BN

اشرف شریف


حلقہ 133: نئے امکانات استوار ہو سکتے ہیں


ایک حلقے نے تجزیہ کاروں کی توجہ پائی ہے ،کچھ تو حقائق لازمی اہم ہوں گے ۔ایک عمر کے بعد دیکھا کہ مسلم لیگ ن کی انتخابی مہم سرکاری اداروں اور عملے کی مدد کے بنا چلائی گئی۔ مسلم لیگ چونکہ اقتدار میں نہیں تھی اس لیے پیپلزپارٹی کو بھی آزادانہ ماحول میسر آیا۔ مسلم لیگ جیت تو گئی لیکن نتیجہ یہ امکان پیدا کر رہا ہے کہ بلدیاتی انتخابات میں سرکاری مدد میسر نہ ہونے پر اس کی جیت کے خواب چکنا چور ہونے والے ہیں۔ لاہور میں مسلم لیگ ن کی انتخابی مہم کا ایک ہی انداز
بدھ 08 دسمبر 2021ء مزید پڑھیے

ہجومی سوچ کے خلاف سماجی رد عمل کی ضرورت

پیر 06 دسمبر 2021ء
اشرف شریف
چند روز ہوئے سیشن جج منڈی بہاوالدین نے ڈپٹی کمشنر اور اے سی کو بد تمیزی اور توہین آمیز رویہ پر عدالت طلب کیا، افسر شاہی خود کو جوابدہی سے بالا سمجھنے لگی ہے،دونوں افسر ناچار پیش ہوئے لیکن عدالتی حکم پر جیل جانے کی بجائے مقامی بار عہدیداروں کی مدد سے راستے میں فرار ہو گئے۔ڈپٹی کمشنر نے واقعے کو اپنی بے عزتی سمجھا اور بار عہدیداروں کی مدد سے جج رائو عبدلجبار کی عدالت پر حملہ کرا دیا۔پڑھے لکھے ، قانون دان جج صاحب پر چیختے رہے اور ریٹائرنگ روم میں لے جا کر ان پر تشدد
مزید پڑھیے


چودھری سرور کی بھید بھری باتیں

هفته 04 دسمبر 2021ء
اشرف شریف
جہانگیر ترین‘ علیم خان اور چودھری سرور‘ تحریک انصاف کی انتخابی قوت کے تین پائے۔پہلے دو الگ کر دیے گئے تیسرا لندن میں بیٹھ کر بتا رہا ہے کہ تحریک انصاف کی حکومت کی معاشی حکمت عملی اتنی ہی ناقص ہے جتنی کہ سیاسی۔وزیر اعظم طبع نازک رکھتے ہیں اس لئے لندن سے ہی چودھری سرور نے بیان جاری کر دیا کہ پارٹی استعفیٰ مانگے گی تو پیش کر دوں گا۔ ہماری نانی اماں تہہ دار پراٹھے بنایا کرتی تھیں ،اوپر سے خستہ اور ہر تہہ میں گھی کی نرماہٹ۔اسی سے عادت بن گئی کہ ناشتہ پراٹھے اور چائے کا کرنا
مزید پڑھیے


ہمارے منتظر خزانے

بدھ 01 دسمبر 2021ء
اشرف شریف
فائدہ اور منافع ہمارے راستوں میں جگمگاتے جواہرات کی طرح بکھرا پڑا ہے‘ہم ہیں کہ پتھر اکٹھے کرنے کی طرف لپکتے ہیں۔پتھر ،روڑے نما انسان اور کچرا نما مراسم سے ریاست کو الجھاتے رہتے ہیں ۔ای سی او ممالک کا بلاک جنوبی ایشیا کے سارک سے زیادہ فائدہ مند ہو سکتا ہے کیونکہ اس بلاک میں کوئی بھارت نہیں۔پاکستان مگر سست روی کا شکار ۔نوے کے عشرے میں وسط ایشیا کے ساتھ تجارت کے جو خواب آنکھ کا سرمہ بنائے انہیں دہشت گردی کے خلاف جنگ کے آنسو بہا لے گئے ۔نئی حقیقتیں سامنے کھڑی ہیں۔جنوبی ایشیا امریکہ نے بھارت
مزید پڑھیے


جھوٹ پر کھڑی انقلابی سیاست

پیر 29 نومبر 2021ء
اشرف شریف
انسان سیکھنے کی بے پناہ صلاحیت رکھتا ہے لیکن وہ سیکھی ہوئی ہر بات کو اپنے طریقے سے کرنے کی خو کے باعث اکثر گڑھے میں جا گرتا ہے۔معاملہ قانونی ہے لیکن چونکہ سیاست دانوں سے متعلق ہے اس لئے سیاسی سمجھا جا رہا ہے۔خیر ایسا پہلی بار نہیں ہوا۔ڈھائی سال پہلے چین میں کورونا کی وبا نمودار ہوئی تو ایک ڈاکٹر نے نئی وبا سے خبردار کیا۔حکومت نے اسے افرا تفری پھیلانے کا قصور وار ٹھہرا کر گرفتار کر لیا۔آڈیو ویڈیو کا حالیہ فساد دراصل قانونی جرائم کو بہت سے الزامات کے ڈھیر میں دبانے کی کوشش ہے ۔
مزید پڑھیے



