاد احمد عارف
خان گڑھ میں پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کی پرجوش تقریر سن کر مجھے تقریر نویس کی کم علمی اور نوجوان لیڈر کی سادہ لوحی پر تعجب سے زیادہ افسوس ہوا۔ اٹھارہویں ترمیم کے سبب وفاق کے مسائل میں اضافہ ہوا، عوام کے تعلیمی، طبی اور معاشی مسائل بڑھے اور وفاق میں کار حکمرانی دشوار تر ہو گیا۔ اندرونی اور بیرونی مسائل میں الجھا وفاق قرضے اتارے، قومی دفاع و سلامتی کے لیے وسائل جمع کرے، مہنگائی و بے روزگاری سے نمٹے یا صوبائی خود مختاری کے نام پر بلیک میلنگ کا مقابلہ کرے؟ عمران خان نے گھوٹکی کے
مزید پڑھیے


عجلت یا حماقت

جمعرات 11 اپریل 2019ء
ارشاد احمد عارف
جلد باز تو انسان واقع ہوا ہے پر اتنا نہیں جتنی جلدی پاکستان میں بسنے والے اشرف المخلوقات کو ہے۔ عشروں تک ہم لیڈروں کو دیوتابنا کر ان کی اور ان کی آل اولاد کے علاوہ حاشیہ نشینوں کی پوجا کرتے رہے۔ نااہلی‘ لوٹ مار اور اقربا پروری کے ریکارڈ قائم ہوئے‘ ہم نے آنکھیں بند رکھیں‘ حکمرانوں کے محلات میں اضافہ ہوا‘ غربیوں کے محلے اجڑے۔ کمزور دوو قت کی روٹی کو ترسا‘ طاقتور کے اندرون و بیرون ملک اثاثوں اور بنک اکائونٹس میں اضافہ ہوا۔ کسی نے جھرجھری تک نہ لی مگر اب ہر ایک کی شدید خواہش
مزید پڑھیے


صدارتی نظام کی بحث

منگل 09 اپریل 2019ء
ارشاد احمد عارف
پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف میاں حمزہ شریف کی گرفتاری میں نیب اور لاہور پولیس کی ناکامی نے ایک بار پھر ثابت کیا کہ ہماری ماں جیسی ریاست اور اس کے ہونہار اداروں کا بس صرف کمزور ‘ بے آسرا اور غریب افراد و طبقات پر چلتا ہے۔ قانون عام شہری کے مدمقابل آدم خور درندہ ہے اور طاقتور‘ بااثر ‘ دولت مند کے روبرو بھیگی بلّی‘ لاریب ہم مسلمان ہیں‘ اس نبی آخرالزمان ﷺ کے نام لیوا جن کا فرمان ہے’’تم سے پہلے قومیں اس لئے تباہ ہوئیں کہ جب ان میں معمولی لوگ جرم کرتے تو ان
مزید پڑھیے


یہ کس دور میں مجھ کو جینا پڑا ہے

جمعه 05 اپریل 2019ء
ارشاد احمد عارف
پاکپتن میں ہیلی کاپٹر یا جہاز ٹائپ اڑن کھٹولا بنانے والے محمد فیاض کی گرفتاری پر مجھے شیخ سعدیؒ یاد آئے۔ شیخ سعدیؒ کا گزر ایک بستی سے ہوا برفانی علاقہ تھا اور شیخ اجنبی، آوارہ کتوں نے گھیر لیا، کتوں کو بھگانے کے لیے پتھر ڈھونڈا تو برف میں جما پایا، پکار اُٹھے عجیب لوگ ہیں، کتے آزاد ہیں اور پتھروں کو باندھ رکھا ہے ۔ سنگ را بستند و سگاں را کشادند۔ فیض احمد فیض کا اپنے ہی وطن میں حکمرانوں کے دوہرے معیار اور جبرو استبداد سے واسطہ پڑا تو انہوں نے شیخ سعدی کے خیال سے
مزید پڑھیے


حلوائی کی دکان پر نانا جی کی فاتحہ

منگل 02 اپریل 2019ء
ارشاد احمد عارف
اردو زبان کا محاورہ ہے ’’جوتیوں میں دال بٹنا‘‘ تحریک انصاف کو اقتدار میں آئے جمعہ جمعہ آٹھ دن ہوئے ہیں‘ سات ساڑھے سات ماہ میں اُجڑی معیشت اور بگڑے سماج کو سدھارنا ‘ سنوارنا آسان ہے نہ عوام کو قرار واقعی ریلیف دینا ممکن۔ مگر ’’ جوتیوں میں دال بٹنے لگے گی‘‘ یہ توقع کسی کو بھی نہ تھی۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کو جہانگیر ترین کے وفاقی کابینہ کے اجلاس میں بیٹھنے پر اعتراض ہے‘ سو فیصد درست اور اخلاقی و قانونی تقاضوں سے ہم آہنگ اعتراض مگر کیا یہ پارٹی کا اندرونی معاملہ نہیں؟ قریشی صاحب
مزید پڑھیے