BN

افتخار گیلانی



مودی بنام مسعود اظہر


پد مانابھن بعد میں فوج کے سربراہ بھی تھے۔ افسر نے فوراً ہی افغانی کو تفتیشی محکمہ کے سپرد کردیا۔ اگلے تین دن تک شدید ترین انٹر وگیشن کے باوجود سجاد افغانی یہی بیان دہراتا رہا۔ افسران کو بھی شاید اب یقین ہو گیا تھا کہ یہ فربہ مولوی ناحق ہی ان کے ہتھے چڑھ گیا ہے۔ مگر رہائی سے قبل اسکا بیک گراونڈ چیک کرنے کیلئے جب اس کو انٹروگیشن کے کمرے میں لایا گیا، تو ان کے بقول ایک گھنٹے کے اندر ہی اس نے پوری کہانی اگل دی۔ تاہم دسمبر 1999ء تک جب بھارتی فضائیہ کے اغواشدہ
بدھ 08 مئی 2019ء

مودی بنام مسعوداظہر

منگل 07 مئی 2019ء
افتخار گیلانی
غالباً سال 1996ء میں حکومت جموں و کشمیر نے صحافیوں کو جموں کے نواح میں کوٹ بلوال جیل کا دورہ کرنے کی دعوت دی۔ سلاخوں کے پیچھے لنگڑاتے ہوئے ایک باریش شخص، جیل کی رہداریوں سے گذرتے ہوئے صحافیوں کی طرف ہاتھ ہلا کر ،بار بار اپنی طرف توجہ مرکوز کروانے کی کوشش کر کے کہہ رہا تھا ’’کہ میں بھی ایک صحافی ہوں۔‘‘ مگر شاید ہی کسی نے دھیان دیا۔ کیونکہ صحافیوں کا گروپ کسی مولوی نما صحافی پر وقت صرف کرنے کے بجائے حرکت الانصار کے کمانڈروں ،نصراللہ منصور لنگریال اور سجاد افغانی کو دیکھنے کیلئے بیتاب تھا۔
مزید پڑھیے


کشمیر: آر پار تجارت کی معطلی

بدھ 01 مئی 2019ء
افتخار گیلانی
پچھلے کئی سالوں سے یہ تجارت دونوں حکومتوں کی سرد مہری کا شکار تھی۔ یہ شاید دنیا بھر میں واحد تجارت تھی جہاں کرنسی کے بدلے اور بینکوں کی عدم موجودگی کی وجہ سے زمانہ قدیم کا بارٹر سسٹم یعنی چیز کے بدلے چیز لاگو تھی۔ سیبوں کی پیٹی کے عوض پشاوری چپلیں اور پستوں کے بدلے کشمیری شالیں۔ اسی طرح کے بارٹر سسٹم پر یہ تجارت سانس لے رہی تھی۔ تاجروں کا کہنا ہے کہ اچانک تجارت معطل کرنے سے تاجروں کو بڑے پیمانے پر مالی نقصان تو ہوا ہی ہے۔ پونچھ اور اوڑی کے سینکڑوں نوجوانوں سے
مزید پڑھیے


کشمیر: آر پار تجارت کی معطلی

منگل 30 اپریل 2019ء
افتخار گیلانی
دہلی میں میرے ایک سابق کولیگ کے والد ایک نامور تھوک تاجر ہیں۔ایک بار انہوں نے ایک قصہ سنایا کہ سرینگر کی پارمپورہ منڈی میں ان کے گودام میں مظفر آباد سے آر پار تجارت کے ذریعے پستوں کی ایک کھیپ پہنچی تھی۔ ڈبوں کو کھولنے پر معلوم ہوا کہ پستے سڑے ہوئے تھے اور ان میں کیڑے رینگ رہے تھے۔ ان سبھی پیٹیوں کو انہوں نے گودام کے پچھواڑے میں ڈالا تاکہ ان کو ٹھکانے لگایا جائے۔ اگلے روز کشمیری تاجروں کی ایک جمعیت ان کے پاس پہنچی اور پستے خریدنے کی خواہش ظاہر کی۔ انہوں نے بتایا کہ
مزید پڑھیے


کشمیرقومی شاہرا ہ پربندش :سفری عصبیت کی بدترین مثال

بدھ 17 اپریل 2019ء
افتخار گیلانی
اسکے علاوہ تجارت پیشہ لوگوں کو زبردست مالی نقصانات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے اور اس پابندی سے کروڑوں روپے کا نقصان ہو رہا ہے جو پہلے ہی کشمیر کی کی بگڑی ہوئی معیشت کے لئے مزید بگاڑ کا سبب بن سکتا ہے ، جبکہ سرینگر جموں شاہراہ کی حالت انتہائی خراب ہے اور موسم کی معمولی خرابی کی وجہ سے کئی کئی دونوں تک شاہراہ پر ٹریفک کی آمد و رفت بند ہونا ایک معمول بن گیا ہے ۔ ایک سابق فوجی سربراہ جنرل وید پرکاش ملک نے بھی فیصلے کو ’’احمقا نہ ‘‘ قرار دیا ہے۔ ان
مزید پڑھیے




