BN

ارشاد احمد عارف


افغان باقی‘ کہسار باقی


اکیسویں صدی کی واحد سپر پاور امریکہ کا کا نمائندہ زلمے خلیل زاد عالمی میڈیا اور پچاس ممالک کے عہدیداروں‘ وزراء اور سفیروں کے سامنے افغان طالبان کے رکن ملّا عبدالغنی برادر کے ساتھ امن معاہدے پر دستخط کر رہا تھا اور میرے دل و دماغ میں ایک اُلوہی وعدے نے ہلچل مچا رکھی تھی کم من فئۃٍ قلیلۃٍ غلبت فئۃً کثیرۃً باذن اللّٰہ واللّٰہ مع الصابرین۔ (اکثر چھوٹے گروہ‘ بڑی بڑی جماعتوں اور قوموں پر اللہ تعالیٰ کے حکم سے غالب آ جاتے ہیں اور اللہ تعالیٰ صبر کرنے والوں کے ساتھ ہے) ؎ فضائے بدر
اتوار 01 مارچ 2020ء

ہارن کھیڈ فقیرا

جمعه 28 فروری 2020ء
ارشاد احمد عارف
میجر آفتاب مزید لکھتے ہیں ’’تم نے جنرل اقبال کے بارے میں کچھ نہیں بتایا‘‘ جنرل نے اپنی تنی ہوئی بھنوئوں سے کھیلتے ہوئے پوچھا۔ ’’کون سے اقبال؟‘‘ میں نے پوچھا ۔اس وقت آرمی میں اقبال نام کے تین جنرل تھے۔اگرچہ میں سمجھ گیا تھا اس کا اشارہ اپنے سے سینئر پوٹھوہاری پفر جنرل کی طرف تھا جو اس سے سینئر بھی تھے‘خاردار بھی اور نسبتاً اچھی شہرت کے مالک بھی۔ ’’وہ مونچھوں والا اقبال‘‘ لاہوری جنرل خود کلین شیو تھا لیکن اس نے بالائی ہونٹ کے اوپر دائیں بائیں اشارہ کرتے ہوئے کہا۔وہ یقینا چاہتا تھا کہ میں لڑاکا فوج کے ’مونچھوں
مزید پڑھیے


ہارن کھیڈ فقیرا

جمعرات 27 فروری 2020ء
ارشاد احمد عارف
میجر (ر) آفتاب سے تعارف برادرم فرخ سہیل گوئندی نے دالیم شریف الحق ‘کی کتاب کے مترجم کے طور پر کرایا‘ چند ملاقاتوں میں لگا کہ حب الوطنی کے پیکر میجر آفتاب پاکستان کو قرار واقعی اقبالؒ و قائدؒ کے خوابوں کی تعبیر‘ اسلام اور جمہوریت کا گہوارہ دیکھنے کے متنی ہیں اور اس مقصد کے حصول کے لئے جوانی سے بڑھاپے کے سفر جہد مسلسل میں مگن ‘میجر آفتاب گزشتہ روز اپنی تازہ تصنیف ’’ہارن کھیڈ فقیرا(خود نوشت)دے کر گئے تو سرسری ورق گردانی کے دوران ضخیم کتاب کے سینکڑوں صفحات پڑھ ڈالے۔ جنرل ضیاء الحق دور میں پانچ
مزید پڑھیے


ہشیار‘خبردار

منگل 25 فروری 2020ء
ارشاد احمد عارف
افغانستان میں سیز فائر کا عمل شروع ہے اور اگر کوئی ناخوشگوار واقعہ رونما نہ ہوا تو 29فروری کو صدر ٹرمپ امن معاہدے پر دستخط کر دیں گے‘ امریکہ افغانستان سے اپنی فوج نکال لے گا اور صدر اشرف غنی بدلخواستہ ہی طالبان کی خوشنودی کے جتن کریں گے۔ مصدقہ اطلاعات کے مطابق صدر ٹرمپ پچھلے سال جنوری ‘فروری میں سیز فائر اور مئی میں امن معاہدہ چاہتے تھے مگر طالبان نہیں مانے‘ ان کا کہنا تھا کہ امریکہ آیا اپنی مرضی سے تھا‘ جائے گا ہماری مرضی سے‘ ٹائم شیڈول بھی ہم دیں گے‘ امریکی صدر نے درمیان میں
مزید پڑھیے


یاروں نے بوئے گل سے بھی کانٹا بنا لیا

اتوار 23 فروری 2020ء
ارشاد احمد عارف
اٹھارہ ماہ بعد عمران خان کو سمجھ آ ہی گئی کہ یہ قوم پکی پکائی مچھلی کا ٹکڑا مانگتی ہے مچھلی پکڑنے کا طریقہ سیکھنا اس کا مزاج نہ عادت۔انسان مزاجاً جلد باز اور ناشکرا ہے‘ مگر اتنا بھی نہیں جتنے ہم! ہتھیلی پر سرسوں جمانے کی خواہش مند اس قوم نے ستر سال تجربات میں ضائع کر دیے‘ ناکام تجربات کو بار بار دھرایا اور پچھتائی آج تک نہیں‘ جس حکمران نے فروغ صنعت وتعلیم کے ذریعے پائیدار ترقی اور خوشحالی کی بنیاد ڈالی اُسے ہم نے کتا کتا کہہ کے ایوان اقتدار سے نکالا اور صنعتی و تعلیمی
مزید پڑھیے



