BN

افتخار گیلانی



بھارت: مسلمانوں کی سیاسی بے وزنی اور سرکاری مسلمان


بھارت میں مسلمان کسی حد تک سیاسی بے وزنی کا شکار ہوچکے ہیں کہ کانگریس کے مقتدر لیڈر اور ایوان بالا میں قائد حزب اختلاف غلام نبی آزاد کو شکوہ کرنا پڑا کہ ان کی پارٹی کے ہندو اراکین اب انکو اپنے حلقوں میں جلسے اور جلوسوں میں مدعوکرنے سے کتراتے ہیں۔ لکھنو میں علی گڈھ مسلم یونیورسٹی کے فارغ التحصیل طلبہ سے خطاب کرتے ہوئے مذکورہ لیڈر نے دل کے پھپھولے کھول دیئے۔ ان کا کہنا تھا 1973ء میں کانگریس میں شمولیت کے بعد سے لیکر آج تک انہوں نے ہر انتخابی مہم میں شرکت کی ہے اورہندو لیڈر،
منگل 23 اکتوبر 2018ء

کشمیر : بھارتی فوج کے افسران کے تاثرات

منگل 16 اکتوبر 2018ء
افتخار گیلانی
کشمیر کی ابتر ہوتی صورت حال کے بارے میں بھارتی حکومت کے سیکورٹی حلقوں میں بھی اب یہ تاثر ہے کہ فوجی کارروائیوں سے عسکریت پسندوں کو ہلاک کرنے میں کامیابی تو ملتی ہے، مگر اس سے عسکریت پسندی ختم نہیں کی جاسکتی ہے۔ پچھلے ہفتے نئی دہلی میں فوج کی ایک اہم فوجی تھنک ٹینک نے جب صورت حال کے بارے میں چیتھم ہائوس رول کے تحت ایک مذاکرے کا اہتمام کیا، تو کشمیر میں ڈیوٹیاں دے چکے فوجی کمانڈروں کا خیا ل تھا کہ صورت حال کو نارمل کرنے کی کنجی صرف بھارت کی سیاسی قیادت کے پاس
مزید پڑھیے


بھارت:ارتداد کی لہریا مسلمانوں کی کسمپرسی…(2)

جمعرات 11 اکتوبر 2018ء
افتخار گیلانی
مذہب تبدیل کرنے والوں کا یہ الزام ہے کہ ان کی داد رسی نہیں کی گئی، ان کی بھوک اور افلاس میںمدد نہیںکی گئی ۔ گو یہ تبدیل مذ ہب کا معقول عذر نہ ہو لیکن مسلم تنظیموں کو ملزم کے کٹہرے میں ضرور کھڑا کر دیتا ہے- زکوٰۃ کا نظام جو بے سر و سامان مسلمانوں کیلئے بنایا گیا تھا وہ زیادہ تر پیشہ ور اور مشاہرین کی نظر ہوجاتی ہے۔ دہرادون سے مفتی رئیس احمد قاسمی کے مطابق ان کے محلے کے ایک کھاتے پیتے مسلم گھرانے کی لڑکی ایک ہندو بھنگی کے ساتھ بھاگ گئی۔ مفتی صاحب
مزید پڑھیے


بھارت:ارتداد کی لہریا مسلمانوں کی کسمپرسی

منگل 09 اکتوبر 2018ء
افتخار گیلانی
بھارت جیسے ایک سیکولر ملک میں مذہب یا اسکا انتخاب کسی شخص کی ذاتی پسندہے اور آئین کے بنیادی اصولوں کے مطابق حکومت کا اس میں کوئی عمل و دخل نہیں ہے۔ اسی طرح مذہب کی تبدیلی کی بھی پوری آزادی ہے بشرطیکہ اس میں جبر و لالچ شامل نہ ہو۔ اسکے باوجود تبدیلی مذہب کو سخت بنانے اور اسکو کئی پیچیدہ شرائط کے ساتھ تابع کرنے کی غرض سے ملک کی آٹھ صوبائی حکومتوں اڑیسہ، مدھیہ پردیش، اروناچل پردیش، چھتیس گڈھ، گجرات، ہماچل پردیش، اتراکھنڈ ااور جھارکھنڈ نے ابھی تک اسمبلیوں سے باضابطہ قوانین منظور کروائے ہیں، ان کا
مزید پڑھیے


کشمیر ی صحافیوں کی حالت زار: آخر یہ جانبداری کب تک؟

منگل 02 اکتوبر 2018ء
افتخار گیلانی
پچھلے ہفتے جب نوجوان کشمیری صحافی آصف سلطان کی پابہ جولاں تصویریں سوشل میڈیا پر گشت کر رہی تھیں، تو امید بندھی تھی کہ آزادی اظہار رائے کے علمبردار اس کا نوٹس لیکر کشمیر کی صحافتی برادری کے ساتھ بطور ہمدردی ہی اظہار یکجہتی کریں گے۔ پولیس کی معیت میں ہاتھوں میں ہتھکڑی پہنے آصف سلطان سوال کر رہا تھا کہ کیا صحافت ایک جرم ہے؟1990ء سے لیکر اب تک کشمیر میں 19صحافی جانوں کا نذرانہ دے چکے ہیں۔ حالیہ جون میں رائزنگ کشمیر گروپ کے چیف ایڈیٹر اور مقتدر صحافی شجاعت بخاری کو موت کی نیند سلایا گیا۔ اس
مزید پڑھیے




