BN

ارشاد محمود


گلبدین حکمت یار کے ساتھ نشست


گلبدین حکمت یار تین دن تک اسلام آباد میں قیام کے بعد واپس کابل لوٹ گئے۔ جہاں وہ بیس برسوں کی جلاوطنی کے بعد گزشتہ تین سال سے مقیم ہیں۔اسلام آباد کسی زمانہ میں حکمت یار کا ٹھکانہ نہیں دوسرا گھر تھا۔ آج بھی ان کی صاحبزادی اور درجنوں قریبی رشتہ دار او حلیف یہاں قیام پذیر ہیں۔ اسلام آباد میں قائم فکر گاہ انسٹی ٹیوٹ آف پالیسی اسٹیڈیز نے حکمت یار کے ساتھ ایک محدود نشست کا اہتمام کیا جہاں ان کے کئی ایک پرانے دوست اور آشنا ان کی ایک جھلک دیکھنے کو بے تاب تھے۔خالد رحمان جو
پیر 26 اکتوبر 2020ء

افغانستان : بھارت بے چین کیوں؟

پیر 12 اکتوبر 2020ء
ارشاد محمود
دہلی کے حکمرانوں کی بے چینی میں مسلسل اضافہ ہورہاہے کیونکہ افغان حکومت اور طالبان کے درمیان سمجھوتے کے امکانات روشن ہوچکے ہیں ۔ طالبان امریکہ معاہدے نے افغانستا ن کے زمینی حقائق یکسر بدل دیئے ۔ بھارتی حکومت نائن الیون کے بعد طالبان کے ساتھ تعلقات استوار کرنے کے تصور کے ہی کے خلاف تھی۔ امریکہ بہادر نے مذاکرات کی بساط بچھائی تو اس کے افغان حلیفوں کی طرح بھارتی پالیسی سازوں کے بھی چودہ طبق روشن ہوگئے۔امریکہ کی توجہ کامحور رواں دھائی میں مشرق وسطی ہے جہاں وہ عرب ممالک اور اسرائیل کے درمیان اختلافات کی گھتیاں سلجھا
مزید پڑھیے


پاک افغان تعلقات کا نیا باب

پیر 05 اکتوبر 2020ء
ارشاد محمود
افغان رہنماعبداللہ عبداللہ کا حالیہ دورہ پاکستان غیر معمولی اہمیت کا حامل تھا۔یہ کہنا زیادہ صحیح ہوگا کہ پاک افغان تعلقات کا ایک نیا باب اس دورے میں رقم کیاگیا۔اس دورے نے احمد شاہ مسعود کے حامیوں اور پاکستان کے درمیان پائی جانے والی سردمہری کو گرم جوشی میں بدل دیا ہے۔ عبداللہ عبداللہ کا شمار سخت گیر پاکستان مخالف رہنماؤں میں ہوتاتھا۔ان کے کامیاب دورہ پاکستان نے کابل میں پائے جانے والے پاکستان مخالف عناصر کو کمزور کیا اور پاکستان کی حمایت میں قابل قدر اضافہ کیا۔پشتونوں کے بعد اب ازبک اور تاجک افغان لیڈر بھی پاکستان کے قریب
مزید پڑھیے


اسلامو فوبیااور وزیراعظم عمران خان

پیر 28  ستمبر 2020ء
ارشاد محمود
اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس سے وزیر اعظم عمران خان نے اس مرتبہ پھر ایک جامع اور ہمہ پہلو تقریر کی۔ خطاب میں مسلمانوں کو درپیش سب سے بڑے مسئلہ اسلامو فوبیا کے متعلق اہم نکات اجاگر کیے اور دنیا کو باور کرانے کی کوشش کی کہ اسلامو فوبیا ایک من گھرٹ اور نفرت پر مبنی مفروضہ ہے ۔ جو انسانوں کو تقسیم کرتاہے۔ نائن الیون کے حملوں کے بعد دنیا بھر میں مسلمانوں کو خوف اور دہشت کی علامت کے طور پر متعارف کرانے کے لیے باقاعدہ لڑیچر تخلیق ہوا۔ اسلامو فوبیاکے نظریہ کے تحت مسلمانوں
مزید پڑھیے


خواتین اور ہمارے سماجی رویے

پیر 14  ستمبر 2020ء
ارشاد محمود
موٹر وے پر ایک خاتون مسافر کے ساتھ جو گزری سو گزری لیکن اس سانحہ نے دنیا بھر میں پاکستان کو بری طرح رسوا کیا۔ دنیا کا کوئی بڑا اخباریا چینل نہیں جہاں اس حادثے کی بازگشت سنائی نہ دی ہو۔ اہل پاکستان رنجیدہ اور شرمندہ ہیں۔ یہ کوئی پہلا یا آخری واقعہ نہیں۔ہوس کے بھوکے، گھٹن زدہ اور قانون سے عاری معاشرے میں یہ ہر روز ہوتاہے۔ فرق صرف اتنا ہے کہ موٹر وے پر حادثے کا شکار ہونے والی خاتون فرانسیسی شہری ہیں۔مغربی معاشرے میں تربیت پانے والی خاتون نے جرأت کا مظاہرہ کیا۔ اپنے اوپر گزرنے والی
مزید پڑھیے