خانہ انوری کجا باشد

جمعه 21 فروری 2020ء
ارشاد احمد عارف
لگتا ہے آسمانی بلائوں نے عمران خان کی حکومت کو خانہ انوری سمجھ لیا ہے‘ ایک ٹلتی نہیں دوسری نازل ہو جاتی ہے امیر شجاعی نے فارسی زبان کے صاحب اسلوب شاعر انوری پر پھبتی کسی تھی ؎ ہر بلائے کزآسماں آید گرچہ بردیگرے قضا باشد برزمیں نارسیدہ‘می گوید خانۂ انوری کجا باشد (آسماں سے نازل ہونے والی ہر مصیبت اگرچہ کسی اور کے مقدّر میں ہو‘ زمین پر نازل ہونے سے پہلے انوری کے گھر کا پتہ پوچھتی ہے۔) حکومت سازی کے بعد عمران خان ابھی سکھ کا سانس نہیں لینے پائے تھے کہ پانچ مشیروں میں سے ایک
مزید پڑھیے


کعبہ مرے پیچھے ہے کلیسا مرے آگے

جمعرات 20 فروری 2020ء
ارشاد احمد عارف
پنجابی میں کہتے ہیں ڈگی کھوتی توں ‘غصہ کمہار تے‘ (گرا گدھے سے غصہ کمہار پر) نریندر مودی کو تنگ‘ آسام سے لے کر دہلی تک ناراض عوام نے کر رکھا ہے غصّہ مگر وہ کبھی پاکستان پر اتارتے ہیں اور کبھی کشمیری عوام پر۔پاگل پن اس حد تک بڑھ گیا ہے کہ دہلی میں بھارتی دفتر خارجہ نے ترکی کے سفیر کو بلا کر صدر رجب طیب اردوان کے پاکستانی پارلیمنٹ میں خطاب پر احتجاج کیا جس میں عالم اسلام کے ابھرتے ہوئے قائد نے کشمیری عوام پر بھارتی مظالم کی مذمت کی اور مقبوضہ کشمیر کو چناکلے سے
مزید پڑھیے


پولیو اور پولیو زدہ ذہنیت

منگل 18 فروری 2020ء
ارشاد احمد عارف
برصغیر میں کرنسی نوٹ رائج ہوا تو قدامت پسندوں نے مخالفت میں کمر کس لی‘ چار سو ننانوے علماء کے دستخطوں سے فتویٰ مرتب ہوا جس میں بتایا گیا تھا کہ کرنسی نوٹ سونے اور چاندی کا متبادل نہیں اور انگریز ہمارے نظام معیشت کو تباہ کرنا چاہتا ہے لہٰذا ازروئے شرع استعمال ممنوع ‘ اہل ایمان لین دین نہ کریں۔ کہتے ہیں یہ فتویٰ برائے توثیق و دستخط دہلی کے عالم دین اور تفسیر حقانی کے مصنف حضرت عبدالحق حقانی ؒ کی خدمت میں پیش کیا گیا‘ مولانا عبدالحق حقانی نے فتویٰ دیکھا‘ دلائل پڑھے اور اٹھا کر ایک
مزید پڑھیے


ہو فکر اگر خام تو آزادی افکار

جمعه 14 فروری 2020ء
ارشاد احمد عارف
آزادی کا یہ تصور کب کسی کو سوجھا ہو گا‘ تاجر کو ذخیرہ اندوزی‘ گراں فروشی اور ملاوٹ کی آزادی۔ صنعت کار و سرمایہ کار کو قرض خوری‘ ٹیکس چوری اور منی لانڈرنگ کی آزادی۔ سیاستدان کو من مانی‘ قانون شکنی اور قومی وسائل میں خورد برد کی آزادی‘ عالم دین کو آیات الٰہی میں تاویل اور خلق خدا کے اعمال و ایمان کا فیصلہ کرنے کی آزادی۔ دانشور کو عوامی جذبات و احساسات مجروح کرنے‘ طے شدہ قومی معاملات سے چھیڑ خانی کی آزادی۔ اخبار نویس کو آزادی اظہار کے نام پر تفرقہ و انتشار پھیلانے کی آزادی۔ حکمرانوں اور عمال سلطنت کو قانون شکنی‘ اقربا
مزید پڑھیے


اصل امتحان

جمعرات 13 فروری 2020ء
ارشاد احمد عارف
مولانا فضل الرحمن پھر برہم ہیں‘ صرف حکومت نہیں‘ اپوزیشن کی دو بڑی جماعتوں مسلم لیگ(ن) اور پیپلز پارٹی پر بھی۔ کل انہوں نے یہ راز افشا کیا کہ ان سے وزیر اعظم سمیت تین استعفوں کا وعدہ کیا گیا تھا جو قانون سازی میں مسلم لیگ(ن) اور پیپلز پارٹی کے غیر مشروط تعاون کے باعث ایفا نہ ہوا۔ وعدہ کس نے کیا تھا اور ضامن کون ہے؟کسی نے پوچھا بھی تو مولانا نے بتایا نہیں ‘البتہ چودھری پرویز الٰہی سے فرمائش ضرور کی کہ وہ ان کے حوالے سے جو امانت سینے میں لئے پھرتے ہیں اسے اب افشا
مزید پڑھیے