جنہاں کھادیاں گاجراں ڈھڈ اونہاں دے پیڑ

هفته 27 نومبر 2021ء
اشرف شریف

ہم جب ہوش سنبھال رہے تب سیاست اور صحافت میں روپے پیسے اور خود غرضی نشو و نما پانے لگی تھی میاں نواز شریف نے لاہور کے بڑے کالم نگار کہلانے والے صحافیوں اپنا بنا لیا تھا۔ایک صحافی کی انگریزی سے متاثر ہو کر ساتھ رکھ لیا‘دوسرے کو تقریر نویس بنا لیا۔خبریں لگانے میں مدد دینے والوں کے لئے پلاٹ‘بچوں کو اعلیٰ نوکریاں اور سرکاری حسابات سے نوازنے کا سلسلہ ادبی ثقافتی اداروں تک پھیل گیا‘اپنے مرضی کے ایڈیٹر اور نیوز ایڈیٹر لگانے کی شرط پر نئے اور نسبتاً چھوٹے اداروں کو اشتہارات دیے گئے۔یہ وہی دور ہے جب کالم
مزید پڑھیے


جمہوریت کا خرچہ

بدھ 24 نومبر 2021ء
اشرف شریف
ایک وفاقی‘ جمہوری اور عوامی جماعت کو برباد کرنے کا نتیجہ ہے کہ پاکستان کے عوام سرمائے اور جعل سازی کے ملاپ سے ابھرنے والے سیاستدانوں کے نرغے میں ہیں۔ لاہور کے حلقہ این اے 133 میں ضمنی انتخاب کا مرحلہ درپیش ہے۔ پی ٹی آئی امیدوار اپنی غلطی کے باعث مقابلے سے باہر ہو چکے۔ مسلم لیگ ن کی امیدوار شائستہ پرویز عدت کے ایام میں ہیں۔ مسلم لیگ ن نے تاحال حلقے میں کوئی سیاسی سرگرمی شروع نہیں کی۔ پیپلزپارٹی کے امیدوار اسلم گل ہیں جو روزانہ کئی کئی مقامات پر انتخابی جلسے کر رہے ہیں۔ اسلم گل
مزید پڑھیے


جناب احسن بھون کچھ مداوا کر پائیں گے؟

پیر 22 نومبر 2021ء
اشرف شریف
کمال کا زوال پیش کیا ہے جناب علی احمد کرد نے۔یورپی یونین کی سفیر اندرولا کامینار،جرمنی کے نائب سفیر فلپ ڈچمن،برطانوی ہائی کمشنر کرسچین ٹرنر،اقوام متحدہ کے ترقیاتی فنڈ کے نمائندہ کنوٹ آسٹبی اور کینیڈین ہائی مشنر وینڈے گلمر کی موجودگی میں ریاست اور اس کے اداروں کے خلاف جو چارج شیٹ پیش کی وہ پاکستان پر مزید پابندیوں کا سبب بن سکتی ہے ، خاص طور پر جمع کئے گئے نعرے بازوں نے تقریب کو پاکستان مخالف سرگرمی بنا کر جناب احسن بھون اور ان کے ساتھیوں کی محنت پر پانی پھیر دیا ۔اس نقصان کا ادراک احسن
مزید پڑھیے


واہ رے کچے کے ڈاکوئو!

هفته 20 نومبر 2021ء
اشرف شریف
ایک حکمران تھا۔کہانی یہ سنائی گئی کہ وہ بدعنوان نہ تھا۔زمانہ شناس اس قدر کہ جب لوگوں کو پلاٹوں کی ہوس نہ تھی اس نے اپنے بھائی اور بیٹے کو اسلام آباد میں پلاٹ الاٹ کئے۔دس پلاٹ ایسی عورتوں کو دیے جن کی ولدیت یا زوجیت ظاہر نہیں کی گئی تھی۔1981ء سے 85ء تک اسلام آبادمیں 76پلاٹ بانٹے گئے۔مسلم لیگ ن کے ایک دانشور ہیں۔جمہوریت کا سبق پڑھاتے ہیں۔پی ٹی وی کے چیئرمین بنے تو میانوالی سے ایک لیگی رکن کے ساتھ مل کر پی ٹی وی لائسنس بنانے کا ٹھیکہ مند پسند افراد کو دیدیا۔ٹھیکہ لینے والے شخص نے
مزید پڑھیے


جمہوریت نوازے

بدھ 17 نومبر 2021ء
اشرف شریف
کیا ہم خود کو اس تجزیے کے لیے بطورنمونہ پیش کرنے کو تیار ہیںکہ ہم جمہوریت پسند ہیں یا آمریت کے حامی۔ جمہوریت پسند ہمیشہ عوام کوطاقت کا سرچشمہ مانتا ہے‘ آئین کی بالادستی تسلیم کرتا ہے‘ مخالفین کو اظہار رائے کی آزادی دیتا ہے‘ خود حزب مخالف میں ہو تو حکومتی اقدامات پر نظر رکھتا ہے کہ ریاست کے مفاد کو ٹھیس نہ پہنچے۔ ضیاء الحق نے بھٹو کو اقتدار سے معزول کیا۔ ریٹائرڈ فوجی افسر مانتے ہیں کہ حکمران اشرافیہ کی دو صفیں تھیں۔ ایک سول اور دوسری خاکی۔ دونوں میں تعلق کو سول ملٹری تعلقات کہا جاتا تھا۔
مزید پڑھیے








اہم خبریں