کراچی بچالیا گیا

پیر 07  ستمبر 2020ء
ارشاد محمود
وزیراعظم عمران خان کے کراچی ٹرانسفارمیشن پلان کے تحت گیارہ سو ارب روپے کے پیکیج نے کراچی کے تمام بڑے مسائل کے حل کی ٹھوس بنیاد رکھ دی ہے ۔سولڈ ویسٹ مینجمنٹ ،پانی کی فراہمی، نکاسی آب ، عوامی نقل وحمل یعنی روڈ ٹرانسپورٹ ،کراچی سرکلر ریلوے، بجلی اور بنیادی ڈھانچے کے علاوہ سیوریج ٹریٹمنٹ وہ مسائل ہیں جنہوں نے اہل کراچی کی زندگی اجیرن بنارکھی تھی۔انیسوی صدی کے آغاز سے روشنیوں کا شہر کہلانے والا کراچی گزشتہ چار دہائیوں سے جرائم اور سیاست کے بدترین گٹھ جوڑ کا مرکز بناہوا ہے ۔جہاں ریاستی اداروں بالخصوص پولیس، انتظامیہ، سیاسی جماعتوں
مزید پڑھیے


گلگت بلتستان کا الیکشن اور مستقبل

پیر 24  اگست 2020ء
ارشاد محمود
گلگت بلتستان کے چیف کورٹ نے الیکشن کمیشن کو ہدایت کی ہے کہ وہ اگلے تین ماہ میں الیکشن کرائیں۔ گلگت بلتستان میں الیکشن مہم زور پکڑ چکی ہے۔ تحریک انصاف کی طرف سے منتخب ہونے کے قابل امیدواروں کا رجحان بڑھ چکا ہے۔عمومی طور پر گلگت بلتستان میں رائے عامہ اسلام آباد میں برسراقتدار جماعت کی حمایت کرتی ہے۔ گزشتہ تین الیکشن کا تجربہ تو ہی بتاتاہے۔ آج کل بھی مختلف جماعتوں سے مستعفی ہوکر یا پھر سیاسی اور سماجی قدکاٹھ کے حامل امیدواروں کی کوشش ہے کہ وہ تحریک انصاف کے بلے پر الیکشن لڑیں۔پیپلزپارٹی، مسلم لیگ نون
مزید پڑھیے


عرب ہمت ہار چکے

پیر 17  اگست 2020ء
ارشاد محمود
مصر اور اردن کے نقش قدم پر چلتے ہوئے متحدہ عرب امارات نے اسرائیل کو تسلیم کیا تو باخبر لوگوں کے لیے یہ اطلاع بے معنی تھی۔ کئی برسوں سے دونوں ممالک میں خفیہ تعلقات قائم ہیں۔ عالم یہ ہے کہ سعودی عرب بھی اسرائیل کے ساتھ دوستانہ تعلقات قائم کرچکا ہے ‘محض اعلان باقی ہے۔ فلسطینیوں کے دکھوں کی داستان کم ازکم ایک صدی پرمحیط ہے۔ جنگ عظیم اوّل میںترک خلافت عثمانیہ نے مغربی ممالک جن کی مہار برطانیہ کے ہاتھ میں تھی کا ساتھ دینے کے بجائے جرمنی اور چند چھوٹے ممالک کے جنگی اتحادکا ساتھ دیا۔ خلافت
مزید پڑھیے


کورونا :کیا کھویاکیا پایا

پیر 10  اگست 2020ء
ارشاد محمود
کوروناکی یلغار اگرچہ تھم چکی اور کاروبار حیات ازسرنو رواں دواں ہونے کو ہے ، ذرا ٹھہریئے!یہ جائزہ لیتے ہیںکہ گزشتہ پانچ ماہ کے سفاک عہد میں ہم نے کیا کھویا کیا پایایا سیکھا۔ ان چند ماہ میں دنیا نے دیکھا کہ جدیدٹیکنالوجی کے خداؤں کے سر اس قدرتی وبا نے جھکا دیئے۔ امریکہ،چین اور یورپ جیسی بڑی طاقتیں سر دیوار سے پھوڑتی رہیں لیکن مسئلہ کی جڑپکڑنہ پائیں۔یہ حقیقت ایک بار پھر آشکا ر ہوئی کہ اس کائنات کو چلانے والی ذات سے رجوع کرنے اور دنیا کو امن وراحت کا گوارہ بنانے کی ضرورت پہلے سے زیادہ ہے۔
مزید پڑھیے


امریکہ، چین تصادم کی راہ پر

پیر 27 جولائی 2020ء
ارشاد محمود
امریکی وزیرخارجہ مائیک پومپیو کے گزشتہ ہفتے کے خطاب سے یہ آشکار ہوتا ہے کہ چین اور امریکہ کے درمیان جاری مسابقت کا میدان اب معیشت اور سفارت کاری نہیں بلکہ بدترین تصادم کی شکل اختیارکررہاہے جو پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لے گا۔ پومپیو نے جو کچھ کہا اس نے خطرے کی گھنٹی بجادی ہے۔ نائن الیون کے بعد امریکی صدر بش نے کہا تھا کہ دنیا کو فیصلہ کرنا ہوگا کہ وہ ہمارے سا تھ ہے یا ہمارے دشمن کے ۔ غالباً حالات اسی طرف لیکن بہت تیزی سے جارہے ہیں۔ مائیک پومپیو کی حالیہ تقریر بہت ہی
مزید پڑھیے