BN

افتخار گیلانی



تاریخ کے اوراق میں گم ہوگئی بابری مسجد…(2)


فروری 1984ء کو معروف وکیل کپل سبل نے چیف جسٹس ، جسٹس وائی پی چندرا چوڑ کی عدالت میں نے زور دار بحث کرکے دلیل دی تھی کہ جموں و کشمیر نیشنل لبریشن فرنٹ کے بانی مقبول بٹ کی، سزائے موت پر عملدرآمدنہیں ہوسکتا ہے، کیونکہ جموں و کشمیر ہائی کورٹ نے سزاکی توثیق نہیں کی ہے۔ اس سلسلے میں انہوں نے ہائی کورٹ کے رجسٹرار کی دستخط و مہر شدہ سند بھی پیش کی۔مگر اٹارنی جنرل کے پراساران نے دلائل کا جواب دیئے بغیر بس ایک سادہ ٹائپ شدہ کاغذ چیف جسٹس کے حوالے کیا ، جس پر کسی
جمعرات 14 نومبر 2019ء

تاریخ کے اوراق میں گم ہوگئی بابری مسجد

منگل 12 نومبر 2019ء
افتخار گیلانی
عیدمیلاد النبیؐ سے ایک دن قبل اور عین جب سکھ زائیرین کیلئے کرتار پور کوریڈور کا افتتاح ہو رہا تھا، بھارتی سپریم کورٹ نے تاریخ کے سب سے پرانے دیوانی تنازعہ یعنی بابری مسجد کی حق ملکیت کا فیصلہ سنادیا۔ توقع کے مطابق ہی چیف جسٹس رنجن گوگوئی کی قیادت میں پانچ رکنی آئینی بینچ نے استدلال کے بجائے عقیدہ کو فوقیت دیکر متنارعہ زمین، اساطیری شخصیت و ہندو دیوتا رام للاکے سپرد کرکے، وہاں پر ایک مندر بنانے کیلئے راستہ صاف کردیا۔ تقریباًایک ہزار صفحات پر مشتمل عدالتی فیصلہ کو پڑھتے ہوئے ، مجھے محسوس ہورہا تھا ، کہ
مزید پڑھیے


شام میں سرگرم روسی مصالحت کار سے ایک ملاقات

بدھ 06 نومبر 2019ء
افتخار گیلانی
ان کے ملٹری کمانڈرز ان مذاکرات کا حصہ نہیں تھے۔ مذاکرات ہمیشہ طاقتور فرد کے ساتھ ہی کرنے چاہئیں۔ ورنہ ہر معمولی فیصلہ کیلئے بھی بار بار ا نکو روک دینا پڑتا ہے کیونکہ مذاکرات میں شامل افراد کو اپنے لیڈروں سے صلاح و مشورہ کرنا پڑتا ہے۔‘‘ میں نے پوچھا کہ کیا اب ایک نئے روس کا ظہور ہو رہا ہے ،کیونکہ ماضی میں روس عالمی معاملات اور مصالحت کاری میں شامل نہیں رہا ہے، تو ماریہ نے کہا ’’کہ و ہ اس سے اتفاق نہیں رکھتی ہے۔ اسے سے قبل یوکرین، فلسطین میں بھی روس کی سفارت
مزید پڑھیے


شام میں سرگرم روسی مصالحت کار سے ایک ملاقات

منگل 05 نومبر 2019ء
افتخار گیلانی
کسی حاضر سروس ڈپلومیٹ کے ساتھ آن ریکارڈ گفتگو کرنا اور وہ بھی جب وہ کسی نازک اور حساس عمل کا حصہ ہو،کسی بھی صحافی کیلئے چلینج ہے۔ پچھلے دنوں استنبول میں ایک بین الاقوامی مصالحتی کانفرنس کے دوران جب شام میں روس کی مصالحت کار ڈاکٹر ماریہ خودنسکایہ گولینچی شچیوا سے ملاقات ہوئی، تو میری رگ صحافت بری طرح پھڑکنے لگی۔ شام میں قتل و غارت، مہاجرین کی بے بسی اور زبوں حالی اور بڑی طاقتوں کی ریشہ دوانی سے تو کلیجہ پھٹنے کو آتا ہے۔ چونکہ امریکی فوج کے انخلاء کے بعد میڈیا مسلسل بتا رہا ہے کہ
مزید پڑھیے


اسامہ اور بغدادی کے خلاف امریکی آپریشن میں مماثلت

منگل 29 اکتوبر 2019ء
افتخار گیلانی
مئی 2011 ء میں پا کستانی شہر ایبٹ آباد میں اسامہ بن لادن کے ٹھکانے پرجس طرح امریکی اسپیشل فورسز نے رات کے اندھیرے میں آپریشن کرکے القاعدہ کے سربراہ کو ہلاک کردیا، بالکل اسی طرز پر شام کے ادلیب صوبہ کے حریم ضلع میں واقع بارشہ گاوٰں میں دھاوا بول کر امریکی افواج کی ڈیلٹا یونٹ نے ہیلی کاپٹروں کی مدد سے داعش کے سربراہ ابوبکر البغدادی کو ہلاک کرنے کا دعوی کیا ہے۔ یہ علاقہ جبل الاعلیٰ پہاڑوں سے گھرا ہے، اور دروز فرقہ کثیر تعداد میں یہاں آباد ہے۔ ان دونوں آپریشنز میں مماثلت یہ ہے
مزید پڑھیے