مذاکرات کی امید جو دم توڑ گئی

منگل 25  ستمبر 2018ء
افتخار گیلانی
جنوبی ایشیاء کو استحکام کی طرف گامزن کرنے کی ایک موہوم سی امید،پیدا ہونے کے چند ساعتوں کے بعد ہی دم توڑ گئی۔ جس طرح پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کے خط کے جواب میں بھارتی نریندر مودی حکومت نے نیو یارک میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے موقعہ پروزراء خارجہ کی ملاقات پر آمادگی ظاہر کرکے سبھی کو حیرت زدہ کردیا، پھر 24گھنٹے بعد اسکو منسوخ کرکے سفارت کاروں و تجزیہ کاروں کو مزید حیران و پریشان کرکے رکھ دیا۔ ستم ظریفی تو یہ تھی کہ 21ستمبر کو جب وزارت خارجہ کے ترجمان رویش کمار
مزید پڑھیے


بھارت:پڑوسی ممالک کیلئے عطیہ یا عفریت

منگل 18  ستمبر 2018ء
افتخار گیلانی
نومبر 2014 ء کو کھٹمنڈو میں سارک سربراہ کانفرنس اور بعد میں بنگلہ دیش کے دورہ کے موقع پر بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا تھا کہ ان کے انتخابی نعرے’’سب کا ساتھ ، سب کا وکاس(ترقی)‘‘ کا اطلاق پڑوسی ممالک پر بھی ہوتا ہے۔ یعنی بھارت کی ترقی و خوشحالی میں وہ پورے جنوبی ایشیا ء کو شامل کروانا چاہتے ہیں۔ مگر پچھلے ساڑھے چار سالوں کی بھارت کی خارجہ اور سکیورٹی پالیسی نیز حقائق و واقعات کا تجزیہ کرنے سے پتہ چلتا ہے کہ ایک حساس پڑوسی کے برعکس بھارت نے اس خطے میں اپنے آپ کو
مزید پڑھیے


امریکی وزیر خارجہ کا دورہ اور بھارت پاک تعلقات

منگل 11  ستمبر 2018ء
افتخار گیلانی
پچھلے ہفتے پاکستان کی نئی حکومت نے خطہ کے دورے پر آئے امریکی وزیر خارجہ مائیکل رچرڈ پومپیوکے ذریعے بھارت کو خیر سگالی کا پیغام پہنچانے کی کوشش کی۔ وزیر اعظم عمران خان اور وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے امریکی حکام کو باور کرانے کی سعی کی کہ انکی حکومت پڑوسی ممالک کے ساتھ امن اور اس خطے میں استحکام کی خواہاں ہے اور ان سے درخواست کی کہ چونکہ امریکی وفد اسلام آباد کے بعد براہ راست دہلی وارد ہورہا ہے، اسلئے بھارت کی نریندر مودی حکومت کو مذاکرات کی میز پر آنے پر آمادہ کریں۔بھارت میں
مزید پڑھیے


آزاد ی ٔاظہارِ رائے بنام اسلام و مسلمان…(2)

بدھ 05  ستمبر 2018ء
افتخار گیلانی
جب ان کی اس روش کے خلاف کوئی آواز اٹھاتا ہے تو ہمدردی بٹورنے کیلئے اظہار آزادی رائے کو آڑ بناکر مسلمانوں کے رویہ کو نشانہ بناتے ہیں۔ وہ ناموس رسالت ؐکے حق میں مسلمانوں کے ردعمل کو جمہوریت کے لئے خطرناک بتاتے ہیں۔ مگر یہی نام نہا ددانشور‘ ادیب ‘ مصنفین اور ٹی وی اینکر اپنے ملک کے اندر ہی اظہار رائے کی آزادی کا گلاگھونٹے جانے کے متعدد واقعات پر چپ سادھ لیتے ہیں ‘ گویا انہیں سانپ سونگھ جاتا ہے۔ابھی جس طرح پورے ملک میں انسانی حقوق کے کارکنوں کے گھروں پر چھاپے مار کر
مزید پڑھیے


آزاد ی ٔاظہارِ رائے بنام اسلام و مسلمان

منگل 04  ستمبر 2018ء
افتخار گیلانی
مقدس شہر یروشلم کے مغربی حصہ میں ہولوکاسٹ میوزم کا دورہ کرنے کے بعد انتہائی شقی القلب شخص ہی اپنے آنسو روک پاتا ہے یا یہودیوں پر جرمن نازیوں کے ذریعے برپا ظلم و ستم کو صحیح ٹھہرا پائیگا۔ چند برس قبل جب میں نے اس میوزیم کا دورہ کیا، تو استقبالیہ کاونٹر کے پاس کانوں میں لگانے والی کمنٹری مشینیں فراہم کروانے کے بعد ہماری بھارتی نژاد اسرائیلی گائیڈنے اندر رہنمائی کرنے سے معذوری ظاہر کی اور مشورہ دیا کہ اس میوزم کو انفرادی طور پر ، آزاد ذہن کے ساتھ بغیر نگرانی یا رہنمائی کے دیکھنا مناسب ہے۔
مزید پڑھیے