کشمیرقومی شاہرا ہ پربندش :سفری عصبیت کی بدترین مثال

منگل 16 اپریل 2019ء
افتخار گیلانی
سیاسی کارکن، مورخ اور قلم کار آنجہانی بلراج پوری کے بقول کشمیری پنڈتوں کے ایک وفد نے ڈوگرہ مہاراجہ رنبیر سنگھ(1856-1885 ء )کے دربار میں دہائی دہی کہ ان کی کمیونٹی کو آخر فوج میںبھرتی کیوں نہیں کیا جاتا ہے؟ڈوگرہ فوج میں راجپوت، جاٹ یا پنجابی برہمن ہی اکثر بطور سپاہی بھرتی کئے جاتے تھے۔فریاد سن کر مہاراجہ نے فوجی سربراہ کے نام کشمیر ی پنڈتوں پرمشتمل ایک بٹا لین قائم کرنے کا حکم نامہ جاری کیا۔ سرینگر کی بادامی باغ چھاونی میں جہاں آجکل بھارتی فوج کی 15ویں کور کا ہیڈکوارٹر ہے، اس بٹالین کی پریڈ و حرب و
مزید پڑھیے


ہندو قوم پرستوں کی مربی تنظیم آر ایس ایس پر ایک چشم کشا کتاب

منگل 09 اپریل 2019ء
افتخار گیلانی
متعدد تجزیہ کار کئی بار بھارت کی حکمران بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کو یورپ کی دائیں بازو کی قدامت مگر غیر فرقہ پرست جماعتوں یعنی جرمنی کی کرسچن ڈیموکریٹ یا برطانیہ کی ٹوری پارٹی سے تشبیہ دیکر چوک جاتے ہیں، کہ ان یورپی سیاسی جماعتوں کے برعکس بی جے پی کی کمان اسکے اپنے ہاتھوں میں نہیں ہے۔ اسکی طاقت کا اصل سرچشمہ اور نکیل ہندو قوم پرستوں کی مربیً تنظیم راشٹریہ سیویم سنگھ (آرایس ایس)کے پاس ہے، جو بلاشبہ فی الوقت دنیا کی سب سے بڑی خفیہ تنظیم ہے، جس کے مالی وانتظامی معاملات کے بارے میں
مزید پڑھیے


آزاد کشمیر میں شاردا پیٹھ کھولنے کے مضمرات

بدھ 03 اپریل 2019ء
افتخار گیلانی
کشمیر ی کی طرح سنسکرت بھی قد یم زمانے میں شاردا اسکرپٹ میں ہی تحریری کی جاتی تھی۔خیر امرناتھ علاقہ میں 1996ء میں برفانی طوفا ن کی وجہ سے 200 سے زائد ہندو یاتریوں کی موت ہوگئی تھی۔ اس حادثے کی انکوائری کے لئے بھارتی حکومت کی وزارت داخلہ کی طرف سے مقرر کردہ‘ ڈاکٹر نتیش سین گپتا کی قیادت والی ‘ ایک اعلیٰ اختیاراتی کمیٹی نے اپنی رپورٹ میں یاتریوں کو ایک محدود تعداد میںکرنے کی سفارش کی تھی۔اس کمیٹی کی سفارش کی بنیاد پر ریاستی حکومت نے یاتریوں کی تعداد کو ریگولیٹ کرنے کی
مزید پڑھیے


آزاد کشمیر میں شاردا پیٹھ کھولنے کے مضمرات

منگل 02 اپریل 2019ء
افتخار گیلانی
پچھلے ہفتے خبر آئی کہ پنجاب میں کرتار پور گوردوارہ کے درشن کی خاطر سکھ عقیدتمندوں کیلئے ایک راہداری کی منظوری کے بعد اب پاکستانی حکومت جموں و کشمیر میں لائن آف کنٹرول کے پاس ہندو زائرین کیلئے شاردا پیٹھ جانے کیلئے بھی ایک کوریڈور کھولنے پر غور کر رہی ہے۔ اس کے مضمرات کا جائزہ لئے بغیر حد متارکہ کے دونوں اطراف خصوصاً آزاد کشمیرمیں اپنی روشن خیالی ثابت کروانے والے کئی احباب کی باچھیں کھل گئیں۔ نئی دہلی اور اسلام آباد میں بھی ماحول خاصا گرم ہوا۔ کہیں یہ کریڈٹ بھی پاکستان کے کھاتے میں نہ چلا جائے،
مزید پڑھیے


سمجھوتہ کیس کے ملزمان بری: ذمہ دار کون؟

بدھ 27 مارچ 2019ء
افتخار گیلانی
بہرحال کرکرے کی تحقیق کا یہ نتیجہ نکلا کہ دہشت گردانہ واقعات کے بارے میں جو عمومی تاثر پید اکردیا گیا تھا وہ کچھ حد تک تبدیل ہوا کہ اس کے پشت پر وہ عناصر بھی ہیں جو اس ملک کوہندو راشٹر بنانا چاہتے ہیں۔ ابتداء میں ان واقعات میں معصوم مسلم نوجوانوں کو ماخوذ کرکے انہیں ایذائیں دی گئیں اور کئی ایک کو برسوں تک جیلوں میں بند رکھا گیا۔ ایک معروف صحافی لینا گیتا رگھوناتھ نے یو پی اے حکومت کی ہند و دہشت گردی کے تئیں ' نرم رویہ‘ کو افشاں کیا تھا۔ لینا کے بقول ’’
مزید پڑھیے