بابری مسجد : استدلال بنام عقیدہ (2)

جمعرات 24 اکتوبر 2019ء
افتخار گیلانی

چالیس دن کی اعصاب شکن بحث کے دوران مسلم فریقین نے بار بار لاہور کے شہید گنج گوردواہ کی مثال دیتے ہوئے ، دلیل دی کہ بابری مسجد کا معاملہ ایک سیدھا سادہ ملکیتی معاملہ ہے۔ وہاں پر مندر یا مسجد طے کرنے کا معاملہ شامل بحث ہی نہیں ہے۔ میجر جنرل الیگزندر کنیگہم کے مطابق 1500قبل مسیح میں اس شہر کو تباہ و برباد کردیا گیا تھااور پھر 1300برسوں تک یہ غیر آباد رہا۔تب تک عیسائی نہ مسلمان ہی جنوبی ایشیا میں آئے تھے۔ اس دورا ن دریائے سورو نے بھی کئی رخ بدلے ہونگے۔ آخر اب ہی کیسے
مزید پڑھیے


بابری مسجد : استدلال بنام عقیدہ

منگل 22 اکتوبر 2019ء
افتخار گیلانی
6دسمبر 1992ء کو جب بھارت کے ایودھیا شہر میں بابری مسجد کو مسمار کیا جا رہا تھا، میں ان دنوں صحافتی کیریر کا آغاز کرکے بھارتی دارلحکومت دہلی میں ایک ٹرینی کے طورپر میڈیا کے ایک ادارہ کے ساتھ وابستہ تھا ۔مجھے یاد ہے کہ دن کے 11بجے تک رپورٹرز ویشو ہندپریشد اور بھارتیہ جنتا پارٹی کی طرف سے منعقدہ پروگرام کی خبریں بھیج رہے تھے ، پھر ایک دم سے ایودھیاسے خبروں کی ترسیل کا سلسلہ منقطع ہوگیا۔ رات گئے تک بس حکومتی ذرائع سے یہی خبر تھی کہ انتظامیہ مسجد کو بچانے کیلئے مستعد ہے اور خاصی تعداد
مزید پڑھیے


شام میں ترکی کا فوجی آپریشن…(2)

منگل 15 اکتوبر 2019ء
افتخار گیلانی
مڈل ایسٹ امور کے ماہر عدنان ابو عامر کے مطابق اسرائیل توانائی کی اپنی ضروریات کیلئے75فیصد تیل عراق کے کرد علاقوں سے حاصل کرتا ہے اور اسکے بدلے کرد علاقوں کے مواصلات اور سیکورٹی کے امور اس نے اپنے ہاتھوں میں لئے ہیں۔اس سے قبل 2016ء میں اور پھر 2018ء میں ترکی نے شام کے اندر جرابلس اور آفریں میں بھی اسی طرح کا آپریشن کرکے 365,000 مہاجرین کو واپس بھیجنے کے انتظامات کئے۔مگر آخر صرف موجودہ آپریشن نے ہی کیوں مغربی دنیا اور اسرائیل کو جھنجوڑ ا ہے؟ اس سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں ہے کہ پردہ کے
مزید پڑھیے


شام میں ترکی کا فوجی آپریشن

پیر 14 اکتوبر 2019ء
افتخار گیلانی
پچھلے ہفتے بدھ کی رات کو ترکی کے دارالحکومت انقرہ کی فضائیں جنگی طیاروں کی گھن گرج سے گونج رہی تھی ۔ معلوم ہوا کہ ترک افواج نے دریائے فرات کے مشرق میں شام کے شمالی علاقوں میں کرد عسکری ٹھکانوں پر آپریشن شروع کر دیا ہے۔ امریکی نیشنل سیکورٹی انتظامیہ کے ایک خفیہ ڈاکومینٹ کے افشاء ہونے کے بعد یہ تقریباً طے تھا کہ ترکی اس علاقے کو محفوظ بنانے کیلئے کوئی سخت اور راست قدم اٹھانے والا ہے۔ عالم اسلام کے کئی مسائل میں کردوں کا المیہ بھی پچھلے سوبر سوں سے کسی تصفیہ کا منتظر ہے۔
مزید پڑھیے


کشمیر: سکھوں کا قتل عام اور موجودہ حکومتی مشیر

بدھ 09 اکتوبر 2019ء
افتخار گیلانی
ان تینوں واقعات کے تار کسی نہ کسی طور پر فاروق خان کی دہلیز پر آکر رکتے تھے۔ چھٹی سنگھ پورہ کے واقعہ کے اگلے دن ہی پولیس سربراہ اشوک بھان نے بتایا کہ فوج کی جموں و کشمیر لائٹ انفنٹری کے ایک سپاہی کے بھائی محمد یعقوب وگے کو حراست میں لیا گیا ہے۔ جس نے انکشاف کیا کہ حزب المجاہدین اور لشکر طیبہ کے ایک مشترکہ گروپ سے تعلق رکھنے والے 18بندوق برداروں نے رات کے اندھیرے میں گاوٗں پر دھاوا بول کر 31سکھ مردوں کو قطار میں کھڑا کرکے قتل کردیا اور صرف نانک سنگھ کو
مزید پڑھیے